جھوٹ بولنے والوں کا انجام قرآن و احادیث کی روشنی میں

 از    April 6, 2014

آیت نمبر
إِنَّمَا يَفْتَرِي الْكَذِبَ الَّذِينَ لَا يُؤْمِنُونَ بِآيَاتِ اللَّـهِ وَأُولَـئِكَ هُمُ الْكَاذِبُونَ [16-النحل:105]
ترجمہ : ”جھوٹ افتراء تو وہی لوگ کیا کرتے ہیں جو خدا کی آیتوں پر ایمان نہیں لاتے۔ اور وہی جھوٹے ہیں.“

آیت نمبر
فَاجْتَنِبُوا الرِّجْسَ مِنَ الْأَوْثَانِ وَاجْتَنِبُوا قَوْلَ الزُّورِ [22-الحج:30]
ترجمہ : ”تو بتوں کی پلیدی سے بچو اور جھوٹی بات سے اجتناب کرو۔“

آیت نمبر
أَلَا لِلَّـهِ الدِّينُ الْخَالِصُ وَالَّذِينَ اتَّخَذُوا مِنْ دُونِهِ أَوْلِيَاءَ مَا نَعْبُدُهُمْ إِلَّا لِيُقَرِّبُونَا إِلَى اللَّـهِ زُلْفَى إِنَّ اللَّـهَ يَحْكُمُ بَيْنَهُمْ فِي مَا هُمْ فِيهِ يَخْتَلِفُونَ إِنَّ اللَّـهَ لَا يَهْدِي مَنْ هُوَ كَاذِبٌ كَفَّارٌ [39-الزمر:3]
ترجمہ : ”دیکھو خالص عبادت خدا ہی کے لئے (زیبا ہے) اور جن لوگوں نے اس کے سوا اور دوست بنائے ہیں۔ (وہ کہتے ہیں کہ) ہم ان کو اس لئے پوجتے ہیں کہ ہم کو خدا کا مقرب بنا دیں۔ تو جن باتوں میں یہ اختلاف کرتے ہیں خدا ان میں ان کا فیصلہ کردے گا۔ بےشک خدا اس شخص کو جو جھوٹا ناشکرا ہے ہدایت نہیں دیتا۔“

آیت نمبر
يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّـهَ وَكُونُوا مَعَ الصَّادِقِينَ [9-التوبة:119]
ترجمہ : ”اے اہل ایمان! خدا سے ڈرتے رہو اور سچ بولنے والوں کے ساتھ رہو۔“

حدیث نمبر
عن عبد الله رضى الله عنه عن النبى صلى الله عليه وسلم قال : ‏‏‏‏ ”إن الصدق يهدي إلى البر وإن البر يهدي إلى الجنة وإن الرجل ليصدق حتى يكون صديقا وإن الكذب يهدي إلى الفجور وإن الفجور يهدي إلى النار وإن الرجل ليكذب حتى يكتب عند الله كذابا. [صحیح بخاری، حدیث 6094]
ترجمہ : ”عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : ”بلاشبہ سچ آدمی کو نیکی کی طرف بلاتا ہے اور نیکی جنت کی طرف لے جاتی ہے اور ایک شخص سچ بولتا رہتا ہے یہاں تک کہ وہ صدیق کا لقب اور مرتبہ حاصل کر لیتا ہے اور بلاشبہ جھوٹ برائی کی طرف لے جاتا ہے اور برائی جہنم کی طرف اور ایک شخص جھوٹ بولتا رہتا ہے، یہاں تک کہ وہ اللہ کے یہاں بہت جھوٹا لکھ دیا جاتا ہے۔“

حدیث نمبر
عن ابي هريرة ان رسول الله صلى الله عليه وسلم قال : ‏‏‏‏ ”آية المنافق ثلاث : ‏‏‏‏ إذا حدث كذب وإذا وعد اخلف وإذا اؤتمن خان. [صحيح بخاري حديث 6095]
ترجمہ : ”ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : منافق کی تین نشانیاں ہیں، جب بولتا ہے جھوٹ بولتا ہے، جب وعدہ کرتا ہے تو وعدہ خلافی کرتا ہے اور جب اسے امین بنایا جاتا ہے تو خیانت کرتا ہے۔“

حدیث نمبر
عن ابي امامة قال : ‏‏‏‏ قال رسول الله صلى الله عليه وسلم : ‏‏‏‏ انا زعيم ببيت فى ربض الجنة لمن ترك المراء وإن كان محقا وببيت فى وسط الجنة لمن ترك الكذب وإن كان مازحا وببيت فى اعلى الجنة لمن حسن خلقه“ . [ابوداؤد حديث 4800، و قال الشيخ الألباني حسن]
ترجمہ : ”ابوامامہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : میں اس شخص کے لیے جنت کے اندر ایک گھر کا ضامن ہوں جو لڑائی جھگڑا ترک کر دے، اگرچہ وہ حق پر ہو، اور جنت کے بیچوں بیچ ایک گھر کا اس شخص کے لیے جو جھوٹ بولنا چھوڑ دے اگرچہ وہ ہنسی مذاق ہی میں ہو، اور جنت کی بلندی میں ایک گھر کا اس شخص کے لیے جو خوش خلق ہو۔“

حدیث نمبر
حدثنا مسدد بن مسرهد حدثنا يحيى عن بهز بن حكيم قال : ‏‏‏‏ حدثني ابي عن ابيه قال : ‏‏‏‏ سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول : ‏‏‏‏ ”ويل للذي يحدث فيكذب ليضحك به القوم ويل له ويل له. [سنن الترمذی/الزہد 10، 2315، تحفۃ الأشراف : 11381، وقد أخرجہ : مسند احمد 5/2، 5، 7، سنن الدارمی/الاستئذان 66، 2744 حسن]
ترجمہ : ”معاویہ بن حیدہ قشیری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا : تباہی ہے اس کے لیے جو بولتا ہے تو جھوٹ بولتا ہے تاکہ اس سے لوگوں کو ہنسائے، تباہی ہے اس کے لیے، تباہی ہے اس کے لیے۔“

حدیث نمبر
حدثنا عبد الله بن مسلمة عن مالك عن ابي الزناد عن الاعرج عن ابي هريرة ان رسول الله صلى الله عليه وسلم قال : ‏‏‏‏“ إياكم والظن فإن الظن اكذب الحديث ولا تحسسوا ولا تجسسوا۔“ [صحيح البخاري/النكاح 45، 5143، الأدب 57، 6066، الفرائض 2، 6776، صحيح مسلم/البر والصلة 6، 2563، سنن الترمذي/البر والصلة 56، 1688، (تحفة الأشراف : 13806، وقد أخرجه : موطا امام مالك/حسن الخلق 6، 15، مسند احمد 2/245، 312، 342، 465، 470، 482، صحيح]
ترجمہ : ”ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : ظن و گمان کے پیچھے پڑنے سے بچو یا بدگمانی سے بچو، اس لیے کہ بدگمانی سب سے بڑا جھوٹ ہے، نہ ٹوہ میں پڑو اور نہ جاسوسی کرو۔“

حدیث نمبر
حدثنا نصر بن على اخبرنا سفيان عن الزهري. ح وحدثنا مسدد حدثنا إسماعيل. ح وحدثنا احمد بن محمد بن شبويه المروزي حدثنا عبد الرزاق اخبرنا معمر عن الزهري عن حميد بن عبد الرحمن عن امه ان النبى صلى الله عليه وسلم قال : ‏‏‏‏ ”لم يكذب من نمى بين اثنين ليصلح ”، وقال احمد بن محمد ومسدد : ‏‏‏‏ ليس بالكاذب من اصلح بين الناس فقال : ‏‏‏‏ خيرا او نمى خيرا. [صحيح البخاري/الصلح 2، 2692، صحيح مسلم/البر والصلة 37، 2605، سنن الترمذي/البر والصلة 26، 1938، (تحفة الأشراف : 18535، 20196، وقد أخرجه : مسند احمد 6/403، صحيح]
ترجمہ : ”ام حمید بن عبدالرحمٰن (ام کلثوم) رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : اس نے جھوٹ نہیں بولا جس نے دو آدمیوں میں صلح کرانے کے لیے کوئی بات خود سے بنا کر کہی۔ احمد بن محمد اور مسدد کی روایت میں ہے، وہ جھوٹا نہیں ہے : جس نے لوگوں میں صلح کرائی اور کوئی اچھی بات کہی یا کوئی اچھی بات پہنچائی۔“

حدیث نمبر
حدثنا الربيع بن سليمان الجيزي حدثنا ابو الاسود عن نافع يعني ابن يزيد عن ابن الهادي ان عبد الوهاب بن ابي بكر حدثه عن ابن شهاب عن حميد بن عبد الرحمن عن امه ام كلثوم بنت عقبة قالت : ‏‏‏‏ ”ما سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يرخص فى شيء من الكذب إلا فى ثلاث كان رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول : ‏‏‏‏ لا اعده كاذبا : ‏‏‏‏ الرجل يصلح بين الناس، يقول القول ولا يريد به إلا الإصلاح والرجل يقول فى الحرب والرجل يحدث امراته والمراة تحدث زوجها. [ابوداؤد حديث 4921، تحفة الأشراف : 18353 و قال الشيخ الألباني صحيح]
ترجمہ : ”ام کلثوم بنت عقبہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو کسی بات میں جھوٹ بولنے کی اجازت دیتے نہیں سنا، سوائے تین باتوں کے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے تھے : میں اسے جھوٹا شمار نہیں کرتا، ایک یہ کہ کوئی لوگوں کے درمیان صلح کرائے اور کوئی بات بنا کر کہے، اور اس کا مقصد اس سے صرف صلح کرانی ہو، دوسرے یہ کہ ایک شخص جنگ میں کوئی بات بنا کر کہے، تیسرے یہ کہ ایک شخص اپنی بیوی سے کوئی بات بنا کر کہے اور بیوی اپنے شوہر سے کوئی بات بنا کر کہے۔“
اللہ ہمیں ہمیشہ سچ بولنے کی توفیق دے اور دنیا و آخرت میں سچوں کا ساتھ عطا فرما، آمین

 

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.