کیا غیر مسلموں کو کافر کہنا گالی ہے؟

 از    February 17, 2015

تحریر:ڈاکٹر ذاکر نائیک

“کافر” اُسے کہتے ہیں جو جھٹلاتا یا انکار کرتا ہے ۔ “کافر” کا لفظ “کفر” سے نکلا ہے جسکے معنی ہیں : جھٹلانا یا چھپانا۔ اسلامی اصطلاح میں “کافر” کا مطلب ہے جو اسلام کی تعلیمات اور اس کی سچائی کو جھٹلاتا یا چھپاتا ہے ۔ اور جو شخص اسلام کا انکار کرتا ہے اس کو غیر مسلم (Non-Muslim) کہتے ہیں۔ اگر کوئی غیر مسلم خود کو “غیر مسلم” یا “کافر” کہے جانے کو گالی سمجھتا ہے ، جس کا مطلب ایک ہی ہے ، تو یہ اس کی اسلام کے بارے میں غلط فہمی کی وجہ سے ہے ۔ اسے اسلام اور اسلامی اصطلاحات کو سمجھنے کے لئے صحیح ذرائع تک رسائی حاصل کرنے کی کوشش کرنی چاہیے اور “کافر” کہے جانے کو گالی نہیں سمجھنا چاہیئے۔ “غیر مسلم” یا “کافر” کے الفاظ گالی نہیں ہیں بلکہ مسلمانوں اور دیگر مذاہب کے پیروکاروں کے مابین محض خطِ امتیاز کھینچنے والی اصطلاحات ہیں۔ اس میں تحقیر کا کوئی پہلو نہیں ہے ۔ فرق و امتیاز قائم کرنے والی ایک معروف اصطلاح کو گالی قرار دینا قلتِ علم کے علاوہ سوءِ فہم کی دلیل ہے ۔                     (اسلام پر 40 اعتراضات کے عقلی و نقلی جواب ص ۱۳۲،۱۳۳)

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

ٹویٹر پر فالو کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.