درود نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پر پیش ہوتا ہے

 از    March 27, 2017

تحریر: ابن الحسن محمدی

سیدنا اوس بن اوس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
إن من أفضل أيامكم يوم الجمعة، ‏‏‏‏‏‏فيه خلق آدم، ‏‏‏‏‏‏ وفيه النفخة، ‏‏‏‏‏‏وفيه الصعقة، ‏‏‏‏‏‏فأكثروا على من الصلاة فيه، فإن صلاتكم معروضة على .
”بلاشبہ تمہارے دنوں میں جمعہ کا دن سب سے بہتر ہے۔ اس دن آدم علیہ السلام پیدا ہوئے، اسی دن صور پھونکا جائے گا اور اسی دن سخت آواز ظاہر ہو گی۔ لہذا اس دن مجھ پر بکثرت درود بھیجا کرو، تمہارا درود مجھ پر پیش کیا جائے گا۔“
ایک آدمی نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! ہمارا درود آپ کی وفات کے بعد آپ کو کیسے پیش کیا جائے گا؟ کیا آپ کا جسد مبارک خاک میں نہیں مل چکا ہو گا ؟ اس پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
إن الله قد حرم على الارض أن تاكل أجساد الانبياء
”یقینا اللہ تعالیٰ نے زمین پر انبیاء کرام کے جسموں کو کھانا حرام فرما دیا ہے۔“ [مسند الإمام أحمد : 8/4؛ سنن أبى داود : 1047 , 1531 ؛ سنن النسائي : 1375؛ سنن ابن ماجه : 1085، 1636؛ فضل الصلاة على النبى للقاضي إسماعيل : 22، وسنده صحيح]
اس حدیث کو امام ابن خزیمہ [1733] ، امام ابن حبان [910] اور حافظ ابن قطان فاسی [بيان الوهم والإيهام : 574/5] رحمها اللہ نے ”صحیح“ قرار دیا ہے۔

امام حاکم رحمہ اللہ [278/1] نے اسے ”امام بخاری رحمہ اللہ کی شرط پر صحیح“ کہا ہے اور حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے ان کی موافقت کی ہے۔

حافظ نووی رحمہ اللہ نے اس کی سند کو ’’صحیح“ کہا ہے۔
[رياض الصالحين : 1399، خلاصة الأحكام : 441/1، 814/2]

حافظ ابن قیم الجوزیہ رحمہ اللہ (م : 751 ھ) لکھتے ہیں :
ومن تأمل هذا الإسناد ؛ لم يشك فى صحته، لثقة رواته، وشهرتهم، وقبول الأئمّة أحاديثهم.
”جو شخص اس روایت کی سند پر غور کرے گا، وہ اس کی صحت میں شک نہیں کرے گا، کیونکہ اس کے راوی ثقہ، مشہور ہیں اور ائمہ حدیث کے ہاں ان کی بیان کردہ احادیث مقبول ہیں۔“ [جلاء الافهام : 81]

٭ سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
لا تجعلوا بيوتكم قبورا، ‏‏‏‏‏‏ولا تجعلوا قبري عيدا، ‏‏‏‏‏‏وصلوا علي، ‏‏‏‏‏‏فإن صلاتكم تبلغني حيث كنتم .
”تم اپنے گھروں کو قبرستان مت بناؤ، نہ ہی میری قبر کو میلہ گاہ بنانا، (بلکہ جہاں بھی ہو) مجھ پر درود پڑھو تم جہاں بھی ہو گے تمہارا درود مجھ تک پہنچے گا۔“ [مسند الإمام أحمد : 367/2، ح : 8790 ؛ سنن أبى داود : 2042، واللفظ له، و سنده حسن]

٭ سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :
إنّ لله فى الأرض ملائكة سياحين، يبلغوني من أمتي السلام .
”اللہ تعالی کے زمین میں ایسے فرشے ہیں جو گشت کرتے رہتے ہیں اور میری امت کی طرف سے پیش کیا گیا سلام مجھ تک پہنچاتے ہیں۔“
[مسند الإمام أحمد : 387/1، 441، 452 ؛ سنن النسائي الصغرىٰ : 44/3، ح : 1282 ؛ سنن النسائي الكبرٰي : 22/6، و سندهٔ حسن]
اس حدیث کی بہت سے ائمہ نے تصحیح کی ہے، مثلا امام ابن حبان رحمہ اللہ [914] نے اسے ”صحیح“ اور امام حاکم رحمہ اللہ [456/2] نے ”صحیح الاسناد“ قرار دیا ہے، جب کہ حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے ان کی موافقت کی ہے۔

٭ سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ فرمایا کرتے تھے :
إذا صليتم على رسول الله صلى الله عليه وسلم، فأحسنوا الصلاة عليه، ‏‏‏‏‏‏فإنكم لا تدرون، لعل ذلك يعرض عليه، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ فقالوا له:‏‏‏‏ فعلمنا، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ قولوا:‏‏‏‏ اللهم اجعل صلاتك، ‏‏‏‏‏‏ورحمتك، ‏‏‏‏‏‏وبركاتك على سيد المرسلين، ‏‏‏‏‏‏وإمام المتقين، ‏‏‏‏‏‏وخاتم النبيين محمد عبدك ورسولك، ‏‏‏‏‏‏إمام الخير، ‏‏‏‏‏‏وقائد الخير، ‏‏‏‏‏‏ورسول الرحمة، ‏‏‏‏‏‏اللهم ابعثه مقاما محمودا، يغبطه به الاولون والآخرون، ‏‏‏‏‏‏اللهم صل على محمد، وعلى آل محمد، ‏‏‏‏‏‏كما صليت على إبراهيم، وعلى آل إبراهيم، ‏‏‏‏‏‏إنك حميد مجيد، ‏‏‏‏‏‏اللهم بارك على محمد، وعلى آل محمد، ‏‏‏‏‏‏كما باركت على إبراهيم، وعلى آل إبراهيم، ‏‏‏‏‏‏إنك حميد مجيد
جب تم لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر درود پڑھو تو اچھے الفاظ میں درود پڑھا کرو، کیوں کہ تمہیں معلوم نہیں کہ شاید وہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم پر پیش کیا جائے۔ لوگوں نے کہا: پھر آپ ہمیں وہ الفاظ سکھا دیجیے۔ انہوں نے فرمایا : یوں کہا کرو : اے اللہ ! تو سید المرسلین، امام المتقین اور خاتم النبیین، محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر اپنی رحمتیں اور برکتیں نازل فرما، جو تیرے بندے و رسول، امام الخیر، قائد الخیر اور رسول رحمت ہیں۔ اے اللہ ! تو انہیں اس مقام محمود پر فائز فرما، جس کی وجہ سے اولین و آخرین ان سے رشک کریں گے۔ اے اللہ ! محمد صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ کی آل پر اس طرح رحمت فرما، جس طرح تو نے ابراہیم علیہ السلام اور ان کی آل پر فرمائی تھی، بلاشبہ تو ہی قابل تعریف اور بزرگی والا ہے۔ اے اللہ ! محمد صلی اللہ علیہ وسلم اور ان کی آل پر اس طرح برکت نازل فرما، جس طرح تو نے ابراہیم علیہ السلام اور ان کی آل پر برکت نازل فرمائی تھی، بلاشبہ تو ہی قابل تعریف اور بزرگی والا ہے۔“
[سنن ابن ماجه : 906 ؛ المعجم الكبير للطبراني : 115/9 ؛ ح : 8594، مسند الشاشي : 611 ؛ الدعوات الكبير للبيهقي : 177، وسنده صحيح]
فائدہ :

سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کی طرف یہ بات منسوب ہے کہ :
ليس أحد من أمة محمد صلى الله عليه وسلم صلىٰ عليه صلاة، إلا وهى تبلغه، يقول له الملك : فلان يصلي عليك كذا وكذا صلاة .
”محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی امت میں سے کوئی بھی درود پڑھتا ہے تو وہ ضرور آپ صلی اللہ علیہ وسلم تک پہنچتا ہے۔ فرشتہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے جا کر عرض کرتا ہے : فلاں شخص آپ پر یہ یہ درود پڑھ رہا ہے۔“ [شعب الإيمان للبيهقي : 1482 ؛ حياة الأنبياء فى قبورهم للبيهقي : 17 ؛ مسند إسحاق بن راهويه، نقلا عن المطالب العالية لابن حجر : 3333]

لیکن اس کی سند ”ضعیف“ ہے، کیونکہ اس میں ابویحییٰ قتات راوی جمہور محدثین کے نزدیک ”ضعیف“ اور غیر ثقہ ہے۔

 

 

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.