میت کو غسل دینے والے پر غسل

 از    April 19, 2017

تحریر: ابن الحسن محمدی

شرعی دلائل کی رو سے میت کو غسل دینے والے شخص پر غسل واجب نہیں بلکہ مندوب و مستحب ہے۔ اسی طرح میت کی چارپائی اٹھانے والے شخص پر بھی وضو واجب نہیں بلکہ مستحب ہے۔ فہم سلف اسی بات کا مؤید ہے۔ جیسا کہ حافظ خطابی رحمہ اللہ (388 ھ) فرماتے ہیں :
لا اعلم أحدا من الفقهاء يوجب الاغتسال من غسل الميت، ولا الوضوء من حمله، ويشبه أن يكون الأمر فى ذلك على الاستحباب.
’’ میں فقہائے کرام میں سے کسی ایک بھی ایسے فقیہ سے واقف نہیں جو میت کو غسل دینے والے شخص پر غسل کو اور اسے کندھا دینے والے شخص پر وضو کو واجب قرار دیتا ہو۔ معلوم یہی ہوتا ہے کہ اس بارے میں (احادیث میں وارد) حکم استحباب پر محمول ہے۔“ [معالم السنن : 305/3]

یعنی اس مسئلہ میں جتنی بھی احادیث وارد ہیں، ان کے بارے میں سلف، یعنی صحابہ و تابعین اور ائمہ دین کا فیصلہ ہے کہ وہ ساری کی ساری استحباب پرمحمول ہیں۔

آئیے یہ احادیث اور ان کے بارے میں فہم سلف ملاحظہ فرمائیں :
❶ سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
من غسل ميتا فليغتسل، ومن حمله فليتوضأ
’’ جو شخص میت کو غسل دے، وہ خود بھی غسل کرے اور جو میت کو کندھا دے، وہ وضو کرے۔“ [سنن الترمذي : 933، وقال : حسن، سنن ابن ماجه : 1463، السنن الكبري للبيهقي : 301/10، و صححه ابن حبان : 1161، و سندهٔ حسن]

* اس کے راوی سہیل بن ابی صالح کے متعلق حافظ منذری رحمہ اللہ (656 ھ) لکھتے ہیں :
وثقه الجمهور ’’ اسے جمہور محدثین نے ثقہ قرار دیا ہے۔“ [الترغيب والترهيب : 110/3]

* حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے بھی اسے ثقه قرار دیا ہے۔

* نیز فرماتے ہیں :
وثقه ناس ’’ اسے بہت سے لوگوں نے ثقہ قرار دیا ہے۔“ [الكاشف فى معرفة من له رواية فى الكتب الستة : 327/2]

❷ سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ ہی سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
من غسل ميتا فليغتسل، ومن حمله فليتوضأ
’’ جو شخص میت کو غسل دے، وہ خود بھی غسل کرے اور جو میت کو کندھا دے، وہ وضو کرے۔“ [مصنف ابن أبى شيبة : 269/3، مسند الإمام أحمد : 433/2، 454، مسند الطيالسي : 305/2، الجعديات لأبي القاسم البغوي : 987,986/2، وسنده حسن]

٭ مسند طیالسی وغیرہ میں یہ الفاظ بھی ہیں :
ومن حمل جنارة فليتوضا. ’’ جو شخص جنازے کو اٹھائے، وہ وضو کرے۔“

* صالح مولی التوأمہ، یعنی صالح بن نبہان مدنی جمہورمحدثین کرام کے نزدیک ’’ ثقہ“ ہے۔ اس پر جرح اس وقت پر محمول ہے جب وہ اختلاط کا شکار ہو گیا تھا۔

* امام علی بن مدینی [سؤالات محمد بن عثمان، ص : 87,86] ، امام یحییٰ بن معین [الكامل فى ضعفاء الرجال لابن عدي : 56/4، و سندهٔ حسن] ، حافظ جوزجانی [الشجرة فى أحوال الرجال، ص : 144] اور امام ابن عدی رحمها اللہ [الكامل : 58/4] کا کہنا ہے کہ ابن ابی ذئب نے صالح مولی التوأمہ سے اختلاط سے پہلے سماع کیا ہے۔

حافظ ابن حجر عسقلانی رحمہ اللہ (773-852) لکھتے ہیں :
وقد اتفقوا على أن الثقة إذا تميز ما حدث به قبل اختلاطه مما بعده، قبل
’’ محدثین کرام کا اس بات پر اتفاق ہے کہ ثقہ (مختلط ) راوی کی اختلاط سے پہلے بیان کی ہوئی روایات اس وقت قابل قبول ہو جاتی ہیں جب وہ بعد والی روایات سے ممتاز ہو جائیں۔“ [نتائج الافكار : 268/2]

* حافظ موصوف مذکورہ حدیث کے بارے میں خلاصہ فرماتے ہیں :
وفي الجملة هو بكثرة طرقه أسوأ حاله أن يكون حسنا.
’’ الحاصل یہ حدیث اپنی بہت سی سندوں کے ساتھ کم از کم حسن ہے۔“ [التلخيص الحبير فى تخريج أحاديث الرافعي الكبير : 137/1، ح : 182]

❸ سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کا فرمان ہے :
من غسل ميتا فليغتسل، ومن حمله فليتوضا
’’ جو شخص میت کو غسل دے، وہ خود بھی غسل کرے اور جو میت کو کندھا دے، وہ وضو کرے۔“ [مصنف ابن أبى شيبة : 269/3، السنن الكبري للبيهقي : 302/1، و سندهٔ حسن]

٭سنن کبریٰ بیہقی میں یہ الفاظ زائد ہیں :
و من مشي معها فلا يجلس حتي يقضي دفنها
’’ اور جو جنازے کے ساتھ جائے وہ اس کی تدفین مکمل ہونے تک نہ بیٹھے۔“

❹ سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں :
كنا نغسل الميت، فمنا من يغتسل، ومنا من لا يغتسل .
’’ ہم (صحابہ ) میت کو غسل دیا کرتے تھے، بعض غسل کر لیتے تھے اور بعض نہیں کرتے تھے۔“ [السنن الكبري للبيهقي : 306/1، و سندهٔ صحيح]

* حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے اس اثر کی سند کو ’’ صحیح“ کہا ہے۔ [التلخيصل الحبير : 137/1]

❺ سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما ہی فرماتے ہیں :
من غسل ميتا فأصابه منه شيء فليغتسل، والا فليتوضا
’’ اگر کسی شخص کو مردہ نہلاتے ہوئے اس سے کوئی گندگی لگ جائے تو وہ غسل کر لے، ورنہ وضو ہی کر لے۔“ [السنن الكبري للبيهقي : 306/1 و سندهٔ حسن]

❻ سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں :
من غسل ميتا فليغتسل
’’ جو شخص میت کو غسل دے، وہ خود بھی غسل کر لے۔“ [ايضا : 305/1، وسندہ صحيح]

٭ آپ رضی اللہ عنہما کا دوسرا قول بھی ملاحظہ فرمائیں، فرماتے ہیں :
ليس عليكم فى غسل ميتكم غسل إذا غسلتموه، إن ميتكم لمؤمن طاهر، وليس بنجس، فحسبكم أن تغسلوا أيديكم
’’ جب تم اپنے مردوں کو غسل دیتے ہو تو اس سے تمہارے لیے غسل فرض نہیں ہوتا کیونکہ تمہارا مردہ مؤمن اور طاہر ہوتا ہے، نجس نہیں۔ لہٰذا تمہارے لیے اپنے ہاتھ دھو لینا ہی کافی ہے۔“ [ايضا، 306/1، وسندۂ حسن]

٭ نیز فرماتے ہیں :
لا تنجسوا ميتكم، يعني ليسى عليه غسل
’’ اپنے مردوں کو پلید نہ سمجھو، یعنی مردے کو نہلانے والے پر غسل (فرض ) نہیں۔“ [مصنف ابن أبى شيبة : 267/3، وسنده صحيح]

٭ نیز جب آپ سے پوچھا گیا کہ :
هل علي من غسل ميتا غسل ؟ کیا مردے کو غسل دینے والے پر غسل فرض ہے ؟
اس پر آپ نے فرمایا :
أنجستم صاحبكم ؟ يكفي فيه الوضوء
’’ کیا تم اپنے مردے کو پلید سمجھتے ہو ؟ مردے کو نہلانے والے کے لیے وضو کر لینا ہی کافی ہے۔“ [السنن الكبري للبيهقي : 305/1 و سندهٔ صحيح]

❼ نافع مولیٰ ابن عمر رحمہ اللہ بیان فرماتے ہیں :
كنا نغسل الميت، فيتوضا بعضنا ويغتسل بعض، ثم يعود، فنكفنه، ثم نحنطه، ونصلي عليه، ولا نعيد الوضوء.
’’ ہم میت کو غسل دیتے، پھر ہم میں سے کچھ لوگ وضو کرتے تھے اور کچھ غسل کر لیتے تھے۔ پھر وہ لوٹتے تو ہم میت کو کفن دیتے، اسے خوشبو لگاتے اور اس کا جنازہ پڑھتے، ہم دوبارہ وضو نہیں کرتے تھے۔“ [السنن الكبرى للبيهقي : 307,306/1، وسنده صحيح]

❽ سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے جب مؤمن مردوں کو غسل دینے والے شخص پر غسل (فرض ) ہونے کے بارے میں سوال کیا گیا تو انہوں نے فرمایا : ایسا نہیں ہے۔ [مصنف ابن أبى شيبة : 268/3، وسنده صحيح]

❾ عائشہ بنت سعد بیان کرتی ہیں :
اوذن سعد بجنازة سعيد بن زيد وهو بالبقيع، فجاء وغسله، وكفنه، وحنطه، ثم أتى داره، فصلى عليه، ثم دعا بماء، فاغتسل، ثم قال : إني لم أغتسل من غسله، ولو كان نجسا ما غسلته، ولكني اغتسلت من الحر
’’ سیدنا سعد رضی اللہ عنہ کو سیدنا سعید بن زید رضی اللہ عنہ کے جنازے کی اطلاع ملی تو وہ اس وقت بقیع میں تھے۔ آپ تشریف لائے، سعید رضی اللہ عنہ کو غسل دیا، ان کو کفن دیا، خوشبو لگائی، پھر گھر گئے، ان کا جنازہ ادا کیا، پھر پانی منگوا کر غسل کیا اور فرمایا : میں نے سعید رضی اللہ عنہ کو غسل دینے کی وجہ سے غسل نہیں کیا۔ اگر وہ نجس ہوتے تو میں انہیں غسل ہی نہ دیتا۔ میں نے تو گرمی کی وجہ سے غسل کیا ہے۔“ [ايضا، وسندۂ صحيح]

❿ خزاعی بن زیاد کہتے ہیں :
اؤصي عبد الله بن مغفل أن لا يحضره ابن زياد، وان يليني أصحابي، فارسلوا إلى عائذ بن عمرو وابي برزة، وأناس من أصحابه، فما زادوا على أن كفوا أكمامهم، وجعلوا ما فضل عن قمصهم فى حجزهم، فلما فرغوا لم يزيدوا على الوضوء
’’ سیدنا عبداللہ بن مغفل رضی اللہ عنہ نے یہ وصیت کی تھی کہ ابن زیاد ان کے پاس نہ آئے، نیز ان کے ساتھ ان کے قریب آئیں۔ سیدنا عائذ بن عمرو، سیدنا برزہ اور سیدنا ابن مغفل رضی اللہ عنہ کے دیگر ساتھیوں کی طرف پیغام بھیجا گیا۔ انہوں نے آ کرصرف یہ کیا کہ اپنی کفیں اوپر چڑھائیں اور ان کے قمیصوں کا جو کپڑا لٹک رہا تھا، اسے اپنے کمربندوں میں ڈال لیا، پھر (غسل دینے سے ) فراغت کے بعد صرف وضو کر لیا۔“ [ايضا، وسندۂ صحيح]

⓫ ابوقلابہ تابعی رحمہ اللہ کے بارے میں ہے :
انه كان إذا غسل ميتا، اغتسل
’’ جب وہ میت کو غسل دیتے تو خود بھی غسل کرتے۔“ [ايضا : 269/3، وسندۂ صحيح]

⓬ ابراہیم نخعی رحمہ اللہ کہتے ہیں :
كانوا يقولون : إن كان صاحبكم نجسا، فاغتسالوا منهٔ .
’’ لوگ (صحابہ کرام ) کہا کرتے تھے کہ اگر تمہارا مردہ نجس ہے تو پھر اسے غسل دینے کی وجہ سے غسل کر لو۔“ [ايضا، وسندۂ صحيح]

⓭ یونس بن عبید کہتے ہیں :
كان الحسن لايري على الذى يغسل الميت غسلا
’’ امام حسن بصری تابعی رحمہ اللہ میت کو غسل دینے والے پر غسل کو (فرض ) خیال نہیں کرتے تھے۔“ [المطالب العالية لابن حجر : 481، وسندۂ صحيح]

⓮ امام سعید بن مسیب رحمہ اللہ کی رائے یہ تھی :
إن من السنة أن يغتسل من غسل ميتا ويتوضا من نزل فى حفرته حين يدفن، ولا وضوء على أحد من غير ذلك ممن صلى عليه، ولا ممن حمل جنازتهٔ، ولا ممن مشي معها.
’’ میت کو غسل دینے والے کے لیے غسل کرنا اور دفن کے وقت قبر میں اترنے والے کے لیے وضو کرنا مسنون ہے۔ ان کے علاوہ جنازہ پڑھنے والے، کندھا دینے والے اور جنازے کے ساتھ چلنے والے، کسی پر وضو نہیں۔“ [السنن الكبري للبيهقي :303/1، وسندهٔ صحيح]

⓯ امام ابوعیسیٰ محمد بن عیسیٰ ترمذی رحمہ اللہ (209-279ھ) فرماتے ہیں :
وقد اختلف أهل العلم فى الذى يغسل الميت، فقال بعض أهل العلم من أصحاب النبى صلى الله عليه وسلم وغيرهم : إذا غسل ميتا فعليه الغسل، وقال بعضهم : عليه الوضوء، وقال مالك بن أنس : أستجب الغسل من غسل الميت، ولا أرى ذلك واجبا، وهكذا قال الشافعي، وقال أحمد : من غسل ميتا أرجو أن لا يجب عليه الغسل، وأما الوضوء فأقل ما قيل فيه، وقال إسحاق: لا بد من الوضوء، وقد روي عن عبد الله بن المبارك أنه قال: لا يغتسل ولا يتوضا من غسل الميت .
’’ مردے کو نہلانے والے (پر غسل ) کے بارے میں اہل علم کا اختلاف ہے۔ صحابہ کرام وغیرہ پر مشتمل بعض اہل علم کا کہنا ہے کہ جب کوئی میت کو غسل دے تو اس پر بھی غسل ہے۔ بعض کا کہنا ہے کہ اس پر وضو ہے۔ امام مالک بن انس فرماتے ہیں کہ میں مردے کو نہلانے والے کے لیے غسل کو مستحب سمجھتا ہوں، واجب نہیں۔ امام شافعی بھی یہی فرماتے ہیں۔ امام احمد بن حنبل کا قول ہے کہ میرے خیال میں میت کو غسل دینے والے پر غسل فرض نہیں، البتہ اسے کم از کم وضو کا کہا گیا ہے۔ امام اسحاق بن راہویہ فرماتے ہیں : اس کے لیے وضو ضروری ہے، جبکہ امام عبداللہ بن مبارک سے مروی ہے کہ اسے نہ غسل کرنے کی ضرورت ہے نہ وضو کرنے کی۔“ [سنن الترمذي، تحت الحديث : 993]

اس حدیث کے بارے میں اصولی تنبیہات

① بعض محدثین کرام نے اس حدیث کی سند پر اعتراض کیا ہے، جیسا کہ :
٭ امام محمد بن یحییٰ ذہلی رحمہ اللہ (م : 258 ھ) فرماتے ہیں :
لا أعلم فيمن غسل ميتا فليغتسل، حديثا ثابتا، ولو ثبت لزمنا استعماله
’’ میرے علم میں مردے کو غسل دینے والے پر غسل کے بارے میں کوئی حدیث ثابت نہیں۔ اگر یہ حدیث ثابت ہو جائے تو ہمارے لیے اس پر عمل لازم ہو جائے گا۔“ [السنن الكبري للبيهقي:302/1، وسندۂ صحيح]

٭ امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ليس يثبت فيه حديث . ’’ اس بارے میں کوئی حدیث ثابت نہیں۔“ [مسائل الإمام أحمد برواية أبى داؤد، ص :309]

٭ امام بخاری رحمہ اللہ نے امام احمد بن حنبل اور امام علی بن مدینی رحمها اللہ سے نقل کیا ہے کہ :
لا يصح من هذا الباب شيء . اس بارے میں کچھ بھی ثابت نہیں۔“ [العلل الكبير للترمذي: 402/1]

٭ امام ابن منذر رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وليس فيه خبر ثابت . ’’ اس بارے میں کوئی ثابت حدیث موجود نہیں۔“ [الاوسط:351/5]

٭ امام بیہقی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
الروايات المرفوعة فى هذا الباب عن أبى هريرة غير قوية، لجهالة بعض رواتها وضعف بعضهم.
’’ اس بارے میں سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی مرفوع روایات قوی نہیں، کیونکہ ان کے بعض راوی مجہول ہیں اور بعض ضعیف۔“ [السنن الكبري:303/1]

② امام ابوداؤد رحمہ اللہ نے اس حدیث کو منسوخ قرار دیا ہے لیکن اس کا کوئی ناسخ ذکر نہیں کیا۔

* صحیح بات یہ ہے کہ اس مسئلے میں دو مرفوع احادیث ثابت ہیں، ان کی سند ’’ صحیح“ ہے۔ بہت سے آثار صحابہ بھی موجود ہیں۔ ان تمام کو مدنظر رکھتے ہوئے یہ بات سامنے آتی ہے کہ میت کو غسل دینے والے پر غسل فرض نہیں بلکہ مستحب ہے۔ اسی طرح میت کی چارپائی کو کندھا دینے والے شخص کے لیے وضو واجب نہیں بلکہ مستحب ہے۔ جن آثارمیں غسل اور وضو کی نفی کی گئی ہے، ان سے مراد فرضیت اور وجوب کی نفی ہے، جیسا کہ سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہما کے آثار سے بخوبی معلوم ہو جاتا ہے۔

٭ آخرمیں حافظ ابن ملقں رحمہ اللہ کا یہ قول ملاحظہ فرما لیں :
بل يعمل بهما، فيستحب الغسل
’’ بلکہ ان دونوں احادیث پر عمل ہو گا اور غسل کرنا مستحب ٹھہرے گا۔“ [مختصر استدراك الذهبي : 309/1، ح : 93]
معلوم ہوا کہ میت کو غسل دینے والے کے لیے غسل کرنا اور میت کو کندھا دینے والے کے لیے وضو کرنا واجب نہیں بلکہ مستحب ہے۔

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.