فضائل ازکار

 از    December 15, 2014

تحریر:حافظ ندیم ظہیر
ام المومنین جویریہؓ بیان کرتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ صبح کی نماز کے وقت یا اس کے بعد ان (جویریہؓ) کے پاس سے گزرے اور وہ اپنی جائے نماز پر بیٹھی ہوئی تھیں، پھر آپﷺ چاشت کے بعد آئے اور وہ (اسی جگہ) بیٹھی ہوئی تھیں تو آپﷺ نے فرمایا: کیا  تم ابھی تک اسی طرح (بیٹھی ہوئی) ہو جس طرح میں تمہیں چھوڑ کر گیا تھا؟ انہوں (جویریہؓ) نے کہا:  جی ہاں!نبی کریم ﷺ نے فرمایا : البتہ تمہارے بعد میں نے چار کلمات تین بار کہے ہیں ، اگر اِن (کلمات ) کا موازنہ ان سے کیا جائے جو تم نے اب تک کہا ہے تو (یہ) بھاری ہوں گے:((سُبْحَانَ اللہِ وَبِحَمْدِہٖ عَدَدَ خَلْقِہٖ وَ رِضٰی نَفْسِہٖ وَ زِنَۃَ عَرْشِہٖ وَ مِدَادَ کَلِمَاتِہٖ))ایک روایت میں ہے ((سُبْحَانَ اللہِ وَبِحَمْدِہٖ عَدَدَ خَلْقِہٖ وَ رِضٰی نَفْسِہٖ وَ زِنَۃَ عَرْشِہٖ،سُبْحَانَ مِدَادَ کَلِمَاتِہٖ) 
(صحیح مسلم : ۲۷۲۶)
فوائد:
          بہت سے ایسے اعمال ہیں کہ جن میں محنت و مشقت کم ہوتی ہے لیکن ان کا اجر و ثواب زیادہ ہوتا ہے ۔ اللہ تعالیٰ کا یہ اپنے بندوں پر خصوصی انعام ہے ۔ مذکورہ کلمات انہی اعمال میں سے ہیں۔
          دوسرے یہ بھی معلوم ہوا کہ ذکرِ الہٰی کے لئے جگہ مخصوص کرنا ضروری نہیں ہے بلکہ چل پھر کر بھی یہ عمل سر انجام دیا جاسکتا ہے ۔
      سیدنا ابوامامہ الباہلیؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ ان کے پاس سے گزرے اور وہ اپنے دونوں ہونٹوں کو حرکت دے رہے تھے ۔ آپﷺ نے فرمایا: اے ابو امامہ! کیا کہہ رہے ہو؟ انہوں (ابوامامہ) نے کہا: میں اپنے رب کا ذکر کر رہا ہوں ، آپﷺ نے فرمایا: میں تمہیں (ایسے ذکر کے بارے میں) نہ بتاؤں جو دن رات کے ذکر سے افضل ہے ۔ یہ کہ تم کہو : ((سُبْحَانَ اللہِ عَدَدَ مَا خَلَقَ، وَ سُبْحَانَ اللہِ مِلْ ءَ مَا خَلَقَ، وَ سُبْحَانَ اللہِ عَدَدَ مَا فِی الْاَرْضِ وَ السَّمَاءِ، وَسُبْحَانَ اللہِ مِلْ ءَ مَا فِی الْاَرْضِ وَ السَّمَاءِ، وَسُبْحَانَ اللہِ عَدَدَ مَا اَحْصٰی کِتَابَہٗ، وَسُبْحَانَ اللہِ عَدَدَ کُلِّ شَيْءٍ، وَسُبْحَانَ اللہِ مِلْءَ کُلِّ شَيْءٍ)) اور اسی طرح تم کہو ((اَلْحَمْدُ للہِ)) ((لَا اِلٰہَ اِلَّا اللہُ)) اور ((اَللہُ اَکْبَرُ)) 
(النسائی فی عمل الیوم واللیلہ: ۱۶۶)
فوائد:
          یہ روایت محمد بن عجلان کی تدلیس کی وجہ سے ضعیف ہے کیونکہ یہ روایت عن سے ہے اور مدلس کی روایت صراحتِ سماع  کے بغیر ضعیف ہوتی ہے ۔
بازار میں تہلیل کی فضیلت

     سیدنا عمر بن خطابؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جو شخص بازار میں داخل ہو اور  یہ دعا پڑھے : ((لَااِلٰہَ اِلَّا اللہُ وَحْدَہٗ لَا شَرِیْکَ لَہٗ، لَہُ الْمُلْکُ وَ لَہُ الْحَمْدُ، یُحْیِيْ وَ یُمِیْتُ وَ ھُوَ حَيُّ لَّا یَمُوْتُ، بِیَدِہِ الْخَیْرُ وَھُوَ عَلیٰ کُلِّ شَيْءٍ قَدِیْرٌ)) تو اللہ تعالیٰ اس کے لئے ایک لاکھ نیکیاں لکھ دیتا ہے ، ایک لاکھ خطائیں معاف کردیتا ہے اور ایک لاکھ درجات بلند کردیتا ہے ۔ (سنن ترمذی: ۳۴۲۹، سنن ابن ماجہ : ۲۲۳۵)

فوائد:
          یہ روایت کئی طریق سے مروی ہے لیکن تمام طرق ضعیف ہیں۔ سنن ترمذی کی روایت میں ازہر بن سنان راوی ضعیف ہے اور سنن ابن ماجہ میں حماد بن عمرو ضعیف ہے ۔ اس کے علاوہ یہ روایت کتاب الدعاء للطبرانی (۷۹۳،۷۹۲) مستدرک حاکم (۵۳۹/۱ ح ۱۹۷۵) وغیرہ میں بھی ضعیف سندوں کے ساتھ موجود ہے ۔الغرض مذکورہ روایت اپنے تمام طرق کے ساتھ ضعیف ہے ۔
کفارۂ مجلس کی دعا
     سیدنا ابوہریرہؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جو شخص کسی مجلس میں بیٹھا اور اس میں بہت لغو باتیں کیں، وہ اپنی اس مجلس سے اٹھنے سے پہلے (یہ دعا) پڑھے: ((سُبْحَانَکَ اللّٰھُمَّ وَ بِحَمْدِکَ، اَشْھَدُاَنْ لَّا اِلٰہَ اِلَّا اَنْتَ، اَسْتَغْفِرُکَ وَ اَتُوْبُ اِلَیْکَ)) تو جو (خطائیں ) اس مجلس میں ہوئی ہیں، وہ معاف کردی جاتی ہیں۔ (سنن ترمذی: ۳۴۳۳، صحیح)
فوائد:   

لغویات و فضولیات سے کلی طور پر اجتناب کرناچاہئے اور ایسی مجالس میں جانے سے احتراز بھی ضروری ہے لیکن کسی مجلس میں نادانستہ غلطی کا ارتکاب یا سبقتِ لسانی کی وجہ سے لغزش وغیرہ ہوجائے تو مذکورہ دعا پڑھنے سے اللہ تعالیٰ اس کی خطاؤں سے درگزر فرمائے گا۔

استغفار کی فضیلت

۱۰۴:     سیدنا شداد بن اوسؓ سے روایت ہے کہ نبی کریم ﷺ نے فرمایا: سید الاستغفار یہ ہے کہ تم کہو: ((اَللّٰھُمَّ اَنْتَ رَبِّيْ لَا اِلٰہَ اِلَّا اَنْتَ، خَلَقْتَنِيْ وَ اَنَا عَبْدُکَ وَ اَنَا عَلیٰ عَھْدِکَ وَ وَ عْدِکَ مَا اسْتَطَعْتُ اَعُوْذُبِکَ مِنْ شَرِّ مَا صَنَعْتُ اَبُوْءُلَکَ بِنِعْمَتِکَ عَلَيَّ، وَ اَبُوْءُ بِذَنْبِيْ فَاغْفِرْلِيْ اِنَّہٗ لَا یَغْفِرُ الذُّنُوْبَ اِلَّا اَنْتَ)) اگر اس کو شام کے بعد پڑھے (اور ) اسی رات کو مرگیا تو جنت میں داخل ہوگا اور اگر بعد از صبح پڑھے (اور) اسی دن مرگیا تو جنت میں داخل ہوگا ۔ (بخاری : ۶۳۰۶، ۶۳۲۳)
فوائد:    مذکورہ کلمات بہت زیادہ اہمیت و فضیلت کے حامل ہیں یہی وجہ ہے کہ ان کو سید الاستغفار کہا جاتا ہے ۔

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

ٹویٹر پر فالو کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.