دورنگی

 از    July 31, 2014

تحریر  : حافظ ندیم ظہیر
ہمارا معاشرہ روز بروز زوال پذیر ہوتا جا رہا ہے۔ اس کا ہر آنے والا دن پہلے سے زیادہ پر فتن اور پرخطر ہے۔ ہر کوئی دو کشتیوں کا سوار نظر آتا ہے اور دل میں یہ آرزو سمائے ہوئے ہے کہ میرا ایمان بھی برقرار رہے اور اعتدال پسند، روشن خیال اور ترقی یافتہ معاشرے (Society)میں میری عزت (Respect)بھی بحال رہے۔ اگر میں روشن خیالی کی رو میں بہہ کر اپنی ذاتی زندگی میں کوئی تبدیلی لاؤں مثلاً ڈاڑھی شیو کروں، شلوار، پاجامے سے لڑکیوں کی طرح اپنے ٹخنے ڈھانپ لوں یا گھریلو زندگی میں تبدیلی (Change)آ جائے جیسے کیبل، نیٹ ، ڈش انٹینا، وی سی آر وگیرہ کا بے دریغ استعمال اور بیوی ، بہن، بیٹی کو بے پردہ بازار یا مخلوط پارکوں میں سیر و تفریح کی غرض سے لے جانا، گھر میں غیر محرم حضرات کا بلا جھجک آنا جانا(کیونکہ ان کے نزدیک روشن خیالی کا تقاضا ہے کہ عورتیں مردوں کے ساتھ قدم بقدم چلیں!) تو کوئی اسلام پسند مجھے یہ نہ کہہ دے کہ یہ خلافت شریعت ہے اور اگر میں کبھی کبھار نماز یا جمعہ پڑھ لوں تو کوئی اعتدال پسند مجھے مُلا، انتہا پسند‘‘مسیتڑ’’ نہ کہہ دے بس اس کے درمیان زندگی کی گاری چلتی رہے۔ یہ مختصر سا خاکہ ایسے حضرات کا ہے جو دنیا، معاشرہ، برادری و قبیلہ کے تقاضے تو یاد رکھتے ہیں لیکن قرآن و حدیث کے تقاضوں کو  یکسر نظر انداز کر دیتے ہیں۔

ارشاد باری تعالیٰ ہے:‘‘یٰٓاَ یُّھَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْ اادْخُلُوْ ا فِی السِّلْمِ کَآفَّۃً’’ اے ایمان والو! اسلام میں پورے کے پورے داخل ہو جاؤ[البقرہ:۲۰۸]‘


آدھا تیتر آدھا بٹیر’’ والی زندگی اللہ تعالیٰ کو قطعاً پسند نہیں یا پھر شریعت کی جو بات طبیعت و معاشرہ کے موافق ہو اس پر عمل کرنا اور جو اس کے برعکس ہو تو اسے ترک کر دینا یہ بھی عند اللہ مذموم کام ہے۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے:‘‘اَفَتُؤْمِنُوْنَ بِبَعْضِ الْکِتَابِ  وَتَکْفُرُوْنَ بِبَعْضٍ ج فَمَا جَزَآءُ مَنْ یَّفْعَلُ ذٰلِکَ مِنْکُمْ اِلَّا خِزْی‘’ فِی الْحَیٰوۃِالدُّنْیَا ج وَیَوْمَ الْقِیٰمَۃِ یُرَدُّوْنَ اِلٰٓی اَشَدِّالْعَذَابِ ط وَمَا اللہُ بَغَافِلٍ عَمَّا تَعْمَلُوْنَ
کیا تم کتاب کے بعض احکام مانتے ہو اور بعض کا انکا رکرتے ہو؟ بھلا جو لوگ ایسے کام کریں ان کی سزا اس کے سوا اور کیا ہو سکتی ہے کہ دنیا میں ذلیل و خوار ہوں اور قیامت کے دن وہ سخت عذاب کی طرف دھکیل دیئے جائیں اور جو کچھ تم کرتے ہو اللہ اس سے بے خبر نہیں۔[البقرہ:۸۵]

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ : لوگوں میں سب سے برا وہ شخص ہے جس کے دو چہرے ہوتے ہیں، وہ لوگوں میں سے کسی کے سامنے ایک چہرے سے اور کسی اور کے سامنے دوسرے چہرے سے جاتا ہے۔

(مسلم :۲۵۲۶بعد ح ۲۶۰۴و ترقیم دارالسلام: ۶۶۳۰، و مؤطا امام  مالک:۲؍۹۹۱ح ۱۹۳۰)

دورنگی چھوڑ دے یک رنگ ہو جا             سراسر موم ہو یا سنگ ہو جا


[وما علینا إلا البلاغ]

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

ٹویٹر پر فالو کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.