دربار نبوت میں محبوب ترین کون

 از    December 6, 2017

تحریر: غلام مصطفےٰ ظہیر امن پوری حفظ اللہ

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو کائنات میں سب سے زیادہ محبوب ہستی سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کی تھی۔ اس مضمون کے آخر میں صحیح و صریح احادیث نبویہ کی روشنی میں تفصیلاً یہ بات بیان کر دی گئی ہے۔
بعض لوگ ان صحیح و صریح احادیث کے خلاف حدیث الطیر پیش کرتے ہیں۔
آئیے اس روایت پر اصولِ محدثین کے مطابق تحقیق ملاحظہ فرمائیں :
حدیث انس رضی اللہ عنہ :

➊ سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے منسوب ہے :
إن النبى صلى الله عليه وسلم كان عنده طائر، فقال : ’اللهم ائتني بأحب خلقك إليك يأكل معي من هٰذا الطير‘، فجائ أبو بكر، فرده، وجاء عمر، فرده، وجاء علي، فأذن له .
’’ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس ایک (پکا ہوا) پرندہ تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دعا کی : اے اللہ ! اپنےاس بندےکو بھیج دے، جو تجھے تیری مخلوق میں سب سے زیادہ محبوب ہے، وہ میرے ساتھ اس پرندے کا گوشت کھائے۔ پھر سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ تشریف لائے، لیکن آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو واپس بھیج دیا۔ اس کے بعد سیدنا عمر رضی اللہ عنہ آئے، تو انہیں بھی واپس بھیج دیا۔ پھر سیدنا علی رضی اللہ عنہ تشریف لائے،، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو اجازت دے دی۔ ‘‘ [الكبرٰي للنسائي : 107/5، ح : 8398، خصائص على بن أبي طالب للنسائي : 10]

تبصرہ :
یہ ’’ ضعیف ‘‘ اور ’’ منکر ‘‘ روایت ہے، کیونکہ :
➊ اس کا ایک راوی مسہر بن عبدالملک کمزور راوی ہے۔ [تقريب التهذيب لابن حجر : 6667]
اس کے بارے میں :
◈ امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
فيه بعض النظر .
’’ اس پر بعض محدثین نے کلام کی ہے۔ ‘‘ [التاريخ الصغير : 250/2]
◈ امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ولمسهر غير ما ذكرت، و ليس بالكثير .
’’ مسہر نےاس کے علاوہ بھی روایات بیان کی ہیں، مگر یہ کثیرالروایہ نہیں ہے۔ ‘‘ [الكامل فى ضعفاء الرجال : 458/6]
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ نے اسے الثقات [197/9] میں ذکر کے لکھا ہے :
يخطئ ويهم .
’’ یہ راوی غلطیوں اور اوہام کا شکار تھا۔ ‘‘
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے اسے ’’ لین ‘‘ (کمزور راوی )کہا ہے۔ [المقتنٰي فى سرد الكنٰي : 5419]
◈ نیز انہوں نے اسے ليس بالقوي (قوی نہیں ہے) بھی کہا ہے۔ [المغني فى الضعفاء : 658/2]
واضح طور پر اسے صرف حسن بن حماد نصیبی وراق نے ثقہ کہا ہے۔ [مسند أبي يعلٰي : 4052، الكامل فى ضعفاء الرجال لابن عدي : 457/6، وسنده صحيح]
↰ جمہور محدثین نے اس روایت کو ’’ ضعیف ‘‘ کہا ہے۔ اس روایت کی بہت ساری سندیں ہیں۔ وہ ساری کی ساری ’’ ضعیف ‘‘ ہیں۔
ذیل میں ہر ایک سند کے ضعف کو واضح کیا جاتا ہے۔
——————

طريق السدي عن أنس . . . .
[سنن الترمذي : 3721، مسند أبي يعلٰي : 4052، العلل المتناهية لابن الجوزي : 229/1]

تبصرہ :
یہ ’’ منکر ‘‘ روایت ہے، کیونکہ :
اس کا راوی عبیداللہ بن موسیٰ عبسی اگرچہ صحاح ستہ کا راوی ہے اور ثقہ ہے، لیکن محدثین کرام نے اس کی اس خاص روایت پر کلام کر رکھی ہے۔
◈ امام ابن سعد رحمہ اللہ اس کے بارے میں فرماتے ہیں :
كان ثقة صدوقا، إن شاء الله، كثير الحديث، حسن الهيئة، وكان يتشيع، ويروي أحاديث فى التشيع منكرة، فضعف بذٰلك عند كثير من الناس .
’’ یہ ان شاءاللہ ثقہ و صدوق اور کثیرالحدیث راوی ہے۔ یہ خوش شکل اور شیعہ
بھی ہے۔ تشیع میں منکر روایتیں بیان کرتا ہے، اسی بنا پر بہت سے محدثین نے اس کو ضعیف قرار دے دیا ہے۔ ‘‘ [الطبقات الكبرٰي : 368/6]
↰ یوں یہ روایت ’’ منکر ‘‘ ہی ہے۔
——————

طريق الحارث بن نبهان عن السدي عن أنس . . .
[تاريخ دمشق لابن عساكر : 356/42]

تبصرہ :
یہ من گھڑت سند ہے، کیونکہ :
اس میں حارث بن نہیان ’’ منکرالحدیث ‘‘ اور ’’ متروک الحدیث ‘‘ راوی ہے۔
——————

طريق حماد بن المختار عن عبد الملك بن عمير . . .
[المعجم الكبير للطبراني : 253/1، تاريخ دمشق لابن عساكر : 254/42، العلل المتناهية لابن الجوزي : 228/1]

تبصرہ :
یہ سند ’’ ضعیف ‘‘ ہے، کیونکہ :
اس کا راوی حماد بن مختار ’’ مجہول ‘‘ ہے۔
◈ اس کے بارے میں امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وليس بالمعروف . ’’ یہ غیرمعروف راوی ہے۔ ‘‘ [الكامل فى ضعفاء الرجال : 252/2]
◈ حافظ ہیثمی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ولم أعرفه . ’’ميں اسے نہیں جانتا۔ ‘‘ [مجمع الزوائد : 125/9]
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ کہتے ہیں :
لا يعرف .
’’ یہ غیر معروف راوی ہے۔ ‘‘ [ميزان الاعتدال : 599/1]
اس میں ایک اور علت ِ قادحہ بھی ہے۔
——————

قطن بن نسير، ثنا جعفر بن سليمان : ثنا عبد الله بن المثنٰي عن عبد الله بن أنس . . .
[الكامل فى ضعفاء الرجال لابن عدي : 147/2، 148، ت : 383، تاريخ دمشق لابن عساكر : 247/42]

تبصرہ :
یہ ’’ منکر ‘‘ روایت ہے، کیونکہ :
اس کا راوی جعفر بن سلیمان ضعبی ثقہ اور حسن الحدیث ہے۔ یہ صحیح مسلم کا راوی ہے اور اجماعِ امت کی بنا پر صحیح مسلم میں مذکور اس کی ساری روایات صحیح ہیں۔ صحیح مسلم کے علاوہ اس کی بعض روایات منکر بھی ہیں۔ جن روایات پر جمہور محدثین نے کلام کر دی ہے ان میں یہ روایت بھی ہے۔
اس کے بارے میں :
◈ امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
يخالف فى بعض حديثه .
’’ بعض احادیث میں ثقہ راوی اس کی مخالفت کرتے ہیں۔ ‘‘ [التاريخ الكبير : 192/2]
◈ حافظ جوزجانی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
روٰي أحاديث منكرة، وهو ثقة متماسك، كان لا يكتب .
’’ اس نے کچھ منکر روایات بیان کی ہیں، اگرچہ یہ ثقہ و ضابط ہے، یہ اپنے حافظے سے بیان کرتا تھا، اپنی روایات کو لکھتا نہیں تھا۔ ‘‘ [أحوال الرجال : 173]
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وهو صدوق فى نفسه، وينفرد بأحاديث عدة، مما ينكر .
’’ یہ ذاتی طور پر ثقہ راوی ہے، مگر اس نے کئی منکر روایات منفرد بیان کی ہیں۔ “ [ميزان الاعتدال : 410/1]
فائدہ جلیلہ :
◈ شیخ الاسلام ثانی، عالم ربانی، علامہ ابن القیم رحمہ اللہ نے کیا خوب کہا ہے :
ولا عيب علٰي مسلم فى إخراج حديثه، لأنه ينتقي من أحاديث هٰذا الضرب ما يعلم أنه حفظه، كما يطرح من أحاديث الثقة ما يعلم أنه غلط فيه، فغلط فى هٰذا المقام من استدرك عليه إخراج جميع حديث الثقة، ومن ضعف جميع حديث سيئ الحفظ، فالـأولٰي طريقة الحاكم وأمثاله، والثانية طريقة أبي محمد ابن حزم وأشكاله، وطريقة مسلم هي طريقة أئمة هٰذا الشأن .
’’ جعفر بن سلیمان کی احادیث بیان کرنا امام مسلم رحمہ اللہ کے لیے کوئی عیب والی بات نہیں، کیونکہ وہ اس قسم کے راویوں کی ان روایات کا انتخاب کرتے ہیں، جن کے بارے میں وہ جانتے ہوتے ہیں کہ وہ انہیں یاد ہیں۔ جس طرح کہ وہ ثقہ راویوں سے منقول ایسی روایات کو چھانٹ دیتے ہیں، جن کے متعلق ان کو علم ہوتا ہے کہ ان میں غلطی ہے۔ اس مقام پر ان لوگوں نے غلطی کی ہے، جنہوں نے کسی ثقہ راوی کی بیان کردہ تمام روایات کو استدرا کا ذکر کر دیا ہے، یا خراب حافظے والے راویوں کی تمام روایات کو ضعیف قرار دے دیا ہے۔ پہلے گروہ کی مثال امام حاکم رحمہ اللہ اور ان کی مثل دوسرے لوگ ہیں، (جو صحیحین کے راویوں کی تمام روایات کو صحیح قرار دیتے ہیں ) اور دوسرے گروہ کی مثال علامہ ابن حزم رحمہ اللہ اور ان جیسے دوسرے لوگ ہیں، (جو خراب حافظے والے راویوں کی تمام روایات کوضعیف کہتے ہیں )۔ امام مسلم رحمہ اللہ کا طریقہ کار وہی ہے، جو اس فن کے لائق ائمہ کرام کا ہے۔ “ [زاد المعاد : 136/1]
——————

أبو الهندي عن أنس . . .
[مشيخة ابن شاذان : 5، تاريخ بغداد للخطيب : 171/3، العلل المتناهية لابن الجوزي : 227/1، تاريخ دمشق لابن عساكر : 253/42]

تبصرہ :
یہ سند بھی ’’ ضعیف “ ہے، کیونکہ :
ابوالہندی راوی ’’ مجہول “ ہے۔
◈ امام خطیب بغدادی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
مجهول، واسمه لا يعرف . ’’ یہ مجہول ہے۔ اس کا تو نام بھی معلوم نہیں۔ “
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
لا يعرف . ’’ یہ غیر معروف راوی ہے۔ “ [ميزان الاعتدال : 583/4]
——————

عن إسماعيل بن سلمان الأزرق عنه . . .
[التاريخ الكبير للبخاري : 358/1، مسند البزار : 7547]

تبصرہ :
یہ سند سخت ترین ’’ ضعیف “ ہے، کیونکہ :
اس کا راوی اسماعیل بن سلمان ازرق سخت ’’ ضعیف “ ہے۔
اسے امام یحییٰ بن معین، امام ابوزرعہ رازی، امام ابوحاتم رازی، امام نسائی، امام ابن نمیر، امام دارقطنی، امام یعقوب بن سفیان فسوی، امام ابن حبان اور جمہور محدثین کرام نے ’’ ضعیف “ اور ’’ متروک “ قرار دیا ہے۔
——————

عثمان الطويل عن أنس . . .
[التاريخ الكبير للبخاري : 3/2، تاريخ دمشق لابن عساكر : 250/42]

تبصرہ :
یہ سند بھی ’’ ضعیف “ ہے، کیونکہ :
➊ اس کا راوی عثمان الطّویل ’’ متکلم فیہ “ ہے۔
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ اسے الثقات [157/5] میں ذکر کرنے کے بعد لکھتے ہیں :
ربما أخطأ .
’’ کبھی غلطی کر جاتا ہے۔ “
◈ امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
هو شيخ . [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 173/6]
◈ امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
عثمان الطويل عزيز السند، إنما له هٰذا وآخر عن أنس .
’’ عثمان الطّویل کی سند عزیز (دو واسطوں والی ) ہے۔ اس کی ایک یہ روایت ہے۔ دوسری ایک روایت سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے ہے۔ “ [الكامل فى ضعفاء الرجال : 166/3، وفي نسخة : 1026/3، ترجمة رفيع أبي العالية]
◈ امام شعبہ رحمہ اللہ نے اس سے روایت لی ہے، لیکن امام بزار رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
عن أنس من وجوه، وكل من رواه عن أنس، فليس بالقوي .
’’ اس روایت کو سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے کئی سندوں کے ساتھ روایت کیا گیا ہے، البتہ جو بھی سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے یہ روایت بیان کرتا ہے، وہ قوی نہیں۔ “ [مسند البزار : 7548]
◈ امام خلیلی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وما روٰي حديث الطير ثقة .
’’ حدیث الطیر کسی بھی ثقہ راوی نے بیان نہیں کی۔ “ [الإرشاد : 420/1]
لہٰذا اس کا ضعف ہی راجح ہے۔
➋ امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ولا يعرف لعثمان سماع من أنس بن مالك .
’’ عثمان الطّویل کا سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے سماع ثابت نہیں۔ “ [التاريخ الكبير : 3/2]
لہٰذا یہ سند ’’ انقطاع “ کی بنا پر بھی ’’ ضعیف “ ہے۔
——————
عن محمد بن عياض، عن يحيي بن حسان، عن سليمان ابن بلال، عن يحيي بن سعيد عن أنس . . .
[المستدرك على الصحيحين للحاكم : 130/3]
تبصرہ :
اس کی سند ’’ ضعیف “ ہے، کیونکہ :
➊ اس میں ابن عیاض راوی ’’ مجہول “ ہے۔
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ اس کے بارے میں فرماتے ہیں :
فلا أعرفه . ’’ میں اسے نہیں جانتا۔ “ [ميزان الاعتدال : 465/3]
حافظ ہیثمی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ولم أعرفه .
’’ میں نہیں جانتاکہ یہ کون ہے۔ “ [مجمع الزوائد : 125/9]
➋ محمد بن احمد بن عیاض بن ابوطیبہ راوی بھی ’’ مجہول الحال “ ہے۔
لہٰذا امام حاکم رحمہ اللہ کا اس روایت کو ’’ بخاری و مسلم کی شرط پر صحیح “ کہنا تساہل پر مبنی ہے۔
ان کے رد میں حافظ ابن کثیر رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وهٰذا فيه نظر . ’’ امام حاکم کی یہ بات محل نظر ہے۔ “ [البداية والنهاية : 387/7]
——————

عن إسماعيل بن سليمان الرازي، عن عبد الملك بن أبي سليمان، عن عطاء عن أنس . . .
[المعجم الكبير للطبراني : 7462، تاريخ بغداد للخطيب : 36/9، العلل المتناهية لابن الجوزي : 227/1، ح : 365]

تبصرہ :
یہ سند بھی باطل ہے، کیونکہ :
➊ اس میں کئی ’’ مجہول “ راویوں نے ڈیرے ڈالے ہوئے ہیں۔ اس روایت کی صحت کے مدعی پر تمام راویوں کی توثیق پیش کرنا واجب ہے۔
➋ اسماعیل بن سلیمان رازی کے بارے میں :
◈ امام عقیلی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
الغالب علٰي حديثه الوهم .
’’ اس کی حدیث پر وہم کا غلبہ ہے۔ “ [الضعفاء الكبير : 82/1]
مذکورہ بالاحدیث اور ایک دوسری حدیث ذکر کرنے کے بعد :
◈ امام عقیلی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
كلاهما لا يتابع عليه، وليسا بمحفوظين .
’’ ان دونوں روایتوں کی متابعت نہیں ملتی۔ یہ دونوں غیر محفوظ ہیں۔ “ [الضعفاء الكبير : 82/1]
◈ حافظ ابن الجوزی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وهٰذا لا يصح، وفيه مجاهيل، لا يعرفون .
’’ یہ روایت صحیح نہیں۔ اس میں ایسے مجہول راوی ہیں، جن کی معرفت نہیں ہو سکتی۔ “ [ العلل المتناهية : 227/1، ح : 365]
——————

عن مسلم بن كيسان، عن أنس . . .
[الموضح للخطيب البغدادي : 398/2، العلل المتناهية لابن الجوزي : 236/1، تاريخ دمشق لابن عساكر : 256/42، مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي : 398]

تبصرہ :
اس کی سند سخت ’’ ضعیف “ ہے، کیونکہ اس کا راوی مسلم بن کیسان اعور جمہورمحدثین کرام کے نزدیک ’’ ضعیف “ ہے۔
◈ حافظ ہیثمی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وضعفه جماعة كثيرون .
’’ محدثین کی ایک کثیر جماعت نے اس کو ضعیف قرار دیا ہے۔ “ [مجمع الزوائد : 29/1]
◈ امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
يتكلمون فيه .
’’ محدثین کرام نے اس پر جرح کی ہے۔ “ [التاريخ الكبير : 271/7]
◈ امام فلاس رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
هو منكر الحديث جدا .
’’ یہ سخت منکر الحدیث راوی ہے۔ “ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 192/8]
◈ امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
يتكلمون فيه، وهو ضعيف الحديث .
’’ اس پر محدثین نے جرح کی ہے اور یہ ضعیف الحدیث راوی ہے۔ “ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 192/8]
◈امام ابوزرعہ رازی رحمہ اللہ بھی فرماتے ہیں کہ یہ ’’ ضعیف الحدیث “ ہے۔ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 192/8]
◈ امام احمد بن حنبل، امام نسائی، امام جوزجانی، امام یحییٰ بن معین اور جمہور محدثین رحمها اللہ
اسے ’’ ضعیف “ ہی کہتے ہیں۔
◈ امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
والضعف علٰي رواياته بين .
’’ اس کی روایات میں ضعف واضح نظر آتا ہے۔ “ [الكامل فى ضعفاء الرجال : 308/6، ت : 1796]
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
اختلط فى آخر عمره، كان لا يدري ما يحدث به، فجعل يأتى بما لا أصل له عن الثقات، فاختلط حديثه ولم يتميز .
’’ یہ آخری عمر میں حافظے کے اختلاط کا شکار ہو گیا تھا، اس کو پتہ ہی نہیں چلتا تھا کہ اس نے کیا بیان کیا ہے۔ چنانچہ اس نے ثقہ راویوں سے منسوب کر کے بے اصل روایات بیان کر دیں۔ یوں اس کی بیان کردہ روایات خلط ملط ہو گئیں اور صحیح و ضعیف میں تمیز نہیں ہو سکی۔ “
——————

عن إبراهيم بن ثابت البناني، عن أنس . . .
[الضعفاء الكبير للعقيلي : 46/1، المستدرك للحاكم : 131/3]

تبصرہ :
یہ سخت ’’ ضعیف “ سند ہے، کیونکہ :
اس کے راوی ابراہیم بن ثابت قصار بصری کے بارے میں :
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ کہتے ہیں :
ضعيف جدا . ’’ یہ سخت ضعیف راوی ہے۔ “ [المغني فى الضعفاء : 10/1]
نیز فرماتے ہیں کہ یہ ’’ ساقط “ راوی ہے۔ [تلخيص المستدرك : 131/3]
——————

عن بشر بن الحسين، عن الزبير بن عدي عن أنس . . .
[أخبار أصبهان لأبي نعيم الأصبهاني :232/1، تاريخ دمشق لابن عساكر : 252/42، مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي : 163]

تبصرہ :
یہ سند بھی باطل ہے۔، کیونکہ :
اس کے راوی بشر بن حسین اصبہانی کے بارے میں :
◈ امام دارقطنی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
بشر بن حسين أصبهاني عن الزبير بن عدي، وله عنه نسخة موضوعة، والزبير ثقة .
’’ بشر بن حسین اصبہانی زبیر بن عدی سے بیان کرتا ہے، زبیر بن عدی تو ثقہ ہیں، لیکن بشر نے ان سے منسوب کر کے موضوع روایات پر مشتمل ایک نسخہ
بنایا ہوا ہے۔ “ [الضعفاء والمتروكون : 126]
◈ یہی بات امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ نے بھی کہی ہے۔ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 355/2]
◈ امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
فيه نظر . ’’ اس پر محدثین کی جرح موجود ہے۔ “ [التاريخ الصغير : 26/2]
◈ امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وعامة حديثه ليس بالمحفوظ .
’’ اس کی اکثر روایات غیر محفوظ ہیں۔ “ [الكامل فى ضعفاء الرجال : 11/2]
نیز انہوں نے اسے ’’ ضعیف “ بھی کہا ہے۔ [الكامل : 11/2]
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
يروي عن الزبير بن عدي بنسخة موضوعة .
’’ یہ زبیر بن عدی سے موضوع روایات پر مشتمل نسخہ سے بیان کرتا ہے۔ “ [المجروحين من المحدثين والضعفاء والمتروكين : 190/1]
◈ امام حاکم رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
يروي عن الزبير بن عدي، عن أنس بن مالك، وغيره كتابا يزيد عدده علٰي مائة وخمسين حديثا، أكثرها موضوعة .
’’ یہ زبیر بن عدی کے واسطے سے سیدنا انس بن مالک وغیرہ سے روایات بیان کرتا ہے۔ اس کے پاس ایک کتاب تھی، جس میں ایک سو پچاس سے زائد روایات تھیں۔ ان میں سے اکثر من گھڑت تھیں۔ “ [المدخل إلى الصحيح، ص : 123]
یہ روایت بھی بشر نے زبیر بن عدی سے بیان کی ہے، لہٰذا یہ روایت جھوٹی ہے۔

——————

عن عبد الله بن محمد بن عمارة، عن مالك، عن إسحاق بن عبد الله، عن أنس . . .
[حلية الأولياء وطبقات الأصفياء لأبي نعيم الأصبهاني : 339/6، العلل المتناهية لابن الجوزي : 225/1]

تبصرہ :
یہ ’’ ضعیف “ سند ہے، کیونکہ :
ابن عمارہ راوی کے بارے میں :
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
مستور، ما وثق ولا ضعف . ” ’’ یہ مستور راوی ہے۔ اس کی نہ توثیق کی گئی ہے، نہ تضعیف“ [ميزان الاعتدال : 489/2]
◈ حافظ ابن حجر اللہ فرماتے ہیں :
أورد له الدارقطني فى الغرائب عن مالك، عن إسحاق بن عبد الله، عن أنس، حديث الطير، وهو منكر، وقال : تفرد ابن عمارة عن مالك، وغيره أثبت منه .
’’ امام دارقطنی رحمہ اللہ نے حدیث الطیر کو اپنی کتاب الغرائب میں مالك عن اسحاق بن عبدالله عن انس کی سند سے نقل کیا ہے۔ یہ منکر روایت ہے۔ امام دارقطنی رحمہ اللہ فرماتے ہیں : مالک سے بیان کرنے میں ابن عمارہ منفرد ہے، یہ ضعیف راوی ہے۔ “ [لسان الميزان : 336/3]
——————

عن أبي مكيس دينار، عن أنس . . .
[تاريخ جرجان للسهمي، ص : 169، تاريخ بغداد للخطيب : 382/8، العلل المتناهية لابن الجوزي : 229/1]

تبصرہ :
یہ سند بھی جھوٹی ہے، کیونکہ :
ابومکیس دینار کے بارے میں :
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ساقط. ’’ یہ سخت ضعیف راوی ہے۔ “ [المغني فى الضعفاء : 224/1]
◈ نیز فرماتے ہیں :
عن أنس، ذاك التالف المتهم .
’’ یہ سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے روایات بیان کرتا ہے۔ سخت ضعیف اور متہم بالکذب ہے۔ “ [ميزان الاعتدال : 30/2]
◈ امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
منكر الحديث، ذاهب الحديث، شبه المجهول .
’’ اس کی بیان کردہ احادیث منکر اور سخت ضعیف ہیں۔ یہ مجہول جیسا ہے۔ “ [الكامل فى ضعفاء الرجال : 109/3، 112]
——————

عن يغنم بن سالم، عن أنس . . .
[فضائل الخلفاء الراشدين لأبي نعيم الأصبهاني : 50، مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي : 164، 171]

تبصرہ :
یہ جھوٹی سند ہے، کیونکہ :
یغنم بن سالم راوی کے بارے میں :
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ یہ سخت جھوٹا راوی تھا۔
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
شيخ يضع الحديث علٰي أنس بن مالك .
’’ یہ سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے منسوب کر کے جھوٹی روایات بیان کرتا ہے۔ “ [المجروحين : 145/3]
——————

عن على بن الحسن، حدثنا خليد بن دعلج، عن قتادة عن أنس . . .
[تاريخ دمشق لابن عساكر : 250/42، مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي : 169]

تبصرہ :
یہ بھی جھوٹی سند ہے، کیونکہ :
① اس کے راوی علی بن حسن سامی کے بارے میں :
حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وهو فى عداد المتروكين .
’’ اس کا شمار متروک راویوں میں ہوتا ہے۔ “ [ميزان الاعتدال : 160/3]
② خلید بن دعلج راوی کو امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ، امام یحییٰ بن معین رحمہ اللہ، امام دارقطنی رحمہ اللہ، امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ، امام عقیلی رحمہ اللہ، امام ابن حبان رحمہ اللہ اور جمہور محدثین نے ’’ ضعیف“ کہا ہے۔
③ قتادہ بن دعامہ تابعی ’’ مدلس“ ہیں جو کہ لفظ ’’ عن“ سے بیان کر رہے ہیں اور ان کے سماع کی تصریح نہیں مل سکی۔
——————

عن خالد بن عبيد، عن أنس . . .
[مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي : 173، العلل المتناهية لابن الجوزي : 229/1]

تبصرہ :
یہ سند بھی باطل ہے، کیونکہ :
اس کے راوی خالد بن عبید عتکی کے بارے میں :
◈ امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
فيه نظر . ’’ اس پر جرح کی گئی ہے۔ “ [التاريخ الصغير : 162/3]
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
يروي عن أنس بنسخة موضوعة، ما لها أصل، يعرفها من ليس الحديث صناعته أنها موضوعة، لا تحل كتابة حديثه؛ إلا علٰي جهة التعجب .
’’ یہ سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے منسوب کر کے ایک موضوع و من گھڑت روایات پر مشتمل نسخہ روایت کرتا ہے۔ اس کی کوئی اصل نہیں۔ جو حدیث میں مہارت نہیں رکھتا، وہ بھی جانتا ہے کہ یہ نسخہ موضوعہ (من گھڑت ) ہے۔ اس کی حدیث کو لکھنا جائز ہی نہیں ہے۔ ہاں ! مگر برائے تعجب لکھا جا سکتا ہے۔ “ [المجروحين : 279/1]
◈ امام حاکم رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
حدث عن أنس بأحاديث موضوعة .
’’ اس نے سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے جھوٹی روایات منسوب کی ہیں۔ “ [المدخل إلى الصحيح، ص : 133، ت : 48]
◈ امام ابونعیم اصبہانی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
حدث عن أنس بأحاديث موضوعة، لا شيئ .
’’ اس نے سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے جھوٹی روایات منسوب کی ہیں۔ اس کی بیان کردہ بات کا کوئی اعتبارنہیں۔ “ [الضعفاء : 57]
◈ امام عقیلی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
لا يتابع علٰي حديثه . ’’ اس کی روایات منکر ہیں۔ “ [الضعفاء الكبير : 10/2]
◈ حافظ ابن حجر رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
متروك الحديث مع جلالته .
’’ اپنے مقام و مرتبے کے باوجود اس کی روایت متروک ہوتی ہے۔ “ [تقريب التهذيب : 1654]
——————

عن عبد اللہ بن زياد أبي العلائ، عن على بن زيد، عن سعيد بن المسيب، عن أنس . . .
[تاريخ دمشق لابن عساكر : 248/42]

تبصرہ :
یہ سخت ’’ ضعیف“ سند ہے، کیونکہ :
① عبداللہ بن زیاد کو امام بخاری رحمہ اللہ نے ’’ منکر الحدیث“ قرار دیا ہے۔ [التاريخ الكبير : 95/5]
② علی بن زید بن جدعان راوی جمہور محدثین کے نزدیک ’’ ضعیف“ ہے۔
اسے حافظ ہیثمی رحمہ اللہ [مجمع الزوائد : 209/8] ، علامہ بوصیری [مصباح الزجاجة :84] ، علامہ ابن العراقی [طرح التثريب : 77/2] اور علامہ بقاعی [نظم الدرر فى تناسب الآيات والسور : 524/4] نے جمہور کے نزدیک ’’ ضعیف“ قرار دیا ہے۔
یہ ضعیف، مختلط اور ناقابل حجت راوی ہے۔ کسی نے اسے واضح طور پر ثقہ نہیں کہا۔
③ صالح بن عبدالکبیر بن شبیب ’’ مجہول“ ہے۔
لہٰذا امام ابن شاہین رحمہ اللہ کا اس حدیث کو ’’ حسن“ کہنا صحیح نہیں۔
——————

(20) عن ميمون أبي خلف، عن أنس …. . [التاريخ الكبير للبخاري : 358/1، الضعفاء الكبير للعقيلي : 189/4، تاريخ دمشق لابن عساكر : 251/42]

تبصرہ :
یہ سخت ’’ ضعیف ‘‘ سند ہے، کیونکہ :
اس کے راوی میمون بن جابر ابوخلف کے بارے میں :
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ کہتے ہیں :
لا شيئ . ’’اس کا کوئی اعتبار نہیں. ‘‘ [المغني فى الضعفاء : 690/2]
◈ امام عقیلی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ولا يصح حديثه . ’’ اس کی بیان کردہ روایت صحیح نہیں ہوتی. ‘‘ [الضعفاء الكبير : 188/4]
——————

(21) عن عبد اللہ بن ميمون، عن جعفر بن محمد، عن أبيه، عن أنس . . .
[طبقات المحدثين لأبي الشيخ : 924، العلل المتناهية لابن الجوزي : 232/1]

تبصرہ :
یہ بھی سخت ’’ ضعیف“ سند ہے، کیونکہ :
اس کے راوی عبداللہ بن میمون قداح کے بارے میں :
حافظ ابن حجر رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
منكر الحديث، متروك .
’’ یہ منکر الحدیث اور متروک راوی ہے۔ “ [تقريب التهذيب : 3653]
——————

(22) عن محمد بن زكريا بن ذويد، عن حميد الطويل، عن أنس . . .
[مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي : 156]

تبصرہ :
یہ باطل سند ہے، کیونکہ :
اس کے راوی محمد بن زکریا کے بارے میں حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
روٰي عن حميد الطويل خبرا باطلا، والراوي عنه؛ هو على بن صدقة الجوهري، لا أعرفه .
’’ اس نے حمید طویل سے منسوب کر کے جھوٹی روایت بیان کی ہے۔ اس سے علی بن صدقہ جوہری بیان کرتا ہے۔ میں اُسے نہیں جانتا۔ “ [ميزان الاعتدال : 549/3]
——————

(23) عن الحسن بن عبد اللہ الثقفي، عن نافع، عن أنس . . .
[مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي : 167]

تبصرہ :
یہ بھی باطل سند ہے، کیونکہ :
① اس کے راوی حسن بن عبداللہ ثقفی کے بارے میں :
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ یہ ’’ منکرالحدیث“ ہے۔ [ميزان الاعتدال : 501/1]
◈ نیز انہوں نے اسے ’’ متروک“ بھی کہا ہے۔ [المغني فى الضعفاء : 693/2]
② نافع بن ہرمز بھی ’’ ضعیف ومتروک“ راوی ہے۔
◈ اسے امام دارقطنی رحمہ اللہ نے [الضعفاء : 549] میں ذکر کیا ہے۔
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ کہتے ہیں :
ضعفه أحمد وجماعة، وكذبه ابن معين مرة، وقال أبو حاتم : متروك، ذاهب الحديث، وقال النسائي : ليس بثقة .
’’ امام احمد رحمہ اللہ اور محدثین کی ایک جماعت نے اس کو ضعیف قرار دیا ہے۔ امام یحییٰ بن معین رحمہ اللہ نے ایک مرتبہ اس کو جھوٹا کہا امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ
نے متروک اور ذاہب الحدیث کہا ہے۔ نیز امام نسائی رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ یہ ثقہ نہیں ہے۔ “ [ميزان الاعتدال : 243/4]
——————

(24) عن محمد بن سليم، عن أنس . . .
[تاريخ دمشق لابن عساكر : 253/4]

تبصرہ :
یہ ’’ ضعیف“ سند ہے، کیونکہ :
محمد بن سلیم راوی ’’ مجہول“ ہے۔
◈ حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے اسے ’’ مجہول“ قرار دیا ہے۔ [لسان الميزان : 192/5]
——————

(25) عن عبد اللہ بن المثنٰي، عن ثمامة، عن أنس . . .
[تاريخ دمشق لابن عساكر : 253/42، العلل المتناهية لابن الجوزي : 231/1]

تبصرہ :
یہ سند باطل ہے، کیونکہ :
① ابن عساکر کی سند میں عبدالسلام بن راشد ہے، جس کے بارے میں :
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
لا يدرٰي من ذا ؟
’’ کوئی پتہ نہیں کہ یہ کون ہے۔ “ [المغني فى الضعفاء : 394/1]
[العلل المتناهية لابن الجوزي] والی سند میں عباس بن بکار ہے، جس کے بارے میں :
◈ امام دارقطنی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
بصري كذاب . ’’ یہ بصری کذاب ہے۔ “ [الضعفاء والمتروكون : 424]
——————

(26) عن سالم مولي عمر بن عبيد اللہ، عن أنس . . . [تاريخ دمشق لابن عساكر : 253/42، العلل المتناهية لابن الجوزي : 231/1]

تبصرہ :
یہ جھوٹی سند ہے، کیونکہ :
اس کی سند میں احمد بن سعید بن فرقد راوی ہے، جس کے بارے میں :
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
روٰي حديث الطير بإسناد الصحيحين، فهو متهم بوضعه .
’’ اس نے حدیث الطیر کو بخاری و مسلم کی سندوں سے روایت کیا ہے، مگر وہ خود اس پر اس حدیث کو گھڑنے کا الزام ہے۔ “ [ميزان الاعتدال : 100/1]
——————

(27) عن مفضل بن صالح، عن الحسن بن الحكم، عن أنس…. . [العلل المتناهية لابن الجوزي : 231/1]

تبصرہ :
یہ باطل سند ہے، کیونکہ :
مفضل بن صالح اسدی کو امام بخاری رحمہ اللہ [التاريخ الكبير : 264/2] اور امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 317/8]
نے ’’ منکر الحدیث“ قرار دیا ہے۔
◈ امام ترمذی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ليس عند أهل الحديث بذاك الحافظ .
’’ محدثین کرام کے نزدیک اس کا حافظہ مضبوط نہیں۔ “ [سنن الترمذي : 2592]
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
منكر الحديث، كان ممن يروي المقلوبات عن الثقات، حتٰي يسبق إلى القلب أنه كان المتعمد لها من كثرته، فوجب ترك الاحتجاج به .
’’ یہ منکر الحدیث راوی ہے، ثقہ راویوں سے مقلوب روایتیں بیان کرتا ہے، اس کی کثرتِ روایات سے یہ گمان ہوتا ہے کہ جان بوجھ کر ایساکرتا ہے۔ اس کی بیان کردہ روایت کو ترک کر دینا واجب ہے۔ “ [المجروحين : 32/3]
◈ حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے اسے ’’ ضعیف“ کہا ہے۔ [تقريب التهذيب : 6854]
——————

(28) عن حماد، عن إبراهيم النخعي، عن أنس …. . [أسد الغابة لابن الأثير : 30/4]

تبصرہ :
یہ موضوع (من گھڑت ) سند ہے، کیونکہ :
① اس میں محمد بن اسحاق بن ابراہیم اہوازی ’’ متہم بالوضع“ راوی ہے۔ دیکھیں : [ ميزان الاعتدال للذهبي : 478/3]
② اس میں کئی اور علل قادحہ بھی موجود ہیں۔
——————

(29) عن عبد الملك بن أبي سليمان، عن أنس …. . [التاريخ الكبير للبخاري : 3/2، مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي : 157]

تبصرہ :
یہ روایت ’’ انقطاع“ کی وجہ سے ’’ ضعیف“ ہے، جیسا کہ :
◈ امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
عبد الملك بن أبي سليمان عن أنس مرسل .
’’ عبدالملک بن ابی سلیمان کی سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے روایت مرسل ہوتی ہے۔ “ [المراسيل لابن أبي حاتم : 132]
——————

(30) عن يحيي بن أبي كثير، عن أنس …. . [المعجم الكبير للطبراني : 206/2، 207، ح : 1744]

تبصرہ :
اس کی سند ’’ ضعیف“ ہے، کیونکہ :
① یحییٰ بن ابی کثیر ’’ مدلس“ ہیں اور لفظ ’’ عن“ سے بیان کر رہے ہیں، ان کے سماع کی تصریح نہیں مل سکی۔
یاد رہے کہ صحیح بخاری و مسلم کے علاوہ ’’ مدلس“ کا ’’ عنعنہ“ نامقبول ہوتا ہے، تاوقتیکہ کسی اور جگہ اس کے سماع کی تصریح یا کوئی ثقہ متابع مل جائے۔
② یحییٰ بن ابی کثیر کا سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے سماع نہیں ہے۔ [تحفة التحصيل فى ذكر رواة المراسيل للعراقي : 346، 347]

(31) عن خالد بن عبيد أبي عصام، عن أنس …. . [الكامل فى ضعفاء الرجال لابن عدي : 25/3]

تبصرہ :
اس کی سند باطل ہے، کیونکہ اس میں خالد بن عبید عتکی’’ متروک“ راوی موجود ہے۔
اس کے بارے میں گزشتہ صفحات میں بیان کیا جا چکا ہے۔
——————

(32) عن عمر بن عبد الله بن يعلي بن مرة، عن أبيه، عن جده، وعن أنس …. . [تاريخ بغداد للخطيب : 376/11، العلل المتناهية لابن الجوزي : 230/1]

تبصرہ :
یہ سخت ’’ ضعیف“ سند ہے، کیونکہ :
اس کے راوی عمر بن عبداللہ بن یعلیٰ کو نقاد محدثین امام احمد بن حنبل، امام یحییٰ بن معین، امام ابوحاتم رازی، امام ابوزرعہ رازی، امام بخاری، امام نسائی، امام یعقوب بن سفیان فسوی رحمها اللہ نے ’’ ضعیف و مجروح“ قرار دیا ہے۔
◈ امام دارقطنی رحمہ اللہ نے اسے ’’ متروک“ کہا ہے۔ [الضعفاء والمتروكون : 376]
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
منكر الرواية عن أبيه . ’’ اس کی اپنے باپ سے بیان کردہ روایات منکر ہیں۔ “ [المجروحين : 91/2]
یہ روایت بھی وہ اپنے باپ ہی سے بیان کر رہا ہے۔
——————

(33) عن عبد اللہ بن المثنٰي، عن أبان، عن أنس …. . [تاريخ دمشق لابن عساكر : 406/37]

تبصرہ :
یہ باطل سند ہے، کیونکہ :
① ابان بن ابوعیاش راوی بالاتفاق ’’ متروک الحدیث“ ہے۔
② ابوالولید ہاشم بن احمد بن مسرور راوی کے حالات زندگی نہیں مل سکے۔
③ عبیداللہ بن اسحاق بن سہل سنجاری کی توثیق درکار ہے۔
④ اس سند میں اور بھی خرابیاں ہیں۔
——————

(34) عن الحسن، عن أنس بن مالك …. . [المعجم الأوسط للطبراني : 146/8، ح : 9372]

تبصرہ :
یہ باطل سند ہے، کیونکہ :
① امام طبرانی رحمہ اللہ کا استاذ ہارون بن محمد بن منخل واسطی ’’ مجہول“ ہے۔
② موسیٰ بن سعد بصری راوی بھی ’’ مجہول“ ہے۔
③ حفص بن عمر عدنی راوی جمہور محدثین کے نزدیک سخت ’’ ضعیف“ ہے۔
◈ حافظ عراقی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ضعفه الجمهور . ’’ جمہور محدثین کرام نے اس کو ضعیف قرار دیا ہے۔ “ [تخريج أحاديث الإحياء : 4272]
◈ امام دارقطنی رحمہ اللہ نے اسے ’’ متروک“ کہا ہے۔ [العلل للدارقطني : 245/1]
④ امام حسن بصری ’’ مدلس“ ہیں اور انہوں نے سماع کی تصریح نہیں کی۔
یہ سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے منسوب حدیث کی تمام سندیں ہیں، جن کی حقیقت ہم نے واضح کر دی ہے۔
◈ ابن کثیر رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
فهٰذه طرق متعددة عن أنس بن مالك، وكل منها فيه ضعف ومقال .
’’ سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے مروی حدیث کی یہ مختلف سندیں ہیں۔ ان میں سے ہر ایک میں ضعف اور مقال ہے۔ “ [البداية والنهاية : 353/7]

◈ امام حاکم رحمہ اللہ نے جب اس روایت کے دفاع میں یہ کہا کہ :
وقد رواه عن أنس أكثر من ثلاثين نفسا .
’’ اس روایت کو سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے تیس سے زائد راویوں نے بیان کیا ہے۔ “

تو ان کے ردّ و جواب میں حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے کیا خوب کہا:
فصلهم بثقة يصح الإسناد إليه .
’’ ان میں سے کوئی ایک ثقہ راوی ایسا بتا دیں، جس تک صحیح سند پہنچ رہی ہو۔ “ [البداية والنهاية لابن كثير : 351/7]

حدیث سفینہ :
اس حدیث کی تین سندیں ہیں۔ ان میں سے ہر ایک کا حال پیش خدمت ہے :

عن مطير، عن ثابت البجلي، عن سفينة …. .
[مسند أبي يعلٰي، كما فى المطالب العالية : 3936، فضائل الصحابة لأحمد بن حنبل : 945، تاريخ دمشق لابن عساكر : 258/42]

تبصرہ :
یہ باطل سند ہے، کیونکہ :
اس کا راوی مطیر بن ابوخالد ’’ متروک“ ہے۔
◈ امام بخاری رحمہ اللہ اس کے بارے میں فرماتے ہیں :
ولا يصح حديثه . ’’ اس کی روایت صحیح نہیں ہے۔ “ [الضعفاء الكبير للعقيلي : 252/4، وسنده صحيح]
◈ امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
متروك الحديث . ’’ یہ متروک الحدیث راوی ہے۔ “ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 394/8]
◈ امام ابوزرعہ رازی رحمہ اللہ نے اسے ’’ ضعیف الحدیث“ کہا ہے۔ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 394/8]
◈ امام دارقطنی رحمہ اللہ نے الضعفاء والمتروكون [503] میں ذکر کیا ہے۔
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے بھی اسے ’’ متروک“ کہا ہے۔ [ميزان الاعتدال : 129/4، ت : 8597]
——————

عن بريدة بن سفيان، عن سفينة …. .
[مسند البزار : 3841، تاريخ دمشق لابن عساكر : 258/42، مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي : 175]

تبصرہ :
اس کی سند باطل ہے، کیونکہ :
بریدہ بن سفیان جمہور محدثین کے نزدیک ’’ ضعیف“ ہے۔
اس کے بارے میں :
◈ امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
فيه نظر . ’’ اس میں کلام ہے۔ “ [التاريخ الكبير : 141/2]
◈ امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
له بلية تحكٰي عنه . ’’ اس سے ایک جھوٹی روایت نقل کی جاتی ہے۔ “ [العلل : 1500]
◈ امام دارقطنی رحمہ اللہ نے اسے ’’ متروک“ کہا ہے۔ [الضعفاء والمتروكون : 134]
◈ امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ضعيف الحديث . ’’ یہ ضعیف الحدیث راوی ہے۔ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 424/3]
◈ امام نسائی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
هٰذا ليس بالقوي فى الحديث . ’’ یہ حدیث میں قوی نہیں ہے۔ “ [السنن الكبريٰ : 877]
◈ حافظ جوزجانی رحمہ اللہ کہتے ہیں :
رديئ المذهب . ’’ یہ غلط مذہب کا پیروکار ہے۔ “ [أحوال الرجال : 205]
——————

عن سليمان بن قرم، عن فطر بن خليفة، عن عبد الرحمٰن بن أبي نعم، عن سفينة …. .
[المعجم الكبير للطبراني : 82/7، ح : 6437]

تبصرہ :
یہ سند باطل ہے، کیونکہ :
اس کا راوی سلیمان بن قرم جمہور محدثین کے نزدیک سخت ’’ ضعیف“ ہے۔
◈ امام علی بن مدینی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
لم يكن بالقوي، وهو صالح .
’’ یہ نیک آدمی ہے، مگر حدیث میں قوی نہیں ہے۔ “ [سؤالات ابن أبي شيبة: 2471]
◈ امام یحییٰ بن معین رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ليس بشيئ، وهو ضعيف . ’’ یہ کچھ بھی نہیں، ضعیف راوی ہے۔ “ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 137/4، وسنده صحيح]
امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ نے اسے ليس بالمتين اور امام ابوزرعہ رازی نے ليس بذاك کہا ہے۔ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 137/4]
◈ امام نسائی رحمہ اللہ نے اسے ليس بالقوي کہا ہے۔ [الضعفاء والمتروكون : 251]
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
كان رافضيا غاليا فى الرفض، ويقلب الـأخبار .
’’ یہ غالی رافضی تھااور روایات کو الٹ پلٹ کر دیتا تھا۔ “ [المجروحين : 332/1]
◈ امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
لا أرٰي به بأسا، ولٰكنه كان يفرط فى التشيع .
’’ میں اس میں کوئی حرج محسوس نہیں کرتا، لیکن وہ تشیع میں افراط سے کام لیتا تھا۔ “ [الضعفاء الكبير للعقيلي : 136/2، وسنده صحيح]
◈ امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
إنه مفرط فى التشيع، ولسليمان أحاديث حسان أفرادات، وهو خير من سليمان بن أرقم بكثير .
’’ یہ غالی شیعہ تھا، سلیمان کی منفرد روایتیں اچھی ہیں، وہ سلیمان بن ارقم سے بہت بہتر ہے۔ “ [الكامل فى ضعفاء الرجال : 257/3]
◈ امام بخاری رحمہ اللہ نے اس سے تعلیقاً اور امام مسلم رحمہ اللہ نے متابعت میں روایت لی ہے۔
◈ حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے اسے ’’ ضعیف“ کہا ہے۔ [ميزان الاعتدال : 580/3، ت : 7671]
◈ حافظ ابن حجر رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
سيئ الحفظ، يتشيع . ’’ اس کا حافظہ خراب تھا اور یہ شیعہ تھا۔ “ [تقريب التهذيب : 2600]
لہٰذا یہ راوی ’’ ضعیف“ ہی ہے۔
——————
حديث ابن عباس :

[الضعفاء الكبير للعقيلي : 82/4، 83، المعجم الكبير للطبراني : 282/10، مناقب على بن أبي طالب لابن المغازلي :164، تاريخ دمشق لابن عساكر : 246/42، المناقب للخوارزمي : 50]

تبصرہ :
یہ سند باطل ہے، کیونکہ :
① اس میں سلیمان بن قرم ’’ ضعیف“ راوی موجود ہے۔
② محمد بن شعیب راوی کے بارے میں حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
لا يعرف . ’’ یہ مجہول راوی ہے۔ “ [ميزان الاعتدال : 580/3]
◈ حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے اسے ’’ مجہول“ کہا ہے۔ [لسان الميزان : 199/5]
طبرانی میں محمد بن سعید ہے یہ تصحیف (کتاب کی غلطی )ہے۔ صحیح عبارت محمد بن شعیب ہی ہے۔
◈ حافظ ہیثمی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ولم أعرفه . ’’ میں اسے نہیں جان پایا۔ “ [مجمع الزوائد : 126/9]
◈ حافظ ابن الجوزی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
هٰذا حديث لا يصح، محمد بن شعيب (سعيد) مجهول .
’’ یہ حدیث صحیح نہیں ہے، کیونکہ اس کی سند میں محمد بن شعیب (سعید) مجہول ہے۔ “ [العلل المتناهية : 229/1]
◈ امام عقیلی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
حديثه غير محفوظ . ’’ اس کی حدیث غیر محفوظ ہے۔ “ [الضعفاء الكبير : 82/4]
اس روایت کے بارے میں فرماتے ہیں :
الرواية فى هٰذا؛ فيها لين . ’’ اس روایت میں کمزوری ہے۔ “ [الضعفاء الكبير : 83/4]
——————
حدیث على :

عن عيسي بن عبد اللہ بن محمد بن عمر بن على بن أبي طالب، حدثني أبي، عن أبيه، عن جده، عن على …. . [تاريخ دمشق لابن عساكر : 245/42]

تبصرہ :
یہ جھوٹی روایت ہے، کیونکہ :
اس کے راوی عیسیٰ بن عبداللہ بن عمر کو :
◈ امام دارقطنی رحمہ اللہ نے ’’ متروک الحدیث“ کہا ہے۔ [سنن الدارقطني : 263/2]
◈ امام ابوحاتم رازی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
لم يكن بقوي الحديث .
’’ یہ حدیث میں قوی نہیں ہے۔ “ [الجرح والتعديل لابن أبي حاتم : 280/6]
◈ امام ابن حبان رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
يروي عن أبيه، عن آبائه أشيائ موضوعة، لا يحل الاحتجاج به، كأنه كان يهم ويخطئ، حتٰي كان يجيئ بالـأشيائ الموضوعة عن أسلافه، فبطل الاحتجاج بما يرويه لما وصفت .
’’ یہ اپنے آبا و اجداد سے من گھڑت روایتیں بیان کرتا ہے۔ اس کی بیان کردہ روایت کو دلیل بنانا جائز نہیں، کیونکہ یہ وہم اور خطا کا شکار تھا، یہاں تک کہ اس نے اپنے اسلاف سے موضوع روایتیں بیان کر ڈالیں۔ چنانچہ اس بنا پر اس کی روایات سے دلیل لینا باطل ہے۔ “ [المجروحين : 122/2]
نیز اسے [الثقات : 492/8] میں ذکر کرنے کے بعد فرماتے ہیں :
فى حديثه بعض المناكير . ’’ اس کی بعض روایتیں منکر ہیں۔ “
◈ امام حاکم رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
روٰي عن أبيه، عن آبائه أحاديث موضوعة .
’’ یہ اپنے والد کے واسطے سے اپنے اجداد سے من گھڑت روایتیں بیان کرتا ہے۔ “ [المدخل إلى الصحيح، ص : 170]
◈ امام ابونعیم اصبہانی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
روٰي عن أبيه، عن آبائه أحاديث مناكير، لا يكتب حديثه، لا شيئ .
’’ یہ اپنے والد کے واسطے سے اپنے اجداد سے منکر روایتیں بیان کرتا ہے، اس کی حدیث کو نہ لکھا جائے، اس کاکوئی اعتبارنہیں۔ “ [الضعفاء : 175]
◈ امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وعامة ما يرويه لا يتابع عليه .
’’ اس کی اکثر روایات منکر ہیں۔ “ [الكامل فى ضعفاء الرجال : 245/5]

جب امام حاکم رحمہ اللہ نے اس روایت کے بارے میں لکھا کہ :
صحت الرواية عن على . ’’ سیدنا علی رضی اللہ عنہ سے یہ روایت ثابت ہے۔ “ [المستدرك : 131/3]

تو حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے ان الفاظ میں ان کا ردّ کیا کہ :
لا، والله، ما صح شيئ من ذٰلك .
’’ اللہ کی قسم ! اس بارے میں کوئی روایت بھی صحیح نہیں ہے۔ “ [البداية والنهاية لابن كثير : 351/7]
——————
حدیث یعلیٰ بن مرۃ :
◈ ابن کثیر رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وقد روي من حديث يعلي بن مرة، والـإسناد إليه مظلم، وروي من حديث حبشي بن جنادة، ولا يصح أيضا، ومن حديث أبي رافع نحوه، وليس بصحيح .
’’ اس بارے میں یعلیٰ بن مرہ کی حدیث بھی مروی ہے، لیکن اس کی سند سخت ضعیف ہے۔ اسی طرح حبشی بن جنادہ کی حدیث بھی ہے، وہ بھی ثابت نہیں۔ ابورافع کی حدیث بھی مروی ہے اور وہ بھی صحیح نہیں۔ “ [البداية والنهاية : 354/7]
متن کا اضطراب :
اس حدیث کی سند کا حال تو آپ ملاحظہ فرما چکے ہیں کہ اس کی کوئی ایک بھی سند اصولِ محدثین کے مطابق پایہ صحت کو نہیں پہنچتی۔ صرف سند کا ہی مسئلہ نہیں، اس کے متن میں بھی اضطراب و اختلاف پایا جاتا ہے۔
① پہلا اختلاف یہ ہے کہ یہ کون سا پرندہ تھا ؟ مسندابویعلیٰ اور ابن عدی کی روایت میں حجل، ابن عساکر کی روایت، جو سیدنا علی رضی اللہ عنہ سے مروی ہے، اس میں حباریٰ، ابن المعازلی کی روایت، جو سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے، اس میں یعاقیب اور ابن المعازلی ہی کی ایک روایت میں نحامہ، جبکہ ابن عساکر کی ایک روایت میں دجاحۃ کا ذکر ہے۔
② پرندے کی تعداد میں بھی اختلاف ہے۔ بعض روایات میں اطیار بعض میں طوائر اور بعض میں نحامات کا ذکر ہے۔
③ اس میں بھی اختلاف ہے کہ پرندہ کس نے ہدیہ کیا تھا ؟ عقیلی اور طبرانی کی روایت میں سیدہ ام ایمن رضی اللہ عنہا کا ذکر ہے، ابن عساکر اور ابن المغازلی کی روایت میں انصار کی ایک عورت کا ذکر ہے۔ یہ بات تو طے ہے کہ سیدہ ام ایمن انصاریہ نہیں تھیں۔
اس پر سہاگہ یہ کہ اس روایت کو بلحاظ سند بہت سے ائمہ محدثین نے ’’ ضعیف“ قرار دیا ہے۔

محدثين كرام اور حديث طير :
◈ امام عقیلی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وهٰذا الباب؛ الرواية فيها لين وضعيف، ولا نعلم فيه شيئا ثابتا .
’’ اس بارے میں منقول تمام روایات میں کمزوری اور ضعف ہے۔ ہمارے علم کے مطابق اس سلسلے میں کچھ بھی ثابت نہیں۔ “ [الضعفاء الكبير : 46/1]
نیز فرماتے ہیں :
طرق هٰذا الحديث؛ فيها لين .
’’ اس حدیث کی سندوں میں کمزوری ہے۔ “ [الضعفاء الكبير : 189/4]
◈ امام بزار رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
روٰي عن أنس من وجوه، وكل من رواه عنه؛ فليس بالقوي .
’’ اس روایت کو سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے کئی سندوں کے ساتھ روایت کیا گیا ہے، البتہ سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے اسے بیان کرنے والے راویوں میں سے کوئی بھی قوی نہیں۔ “ [مسند البزار : 7848]
③ امام خلیلی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وما روٰي فى حديث الطير ثقة، رواه الضعفائ، مثل : إسماعيل ابن سليمان الـأزرق وأشباهه، ويرده جميع أئمة الحديث .
’’ حدیث ِ طیر کو کسی ایک بھی ثقہ راوی نے بیان نہیں کیا۔ اسے صرف ضعیف راوی بیان کرتے ہیں، جیسا کہ اسماعیل بن سلیمان ازرق اور اس سے ملتے جلتے دوسرے راوی ہیں۔ تمام محدثین نے اسے ردّ کیا ہے۔ “ [الإرشاد فى معرفة علماء الحديث : 420/1]
④ حافظ ابن الجوزی رحمہ اللہ، حافظ محمد بن طاہر مقدسی رحمہ اللہ سے نقل کرتے ہیں :
كل طرقه، أى حديث الطير، باطلة معلولة .
’’ حدیث طیر کی تمام سندیں باطل اور معلول ہیں۔ “ [العلل المتناهية : 223/1]
⑤ حافظ محمد بن ناصر سلامی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
حديث موضوع، وإنما جاء من سقاط أهل الكوفة، عن المشاهير والمجاهيل، عن أنس وغيره .
’’ یہ روایت من گھڑت ہے، کیونکہ اس کو ضعیف کوفی راویوں نے مشہور اور مجہول راویوں کے واسطے سے سیدنا انس رضی اللہ عنہ وغیرہ سے بیان کیا ہے۔ “ [المنتظم لابن الجوزي : 275/7]
⑥ خود حافظ ابن الجوزی رحمہ اللہ نے اس کی سولہ سندوں میں سے ہر ایک کی علت بیان کی اور فرمایا :
قد ذكره ابن مردويه من نحو عشرين طريقا؛ كلها مظلم، وفيها مطعن .
’’ ابن مردویہ نے اس روایت کو تقریباً بیس سندوں سے ذکر کیا ہے، مگر وہ تمام کی تمام سخت ضعیف ہیں اور ان میں خرابی موجود ہے۔ “ [العلل المتناهية : 233/1]
⑦ حافظ عراقی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وله طرق؛ كلها ضعيفة .
’’ اس کی کئی سندیں ہیں، لیکن سب کی سب ضعیف ہیں۔ “ [تخريج أحاديث الإحيائ، ص : 855]
⑧ شیخ الاسلام امام ابن تیمیہ رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
إن حديث الطائر من المكذوبات الموضوعات عند أهل العلم والمعرفة بحقائق النقل .
’’ حدیث ِ طیر محققین علما اور اہل فن محدثین کے نزدیک من گھڑت اور جھوٹی ہے۔ “ [منهاج السنة : 99/4، وفي نسخة : 371/7]
⑨ ابن کثیر رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
وهٰذا الحديث قد صنف الناس فيه، وله طرق متعددة، وفي كل منها نظر .
’’ اس حدیث پر لوگوں نے متعدد کتابیں لکھیں ہیں۔ اس کی بہت سی سندیں ہیں، لیکن ان میں سے ہرایک میں خرابی ہے۔ “ [البداية والنهاية : 351/7، 352]
نیز مذکورہ روایت کی بعض سندوں کو ذکر کرنے کے بعد فرماتے ہیں :
وفي جملة؛ ففي القلب من صحة هٰذا الحديث نظر، وإن كثرت طرقه .
’’ خلاصہ کلام یہ ہے کہ اگرچہ اس حدیث کے طرق بکثرت ہیں، مگر دل میں اس کی صحت محل نظر ہے۔ “ [البداية والنهاية : 351/7، 354]
⑩ علامہ دمیری رحمہ اللہ کہتے ہیں :
حديث الطير؛ رواه الطبراني وأبو يعلٰي والبزار من عدة طرق، كلها ضعيفة .
’’ حدیث ِ طیر کو امام طبرانی، ابویعلیٰ اور بزار رحمها اللہ نے متعدد سندوں سے بیان کیا ہے، لیکن وہ تمام ضعیف ہیں۔ “ [حياة الحيوان : 240/2]
⑪ علامہ شوکانی رحمہ اللہ، امام حاکم رحمہ اللہ کی تصحیح کے بارے میں فرماتے ہیں :
واعترض عليه كثير من أهل العلم .
’’ اکثر اہل علم نے امام حاکم رحمہ اللہ کے اسے صحیح کہنے پر اعتراض کیا ہے۔ “ [الفوائد المجموعة، ص : 382]
⑫ علامہ محمد بن یعقوب فیروز آبادی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
له طرق كثيرة؛ كلها ضعيفة .
’’ اس کی بہت سی سندیں ہیں، مگر وہ تمام کی تمام ضعیف ہیں۔ “ [الفوائد المجموعة للشوكاني، ص : 382]
⑬ اس حدیث کو ’’ ضعیف“ ثابت کرنے کے لیے علامہ ابوبکربرقانی رحمہ اللہ نے ایک ضخیم کتاب لکھی ہے۔ [البداية والنهاية لابن كثير : 354/7]

صحیح حدیث کی مخالفت :
حدیث ِ طیر ’’ ضعیف“ ہونے کے ساتھ ساتھ اس متفق علیہ صحیح حدیث کے خلاف بھی ہے، ملاحظہ فرمائیں :
❀ سیدنا عمرو بن عاص رضی اللہ عنہ کا بیان ہے :
فقلت : أى الناس أحب إليك؟ قال : ’عائشة‘، قلت : من الرجال؟ قال : ’أبوها‘، قلت : ثم من؟ قال : ’عمر‘، فعد رجالا، فسكت مخافة أن يجعلني فى آخرهم .
’’ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا : لوگوں میں سے آپ کو سب سے زیادہ محبوب کون ہے ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : عائشہ، پھر میں نے پوچھا: مردوں میں سے کون ہیں ؟ فرمایا : ان کے والد ( سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ )۔ میں نے عرض کیا : اس کے بعد۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : عمر۔ اس کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کئی اور آدمیوں کو شمار کیا۔ میں اس ڈر سے خاموش ہو گیا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم مجھے سب سے آخر میں ذکر کریں گے۔ “ [صحيح البخاري : 4358، صحيح مسلم : 2384]

ایک اور روایت :
اس میں کوئی شک نہیں کہ سیدنا علی بن ابوطالب رضی اللہ عنہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو محبوب رکھتے تھے اور اللہ و رسول کے ہاں بھی محبوب تھے۔ [صحيح البخاري : 4210، صحيح مسلم : 2406]
البتہ یہ کہنا کہ سیدنا علی رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو بالعموم سب سے زیادہ محبوب تھے، صحیح نہیں، بلکہ حقائق کا چہرہ مسخ کرنے کے مترادف ہے۔
حدیث ِ طیر کی حالت تو آپ جان چکے ہیں کہ وہ سرے سے ثابت ہی نہیں، لیکن بعض لوگ اس سلسلے میں ایک اور حدیث بھی پیش کرتے ہیں، چنانچہ ملاحظہ فرمائیں :
❀ سیدنا نعمان بن بشیر رضی اللہ عنہ سے مروی ہے :
استأذن أبو بكر على النبى صلى الله عليه وسلم، فسمع صوت عائشة عاليا، وهى تقول : والله، قد علمت أن عليا أحب إليك من أبي، فأهوٰي إليها أبو بكر ليلطمها، وقال : يا ابنة فلانة، أراك ترفعين صوتك علٰي رسول الله صلى الله عليه وسلم، فأمسكه رسول الله صلى الله عليه وسلم، وخرج أبو بكر مغضبا، فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم : يا عائشة، كيف رأيتني أنقذتك من الرجل؟ ثم استأذن أبو بكر بعد ذٰلك، وقد اصطلح رسول الله صلى الله عليه وسلم وعائشة، فقال : أدخلاني فى السلم، كما أدخلتماني فى الحرب، فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم : قد فعلنا .
’’ سیدنا ابوبکرصدیق رضی اللہ عنہ نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے اندر آنے کی اجازت طلب کی، تو سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کو بلند آواز سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے یہ کہتے ہوئے سنا۔ اللہ کی قسم ! مجھے معلوم ہے کہ آپ، علی رضی اللہ عنہ کے ساتھ میرے باپ کی نسبت زیادہ محبت کرتے ہیں۔ سیدنا ابوبکرصدیق رضی اللہ عنہ، سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کو طمانچہ رسید کرنے کے لیے بڑھے اور فرمایا : میں تیری آواز کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی آواز سے بلند ہوتے ہوئے سن رہا ہوں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ کو روک دیا۔ سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ غصے کی حالت میں وہاں سے چلے گئے۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے فرمایا : دیکھا، میں نے کیسے تمہیں تمہارے والد سے بچا لیا۔ بعد میں سیدنا ابوبکرصدیق رضی اللہ عنہ نے سے گھر آنے کی اجازت طلب کی، تو اس وقت تک آپ صلی اللہ علیہ وسلم اور سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کی صلح ہو چکی تھی۔ سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ نے عرض کیا : آپ دونوں مجھے بھی اپنی صلح میں بھی شریک کر لیجئیے، جس طرح اپنی ناراضگی میں شریک کیا تھا۔ اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : ہم نے ایسا کر لیا ہے۔ “ [مسند الإمام أحمد : 275/4، فضائل الصحابة لأحمد بن حنبل : 39، مسند البزار : 3225، شرح مشكل الآثار للطحاوي : 5309]
لیکن اس کی سند ’’ ضعیف“ ہے۔ اس کی سند سے ابواسحاق سیعد ’’ مدلس“ کا واسطہ گر گیا ہے، جو کہ سنن ابوداؤد [4999] میں موجود ہے۔ بلاشبہ یہ [المزيد فى متصل الأسانيد] ہے۔ ایسی صورت میں واسطے سے پہلے والا راوی واسطے کے بعد والے راوی سے سماع کی تصریح کر دے، تو شبہ اقطاع ختم ہو جاتا ہے، ورنہ نہیں۔ یونس بن ابواسحاق نے عیزار بن حریث سے سماع کی تصریح نہیں کی، لہٰذا شبہ اقطاع کی وجہ سے یہ سند ’’ ضعیف“ ہی ہے۔
بالفرض اس روایت کو صحیح تسلیم بھی کر لیا جائے، تو ثابت یہ ہو گاکہ کسی خاص موقعہ پر کسی خاص کام کے لیے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی نظر انتخاب سیدنا علی رضی اللہ عنہ پر پڑ گئی تھی اور اسی خاص موقعہ کی طرف سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا نے اس حدیث میں اشارہ کیا ہے۔ سیدہ کے ان الفاظ سے یہ نتیجہ اخذ کرنا درست نہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے نزدیک سیدنا علی رضی اللہ عنہ بالعموم سیدنا ابوبکرصدیق رضی اللہ عنہ سے زیادہ محبوب تھے۔
شارحِ صحیح بخاری، حافظ ابن حجر رحمہ اللہ مذکورہ دونوں احادیث میں جمع وتطبیق ان الفاظ میں فرماتے ہیں :
ويمكن الجمع باختلاف جهة المحبة؛ فيكون فى حق أبي بكر علٰي عمومه بخلاف على .
’’ محبت کے مختلف پہلوؤں کے اعتبار سے ان دونوں حدیثوں میں جمع و تطبیق کی صورت ممکن ہے۔ سیدنا ابوبکرصدیق رضی اللہ عنہ عمومی طور پر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو زیادہ محبوب تھے، جبکہ سیدنا علی رضی اللہ عنہ کسی خاص موقعہ پر۔ “ [فتح الباري شرح صحيح البخاري : 127/7]

الحاصل :
نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم مردوں میں سب سے زیادہ سیدنا ابوبکرصدیق رضی اللہ عنہ ہی کو محبوب رکھتے تھے، تب ہی تو آپ رضی اللہ عنہ کو پہلا خلیفہ منتخب کیا گیا۔ اس حقیقت کا سیدنا علی رضی اللہ عنہ کو بھی اعتراف تھا کہ امت کے سب سے بہتر فرد سیدنا ابوبکرصدیق رضی اللہ عنہ ہیں۔ سیدنا علی رضی اللہ عنہ سے یہ قطعاً ثابت نہیں کہ انہوں نے خود کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا سب سے محبوب خیال کر کے اپنے آپ کو خلافت کا اول حقدار قرار دیا ہو۔
دیگر صحابہ کرام بھی یہی سمجھتے تھے کہ سیدنا ابوبکرصدیق رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو سب سے زیادہ محبوب تھے۔ اس حوالے سے دلائل کا ذکر طوالت کا باعث ہو گا۔
یہاں یہ بھی یاد رہے کہ جملہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم سے محبت ہمارے ایمان کا جزوِ لازم ہے۔ دلائل کے ذریعے صحابہ کرام کے فضائل میں باہمی تقابل کسی کی تنقیص کا سبب نہیں بنتا۔ ہم سیدنا ابوبکرصدیق رضی اللہ عنہ سے بھی محبت کرتے ہیں اور سیدنا علی مرتضیٰ رضی اللہ عنہ سے بھی۔

 

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.