تین نمازیں

 از    June 25, 2015

۱-شبِ زفاف کی نماز:

  ابو سعید مولیٰ ابی اسید بیان کرتے ہیں

تزوّجت امرأۃ ۔ فکان عندی لیلۃ زفاف امرأتی نفر من أصحاب رسول اللہ صلّی اللہ علیہ وسلّم  ، فلمّا حضرت ت الصّ لاۃ أراد أبو ذرَ أن ینقّدم ، فیصلّی ، فجبذہ حذیفۃ وقال: ربّ البیت أحق بالصّ لاۃ ، فقال: لأبی مسعود : أکزلک ؟ قال: نعم ، قال أبو سعد: فتقدّ مت، فصلّیت بھم وأنا یو مئذ عبد، فأمر انی اذاأتیت با مرأتی أن أصلّی رکعتین ، وأن تصلّی خلفی ان فعلت۔۔   

  ” میں نے ایک عورت سے شادی کی، رخصتی کی رات میرے پاس بہت سے صحابہ کرام موجود تھے، جب نماز کا وقت آیا تو ابو ذر ؓ نے چاہا کہ آگے بڑھ کر نماز پڑھائیں ، لیکن حذیفہ ؓ نےانہیں کھینچ لیا اور فرما یا، گھر والا نماز پڑھانے کا زیادہ مستحق ہے، پھر انہوں نے ابو مسعود ؓ سے پوچھا، کیا ایسے ہی ہے؟ انہوں نے فرمایا، ہاں۔ ابو سعید ؓ بیان کرتے ہیں کہ میں نے آگے بڑھ کر نماز پڑھائی ، حالانکہ میں اس وقت غلام تھا، ابوذرّ اور حذیفہ ؓ نے مجھے حکم دیا کہ جب میں اپنی بیوی کے پاس جاؤ ں تو دو رکعتیں ادا کروں اور اگر میں ایسا کروں تو میری بیوی بھی میری اقتدار میں نماز پڑھے۔” (الا وشط لابن المنذر: ۱۵۶/۴، وسندۂ صحیح ، ومصنف ابن ابی شیۃ: ۲۱۷/۲ مختصرا)

فائدہ:       سید نا سلمان فارسی ؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرما یا:

اذا تزوّ ج أحد کم ، فکان لیلۃ البناء، فلیصلّ رکعتین ولیأ مو ھا، فلتصلّ خلفہ، فانّ اللہ عزّ و جلّ جاعل فی البیت خیراً۔      

   ” جب تم میں سے کوئی زفاف کی رات دورکعتیں ادا کرے اور بیوی کو بھی اپنی اقتدا میں یہ نماز پڑھنے کا حکم دے ، اللہ تعالیٰ گھر میں خیرو برکت نازل کرے گا۔”( کشف الاشتار: ۱۶۹/۲، ح ۱۴۴۷، الکامل لابن عدی: ۲۳۳/۲)

اس کی سند ” ضعیف” ہے، اس کا راوی حجاج بن فروخ ” ضعیف” ہے حافظ ذہبی ؒ لکھتے ہیں :

ھذا حدیث منکر جدّا۔        ّ یہ حد یث سخت منکر ہے۔ ّ ( میزان الاعتدال: ۴۶۴/۱)

۲-خواب دیکھنے کی نماز:

سید نا  ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرما یا:

اذا  رأی أحد کم رؤیا یکر ھھا ، فلیصلّ رکعتین ، ولا یخبر بھا أحد ا، فانّھا لن تضرّہ۔ 

” جب تم میں سے کوئی ناپسند دیدہ خواب دیکھے تو دو رکعتیں ادا کرے اور اس کے بارے میں کسی کو نہ بتا ئے ، وہ اسے نقصان نہیں دے گا۔ ” (مسند الحمید ی : ۱۱۴۵، وسندۂ صحیح)

۳ ۔  قبول ِ اسلام کی نماز:

  سید نا ابو ہریرہ ؓ سے روایت ہے:

   أنّ ثمامۃ الحنفیّ أسلم فأمرہ أن یغتسل ، فاغتسل وصلّی رکعتین ، فقال النّبیّ صلّی اللہ علیہ وسلمّ : لقد حسن اسلام أخیکم۔ 

” ثمامہ حنفی ؓ مسلمان ہوئے توآپ ﷺ نے انہیں غسل کرنے کا حکم دیا ، انہوں نے غسل کیا اور دو رکعت نماز ادا کی ، پھرآپ ﷺ نے فرما یا، تمہارے بھائی کا اسلام بہترین ہوگیا ہے۔” ( مصنف عبد الرزاق: ۳۱۸/۱، ح ۱۹۲۲۶، وسندۂ صحیح)

اس حد یث کو امام ابن الجارود(۱۵) اور امام ابنِ خزیمہ (۲۵۳) ؒ نے ” صحیح ” کہا ہے۔

ٹیگ :  

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

ٹویٹر پر فالو کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.