عورتوں کیلئے قبروں کی زیارت حرام ہونے کے اسباب

 از    October 17, 2017

فتویٰ : سابق مفتی اعظم سعودی عرب شیخ ابن باز رحمہ اللہ

سوال : عورتوں کے لئے قبروں کی زیارت حرام ہونے کا سبب کیا ہے ؟
جواب : (الف) اس کے متعلق حدیث نبوی میں شدید نہی وارد ہوئی ہے۔ سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ :
عن أبى هريرة رضى الله عنه : أن رسول الله صلى الله عليه وسلم لعن زوارات القبور [رواء أحمد والترمذي وابن ماجه]
”رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے قبروں کی زیارت کرنے والی عورتوں پر لعنت کی ہے۔“ جب سیدہ فاطمہ رضی اللہ عنہا بعض لوگوں سے تعزیت کے لیے تشریف لے گئیں تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
لو بلغت معهم الكذاء ما رأيت الجنة [العلل المتناهية لابن الجوزي]
”اگر تو ان کے ساتھ کداء (قریب ترین قبرستان) تک بھی جاتی تو جنت نہ دیکھ پاتی۔ “
(ب) اس کی علت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے اس ارشاد میں جو آپ نے جنازے کے ساتھ جانے والی عورتوں سے فرمایا، بیان کی گئی ہے :
ارجعن مأزورات غیر مأجورات، فإنکن تفتن الحی وتؤذین المیت
”واپس لوٹ جاؤ، تمہیں اجر نہیں ملے گا۔ تم زندوں کے لئے باعث فتنہ اور مردوں کے لئے باعث تکلیف ہو۔ “
اس حدیث میں نہی کی علت دو چیزوں کو قرار دیا گیا ہے۔ ایک یہ کہ وہ زندوں کیلے باعث فتنہ ہیں کیونکہ عورت سراپا پردہ ہے۔ لہٰذا اس کا اجنبی لوگوں کے سامنے آنا فتنہ اور ارتکاب جرائم کا باعث ہے۔ دوسرے یہ کہ عورتیں میت کے لئے ایذاء رسانی کا باعث ہیں۔ وہ یوں کہ عورتیں بےصبر اور کمزور دل ہونے کی وجہ سے مصائب کی متحمل نہیں ہو سکتیں۔ لہٰذا عین ممکن ہے کہ وہ قبروں کی زیارت کے وقت چیخنے، چلانے یا بین کرنے کا مظاہرہ کریں جو کہ شرعا حرام ہے۔

 

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.