یوم عاشوراء کا روزہ

 از    April 27, 2015

یومِ عاشوراء یعنی دسویں محرم الحرام کا روزہ مشروع ہے ، سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما کہتے ہیں:

“جب رسول اللہ ﷺ نے یومِ عاشوراء کا روزہ رکھا اور اس کے بارے میں حکم بھی دیا تو صحابہ نے عرض کی ، اے اللہ کے رسول ! اس دن کو تو یہود و نصاریٰ تعظیم کرتے ہیں تو رسول اللہ ﷺ نے فرمایا، اللہ تعالیٰ نے چاہا تو ہم اگلے سال نویں محرم کا بھی روزہ رکھیں گے۔”

ابنِ عباس رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ اگلا سال آنے سے پہلے ہی رسول اللہ ﷺ فوت ہوگئے ۔ (صحیح مسلم : ۱۱۳۴)

اس حدیثِ مبارکہ سے نویں اور دسویں محرم الحرام کے روزے کی مشروعیت ثابت ہوتی ہے ، یہ بھی معلوم ہوا کہ یومِ عاشوراء دسویں محرم ہے ۔

حکم بن اعرج رحمہ اللہ بیان کرتے ہیں کہ عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما چاہِ زمزم کے پاس اپنی چادر کو تکیہ بنا کر ٹیک لگائے بیٹھے تھے، اسی اثنا میں میں بھی پہنچ گیا ، میں نے عرض کی کہ مجھے یومِ عاشواء کے بارے بتائیے ، فرمانے لگے :

“جب آپ محرم کا چاند دیکھ لیں تو گنتی شروع کردیں اور نویں محرم کو صبح روزہ رکھ لیں ، میں نے پوچھا کہ رسول اللہ ﷺ کا یہی عمل مبارک تھا ؟ فرمایا ، ہاں ۔” (صحیح مسلم : ۱۱۳۳)

حافظ بیہقی اس روایت کا مطلب واضح کرتے ہوئے لکھتے ہیں:

“گویا کہ سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما کی مراد یہ ہے کہ یومِ عاشوراء کے ساتھ نویں محرم کا روزہ بھی مشروع ہے ، آپ نے سائل کے جواب میں ہاں اس لیے کہہ دیا کہ وہ خود رسولِ کریم ﷺ سے نویں محرم کے روزے کا ارادہ بیان کرتے ہیں۔” (السنن الکبریٰ للبیہقی : ۲۸۷/۴)

اس کی وضاحت سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما کے اس قول سے ہوتی ہے ، فرماتے ہیں:

صوموا التاسع و العاشر و خالفوا الیھود.

“نویں اور دسویں محرم کا روزہ رکھ کر یہودیوں کی مخالفت کرو (وہ صرف یومِ عاشوراء کا روزہ رکھتے تھے )۔” (السنن الکبریٰ للبیہقی : ۲۸۷/۴ ، وسندہ صحیح)

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.