رکوع و سجود کی دعائیں

 از    April 24, 2015

تحریر: ابن حسن المحمدی

 سیدنا عقبہ بن عامر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے  ، بیان کرتے ہیں:

                لما نزلت﴿ فَسَبِّحْ بِاسْمِ رَبِّکَ الْعَظِیْمِ﴾ (الواقعۃ:۷۴) قال رسول اللہ ﷺ: اجعلوھا فی رکوعکم ، فلما نزلت ﴿سَبِّحِ اسْمَ رَبِّکَ الْاَعْلیٰ﴾ (الاعلیٰ:۱) قال: اجعلوھا فی سجودکم.

                “جب ﴿ فَسَبِّحْ بِاسْمِ رَبِّکَ الْعَظِیْمِ﴾ (الواقعۃ:۷۴) نازل ہوئی تو رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ، اسے رکوع میں پڑھو، جب ﴿سَبِّحِ اسْمَ رَبِّکَ الْاَعْلیٰ﴾ (الاعلیٰ:۱) نازل ہوئی تو فرمایا ، یہ سجد ہ میں پڑھو۔”

                                                (سنن ابی داود : ۸۶۹، سنن ابن ماجہ : ۸۸۷  ، المستدرک للحاکم : ۲۲۵/۱، وسندہٗ صحیح)

                اس حدیث کو امام ابن خزیمہ (۶۰۱) ، او رامام ابن حبان (۱۸۹۸ ) نے “صحیح ” اور امام حاکم نے “صحیح الاسناد” کہا ہے ، موسیٰ بن ایوب الغافقی  کو امام ابن معین کے علاوہ جمہور نے “ثقہ ” قرار دیا ہے ۔

                اس حدیث کے دوسرے راوی ایاس بن عامر کو امام عجلی ، امام یعقوب بن سفیان ، امام ابن خزیمہ ، امام ابن حبان اور امام حاکم رحمہم اللہ  نے “ثقہ” کہاہے ، لہٰذا حافظ ذہبی کی تعلیل مردود ہے ، حافظ نووی (خلاصۃ الاحکام للنوی : : ۳۹۶/۱ ) نے اس کی سند کو “حسن ” کہا  ہے ۔

                ثابت ہوا کہ رکوع و سجود میں دعا پڑھنے کا رسول اللہ ﷺ نے حکم دیا ہے ، لہٰذا انتہائی عاجزی و انکساری، خشوع و خضوع اور حضورِ قلب و یقین کے ساتھ رکوع میں رسول اللہ ﷺ سے ثابت و ماثور دعائیں پڑھیں ، اس حدیث کی وضاحت درج ذیل احادیث سے ہوتی ہیں:

۱:             سیدنا حذیفہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے ایک رات نبی کریم ﷺ کے ساتھ نماز (تہجد) ادا کی ، (حدیث ذکر کرتے ہوئے کہتے ہیں) :

ثم رکع، فجعل یقول:سُبْحَانَ رَبِّیَ الْعَظِیْمِ فکان رکوعہ نحواً من قیامہ.

“پھر نبی کریم ﷺ نے رکوع فرمایا تو (رکوع میں) سُبْحَانَ رَبِّیَ الْعَظِیْمِ(پاک ہے میرا رب عظمت والا) شروع کیا ، آپ کا رکوع آپ کے قیام کے برابر تھا ۔” (صحیح مسلم : ۷۷۲)

۲٭        سیدنا ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ نے اپنے قبیلہ کو اکٹھا کرکے نماز پڑھ کر دکھائی اور اس کو نبی ﷺ کی نماز قرار دیا :

                ثم کبر ، فرکع، فقال ؛ سُبْحَانَ اللہِ وَبِحَمْدِہٖ، ثلاث مرارٍ.

                “پھر آپ نے اللہ اکبر کہا ، رکوع کیا ، پھر تین بار کہا سُبْحَانَ اللہِ وَبِحَمْدِہٖ(اللہ پاک ہے ، اس کی تعریف ہے ) ۔ ” (مسندالامام احمد : ۳۴۳/۵ ، وسندہ حسن)

                اس کے راوی شہر بن حوشب جموہر کے نزدیک “ثقہ ” ہیں۔

۳٭        سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ رکوع اور سجدے میں یہ دعا کثرت سے پڑھا کرتے تھے:

                سُبْحَانَکَ اللّٰھُمَّ رَبَّنَا وَ بِحَمْدِہٖ اللّٰھُمَّ اغْفِرْلِیْ.

                “اے اللہ ! تو پاک ہے ، اے ہمارے رب  ! تیری ہی تعریف ہے ، اے اللہ ! مجھے معاف فرما ۔”               (صحیح بخاری: ۷۹۴، صحیح مسلم : ۴۸۴)س

۴٭        سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ رکوع اور سجدے میں یہ دعا پڑھتے :

                سُبُّوْحٌ، قُدُّوْسٌ، رَبُّ الْمَلٰئِکَۃِ وَ الْرُّوْحِ.             “(اللہ) نہایت پاک ، بہت زیادہ بڑائی اور عظمت والا اور عیوب و نقائص سے خوب پاک و منزہ ہے ، جو فرشتوں اور روح (جبریل) کا رب ہے ۔” (صحیح مسلم : ۴۸۷)

۵٭        سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ ایک رات میں نے نبی کریم ﷺ کو گم پایا ، میں نے خیال کیا کہ آپ اپنی کسی زوجہ محترمہ کے پاس گئے ہوں گے، میں نے تلاش کیا، پھر واپس لوٹی کہ اچانک آپ کو پایا کہ رکوع یا سجدہ میں یہ دعا پڑھ رہے تھے:

                سُبْحَانَکَ وَ بِحَمْدِکَ، لَا اِلٰہَ اِلَّا اَنْتَ.

                “تو پاک ہے ، تیری ہی تعریف و ثنا ہے ، تیرے سوا کوئی معبودِ (برحق) نہیں  ہے ۔”             (صحیح مسلم : ۴۸۵)

۶٭         سیدنا علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے رکوع میں یہ دعا پڑھی :

                اَللّٰھُمَّ لَکَ رَکَعْتُ ، وَبِکَ آمَنْتُ، وَلَکَ اَسْلَمْتُ، اَنْتَ رَبِّیْ، خَشَعَ لَکَ سَمْعِیْ وَبَصَرِیْ وَ مُخِّی وَ عَظْمِیْ وَعَصَبِیْ وَمَا اسْتَقَلَّتْ بِہٖ قَدَمِیْ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ.

                “اے اللہ ! میں نے صرف تیرے ہی لیے رکوع کیا ور تجھ پر ہی ایمان لایا، تیرا ہی مطیع ہوں ، تو ہی میرا رب ہے ، میرے کان ، میری آنکھیں ، میرا سر ، میری ہڈّیاں ، میرے پٹھے اور (جسم) جسے میرے پاؤں اٹھائے ہوئے ہیں ، اللہ رب العٰلمین کے لئے خشوع و عاجزی کرنے والے ہیں۔”        (صحیح مسلم : ۷۷۱، مسند الامام احمد : ۱۱۹/۱ ، واللفظ لہٗ)

۷٭        سیدنا عوف بن مالک رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ایک رات میں رسول اللہ ﷺ کے ساتھ (نماز میں) کھڑا ہوا، آپ نے سورۂ بقرہ کی قراءت کی ، آپ ﷺ رحمت والی آیت گزرتے تو رک کر رحمت کا سوال کرتے ، عذاب والی آیت سے گزرتے تو رک کر پناہ طلب کرتے ، نبیٔ کریم ﷺ نے اپنے قیام کی مقدار رکوع کیا اور رکوع و سجدہ میں یہ  دعا پڑھی :

                سُبْحَانَ ذِیْ الْجَبَرُوْتِ وَالْمَلَکُوْتِ وَ الْکِبْرِیَاءِ وَ الْعَظَمَۃِ .

                “قہر و قدرت ، طاقت و عظمت ، عظیم الشان سلطنت و بادشاہت ، کبریائی اور عظمت والے اللہ کی میں تسبیح بیان کرتا ہوں۔(سنن ابی داود: ۸۷۳، سنن نسائی : ۱۰۵۰ ، وسندہٗ صحیح)

                حافظ نووی نے اس کی سند کو “صحیح” کہا ہے ۔    (خلاصۃ الاحکام : ۳۹۶/۱)

۸٭        سیدنا جابر بن عبداللہ الانصاری رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ نبیٔ کریم صلی اللہ علیہ وسلم  جب رکوع کرتے تو یہ دعا پڑھتے تھے :

                اَللّٰھُمَّ لَکَ رَکَعْتُ، وَبِکَ آمَنْتُ، وَلَکَ اَسْلَمْتُ ، وَعَلَیْکَ تَوَکَّلْتُ ، اَنْتَ رَبِّیْ، خَشَعَ لَکَ سَمْعِیْ وَبَصَرِیْ وَ دَمِیْ وَلَحْمِیْ وَعَظْمِیْ وَعَصَبِیْ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ.

                “اے اللہ ! میں نے صرف تیرے لیے رکوع کیا اور تجھ پر ہی ایمان لایا ، صرف تیرے لیے مطیع و فرمانبردار ہوں ، میں صرف تجھ پر توکل و بھروسہ کرتا ہوں، تو میرا رب ہے  ، میرے کان ، میری آنکھیں ، میرا خون، میرا گوشت ، میری ہڈیاں اور میرے پٹھے ڈر کر اللہ رب العٰلمین کے لئے جھک گئے ہیں۔”      (سنن نسائی : ۱۰۵۲، و سندہ صحیح)

فائدہ نمبر ۱:

                رکوع و سجدے میں قرآن پڑھنا ممنوع ہے ، جیساکہ سیدنا ابنِ عباس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسولِ خدا ﷺ نے فرمایا :

                ألا وانّی نھیت أن أقرا القرآن راکعاً او ساجداً.

                “آگاہ رہو کہ رکوع و سجود کی حالت میں قرآن پڑھنے سے مجھے منع کیا گیا ہے ۔”  (صحیح مسلم: ۴۹۷)

                سیدنا علی رضی اللہ عنہ (صحیح مسلم:  ۴۸۰) بیان کرتے ہیں:

                نھانی رسول اللہ ﷺ أن أقرا القرآن راکعاً و ساجداً.

                “رسول اللہ ﷺ نے مجھے حالتِ رکوع و سجود میں قرآن پڑھنے سے منع فرما دیا ہے ۔”

فائدہ نمبر ۲:

            کم از کم تسبیحات تین مرتبہ پڑھیں ،سیدنا ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ نے اپنے قبیلہ کو جمع کرکے نماز پڑھ کر دکھائی اور اس کو رسول اللہ ﷺ کی نماز قرار دیا:

                ثم کبر ، فرکع، فقال ؛ سُبْحَانَ اللّٰہِ وَبِحَمْدِہٖ، ثلاث مرارٍ.

                “پھر آپ نے اللہ اکبر کہا ، رکوع کیا ، پھر تین بار کہا سُبْحَانَ اللّٰہِ وَبِحَمْدِہٖ  (اللہ پاک ہے ، اس کی تعریف ہے  )” (مسند الامام احمد: ۳۴۳/۵ ، وسندہٗ حسن)

جعفر بن برقان رحمہ اللہ کہتے ہیں:

                سألت میموناً عن مقدار الرکوع و السجود ، فقال ؛ لا أدری أن یکون أقلّ من ثلاث تسبیحات، قال جعفر ؛ فسألت الزّھری ، فقال ؛ اذا وقعت العظام و استقرّت ، فقلت لہ ؛ انّ میموناً یقول ؛ ثلاث تسبیحات ، فقال ؛ ھو الّذی أقول لک نحوٌ من ذٰلک.

                “میں نے میمون بن مہران تابعی رحمہ اللہ سے رکوع و سجود کی مقدار کے بارے میں سوال کیا تو انہوں نے فرمایا، میں تین تسبیحات سے کم درست خیال نہیں کرتا ، جعفر بن برقان کہتے ہیں ، میں نے امام زہری رحمہ اللہ (تابعی) سے اس کے بارے میں سوال کیا تو آپ نے فرمایا ، جب ہڈیاں اپنی جگہ پرپہنچ جائیں اور قرار پکڑ لیں ، میں نے کہا  کہ  میمون تو کہتے ہیں کہ (کم از کم ) تین تسبیحات ہوں تو فرمایا کہ میں بھی یہی کہتا ہوں۔”        (مصنف ابن ابی شیبہ : ۲۵۰/۱ ، ح : ۲۵۸۳ ، وسندہ  صحیح)

                امام حسن بصری رحمہ اللہ فرمایا کرتے تھے : التّامّ من السجود قدر سبع تسبیحات ، والمجزیٔ ثلاث.

                “مکمل سجدہ تو سات تسبیحات سے ہوتا ہے ، تین بھی جائز ہیں۔”        (مصنف ابن ابی شیبہ : ۲۵۰/۱ ، وسندہ صحیح)

امام شافعی رحمہ اللہ بھی (کم ازکم) تین دفعہ دعا پڑھنے کے قائل ہیں۔ (الام شافعی :  ۱۱۱/۱)

امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ کا بھی یہی مذہب ہے  ۔ (مسائل احمد لابنہ عبداللہ : ۷۴)

ثابت ہوا کہ رکوع و سجود میں کم از کم تین بار تسبیحات پڑھنی چاہئیں ، زیادہ سے زیادہ کی حد متعین نہیں ، ان دعاؤں میں سے کوئی دعا انتہائی عاجزی و انکساری ، خشوع و خضوع اور حضورِ قلب اور یقین کے ساتھ پڑھیں، دنیا و آخرت کی بھلائیاں سمیٹ لیں ، یہ نورانی اور مبارک دعائیں خود بھی باترجمہ پڑھیں اور اپنے بچوں کو بھی یاد کروادیں۔

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.