تکبیرات عیدین میں رفع یدین کا ثبوت

 از    July 25, 2014

امام اہل سنت، امام احمد بن حنبل رحمہ  اللہ (متوفی ۲۴۱ھ) فرماتے ہیں:
‘‘حدثنا یعقوب: حدثنا ابن أخي ابن شھاب عن عمہ: حدثنی سالم بن عبداللہ أن عبداللہ قال، کان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم إذا قام إلی الصلوۃ یرفع یدیہ، حتی إذا کانتا حذومنکبیہ  کبّر، ثم إذا أرادأن یرکع رفعھما حتی یکونا حذو منکبیہ ، کبر و ھما کذلک، رکع، ثم إذا أراد إن یرفع صلبہ رفعھما حتی یکونا حذو منکبیہ، ثم قال بسمع اللہ لمن حمدہ، ثم یسجد، ولا یرفع یدیہ فی السجود، و یرفعھما فی کل رکعۃ و تکبیرۃ کبّر ھا قبل الرکوع ، حتی تنقضي صلاتہ’’
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب نماز کے لئے کھڑے ہوتے تو رفع یدین کرتے حتی  کہ آپ کے ہاتھ آپ کے کندھوں کے برابر ہو جاتے،آپ (صلی اللہ علیہ وسلم )تکبیر کہتے، پھر جب آپ رکوع کا ارادہ کرتے تو رفع یدین کرتے حتی کہ آپ کے دونوں ہاتھ کندھوں کے برابر ہوتے۔ آپ تکبیر کہتے اور دونوں ہاتھ اسی طرح ہوتے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم رکوع کرتے، پھر جب آپ اپنی پیٹھ اُٹھانے کا ارادہ کرتے تو رفع یدین کرتے حتی کہ آپ کے ہاتھ کندھوں کے برابر ہوتے۔ پھر آپ (صلی اللہ علیہ وسلم) فرماتے: سمع اللہ لمن حمدہ پھر آپ سجدہ کرتے اور سجدوں میں رفع یدین نہ کرتے۔ آپ ہر رکعت میں رکووع سے پہلے ہر تکبیر میں رفع یدین کرتے، یہاں تک کہ آپ کی نماز پوری ہوجاتی۔ (مسند احمد ج ۲ص۱۳۳ ، ۱۳۴ح۶۱۷۵ و الموسوعۃ الحدیثیہ ج ۱۰ ص ۳۱۵)

سند کی بحث

یہ سند حسن لذاتہ، صحیح لغیرہ ہے۔

 شیخ محمد ناصر الدین الالبانی رحمہ اللہ اس حدیث کے بارے میں فرماتے ہیں: ‘‘ ھذا سند صحیح علی شرط الشیخین’’ اور یہ سند بخاری و مسلم کی شرط پر صحیح ہے(ارواء الغلیل ج ۳ص۱۱۳ح ۶۴۰) اسے امام عبداللہ بن علی بن الجارود النیسا بوری رحمہ اللہ(متوفی ۳۰۷ھ) نے اپنی کتاب‘‘المتنقیٰ ’’ میں یعقوب بن ابراہیم بن سعد کی سند سے روایت کیا ہے(ح۱۷۸)

حافظ ذہبی رحمہ اللہ(متوفی ۷۴۸ھ) فرماتے ہیں کہ:
‘‘کتاب المنتقی فی السنن مجلد و احد فی الأحکام، لا ینزل فیہ عن رتبۃ الحسن أبداً إلا فی لنا در فی أحادیث یختلف فیھا اجتھاد النقاد’’ کتاب المنتقیٰ فی السنن، احکام میں ایک مجلد ہے ، اس کی حدیثیں حسن کے درجے سے کبھی نہیں گرتیں ، سوائے نادر احادیث کے جن میں ناقدین کی کوشش میں اختلاف ہوتا ہے (سیر اعلام النبلاء ج ۱۴ص ۲۳۹)

اشرف علی تھانوی دیوبندی صاحب ایک حدیث کے بارے میں لکھتے ہیں:
‘‘وأورد ھذا الحدیث ابن الجارود فی المنتقی فھو صحیح عندہ فإنہ لا یأتي إلا بالصحیح کما صرح بہ السیوطي فی دیباجۃ جمع الجوامع’’(ترجمہ ازناقل: ابن الجارود نے یہ حدیث منتقی میں درج کی ہے۔ پس یہ ان کے نزدیک صحیح ہے کیونکہ وہ صرف روایتیں ہی لاتے ہیں جیسا کہ سیوطی نے جمع الجوامع کے دیباچہ میں لکھا ہے ) دیکھئے بو ادرالنوادر(ص۱۳۵)

یعقوب بن ابراہیم کی سند سے یہی روایت امام دارقطنی(متوفی ۳۸۵ ھ) نے بیان کی ہے(سنن الدار قطنی ۱؍۲۸۹ح۱۱۰۴)

اب اس حدیث کے راویوں کی توثیق پیش خدمت ہے۔

۱:        یعقوب بن ابراہیم بن سعد=ثقۃ فاضل ؍من رجال الستۃ (تقریب التہذیب:۷۸۱۱)
۲:        محمد بن عبداللہ بن مسلم، ابن اخی الزھری=صدوق حسن الحدیث، وثقہ الجمہور ؍من رجال الستۃ۔

ابن اخی الزھری کے بارے میں جرح و تعدیل کا مختصر جائزہ درج ذیل ہے۔

جارحین اور ان کی جرح: ابن اکی الزھری پر درج ذیل محدچین کی جرح منقول ہے۔

۱:        یحیی بن معین                  [ضعیف]
۲:        ابو ھاتم الرازی       [لیس بقوي یکتب حدیثہ]
۳:       العقیلی                        [ذکرہ فی الضعفاء]
۴:       ابن حبان            [ردئي الحفظ ، کثیر الوھم، یخطئ عن عمہ فی الروایات إلخ]
۵:       الدارقطنی           [ضعیف]
۶:        النسائی                        [لیس بذلک القوي، عندہ غیر ماحدیث منکر عن الزھري](؟)
                                        ملخصاً من تہذیب التہذیب(دارالفکر۹؍۲۴۸ ، ۲۴۹)وغیرہ۔

ابن اخی الزھری کی توثیق درج ذیل محدثین سے منقول ہے۔

۱:        ابن عدی            [ولم أربحدیثہ بأ ساً إذا روی عنہ ثقۃ]                   (الکامل۷/۳۶۳)
۲:        البخاری              [احتج بہ فی صحیحہ]
۳:       مسلم                          [احتج بہ فی صحیحہ، صحیح مسلم:۱۴۴۹وترقیم دارالسلام۳۵۸۹]
۴:       الساجی              [صدوق، تفرد عن عمہ بأ حادیث لم یتابع علیھا](تہذیب:۹/۲۴۹)
۵:       الذھبی              [صدوق صالح الحدیث وقد انفرد عن عمہ بثلاثۃ أحادیث](میزان:۷۷۴۳)
۶:        ابن حجر              [صدوق لہ أوھام]          (تقریب:۶۰۴۹)
۷:       الترمذی             [صحح لہ]        (الترمذی:۱۱۸۸)
۸:       البوصیری            [صحح لہ]        (زوائد ابن ماجہ:۱۳۹۷)
۹:        ابن الجارود           [روی لہ فی المنتقی]      (المنتقی:۱۷۸)
۱۰:       ابو نعیم الاصبہانی      [روی لہ فی صحیحہ/المستخرج]  (المستخرج:۳/۱۲۰ح۲۳۵۶)
۱۱:       ابو عوانہ              [روی لہ فی صحیحہ]      (المستخرج:۲/۳۳۱)
۱۲:       الضیاء المقدسی                  [روی لہ فی المختارۃ]      (المختارہ:۶/۲۴۲ح۲۲۵۸)
۱۳:      البغوی                        [صحح لہ]                            (شرح السنۃ:۱۱/۸۸ح۲۷۱۵)
۔:        ابو داود                        [ثقۃ]                                  (اس کا راوی ابو عبید الآجری مجہول ہے)
۔:        احمد بن حنبل         [یثني علیہ]                         (اس کا راوی ابو عبید الآجری مجہول ہے)
۔:        یحییٰ بن معین                  [یثني علیہ]               (اس کا راوی ابو عبید الآجری مجہول ہے)
ملخصاً من تہذیب التہذیب (۹؍۲۷۹ ، ۲۸۰)وغیرہ۔

اس تفصیل سے معلوم ہوا  کہ جمہور محدچین کے نزدیک ابن اخی الزھری ثقہ وصدوق، صحیح الحدیث و حسن الحدیث ہے۔ یاد رہے کہ ثقہ و صدوق راوی کی جن روایات میں وہم و خطاء بذریعہ محدچین ثابت ہو جائے تو وہ روایتیں مستثنیٰ ہو کر ضعیف ہوجاتی ہیں۔ مثلاً ابن اخی الزھری کی ‘‘فانتھی الناس عن القرأہ معہ’’ والی روایت کی سند میں غلطی اور وہم ہے، دیکھئےمسند احمد(۵/۳۴۵ح۲۲۹۲۲ الموسوعۃ الحدیثیہ مع التخریج) و کتاب القرأت للبیھقی (۳۲۵ ، ۳۲۶)

فائدہ: ابن اخی الزھری کی عن الزھری عن سالم عن ابیہ والی سند صحیح بخاری (۵۵۷۴) و صحیح مسلم (۴/۱۴۷۱) میں موجود ہے۔

تنبیہ :    ہر تکبیر کےساتھ رفع یدین والی روایت مذکور میں ابن اخی الزھری کی متابعت محمد بن الولید الزبیدی نے کر رکھی ہے۔ جیسا کہ آگے آ رہا ہے۔

۳:       محمد بن مللم الزھری=متفق علی جلالتہ و اتقانہ/من رجال الستۃ(التقریب:۶۲۹۶)
امام زہری نے سماع کی تصریح کر دی ہے لہذا اس روایت میں تدلیس کا الزام مردود ہے۔

۴:       سالم بن عبداللہ بن عمر=أحد الفقھاء السبعۃ و کان ثبتاً عابد اًفا ضلاً من رجال الستۃ (التقریب:۲۱۷۶)

۵:       عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ=صحابی مشہور/من رجال الستۃ (التقریب:۳۴۹۰)

اس تفصیل سے معلوم ہوا کہ یہ روایت ابن اخی الزھری کی وجہ سے حسن لذاتہ (یعنی حجت و مقبول ) ہے۔

اب اخی الزھری کی متابعت

ابن اخی الزھری رحمہ اللہ رفع یدین والی اس روایت میں تنہا راوی نہیں ہیں بلکہ (محمد بن الولید) الزبیدی(ثقۃ ثبت من کبار أصحاب الزھري/من رجال البخاري و مسلم و أبي داودو النسائي وابن ماجہ/التقریب:۲۳۷۶)نے ان کی متابعت تامہ کر رکھی ہے لہذا ابن اخی الزھری پر اس روایت میں اعتراض سرے سے فضول ہےو الحمد للہ۔

الزبیدی کی متابعت والی روایت سنن ابی داود (۷۲۲) سنن الدار قطنی(ص/۲۸۸ح۱۰۹۸) و السنن الکبری للبیھقی (۳/۲۹۲ ، ۲۹۳) میں موجود ہے۔ الزبیدی سے روایت بقیہ بن الولید نے بیان کی ہے اور بقیہ سے ایک جماعتنے اسے روایت کیا ہے۔

ابن الترکمانی نے مخالفت برائے مخالفت کا مظاہرہ کرتے ہوئے بقیہ بن ولید پر ابن حبان ، ابو مسہر اور سفیان بن عیینہ کی جرح نقل کی ہے(الجوہر النقی۳/۲۹۲ ، ۲۹۳)جس کا جواب کچھ تفصیل سے عرض ہے۔۔بقیہ بن الولید الحمصی رحمہ اللہ(التحقیقات النقیۃ فی توثیق بقیۃ)  

اس مضمون میں راوی حدیث بقیۃ بن الولید رحمہ اللہ کے بارے میں محدثین کرام کی جرح و تعدیل کا مختصر جائزہ پیش خدمت ہے۔

بقیہ کے بارے میں مروی جرح درج ذیل ہے۔

۱:        سفیان بن عیینہ                 [لا تسمعو امن بقیۃ۔۔۔إلخ]
۲:        العقیلی                                  [ذکرہ فی الضعفاء]
۳:       ابو حاتم الرازی                  [لایحتج بہ]
۴:       ابو مسہر الغسانی                  [بقیۃ، أحادیثہ لیست نقیۃ فکن منھا علی تقیۃ]
۵:       ابن خزیمہ           [لا أحتج ببقیۃ]
۶:        الجوز جانی                      [و بقیۃ ضعیف الحدیث، لایحتج بحدیثہ]
۷:       عبدالحق الاشبیلی               [لا یحتج بہ]
۸:       ابن القطان الفاسی               ۔۔۔۔۔۔۔۔
۹:        الذہبی                                  ۔۔۔۔۔۔۔۔
۱۰:       ابن حزم                       [ضعیف]
۱۱:       البیہقی                                  [أجمعوا علی أن بقیۃ لیس بحجۃ]
۔:        الساجی              [فیہ اختلاف]
۔:        الخلیلی                         [اختلفوا فیہ]
ملخصاً من تہذیب التہذیب (۱/۴۷۴ ۔ ۴۷۸)وغیرہ

الساجی اور الخلیلی کا کلام تو جرح ہی نہیں ہے۔ بعض دوسرے علماء سے بھی بقیہ کی مُدلَّس (عن والی) روایات اور مجہولین و ضعفاء سے روایات پر جرح منقول ہے، اس جرح کا کوئی تعلق بقیہ کی عدالت اور ضبط (حافظے ) سے  نہیں ہے۔

بقیہ کی توثیق درج ذیل ہے۔

۱:        ابو اسحاق الفزاری                         [خذوا عن بقیۃ ماحدثکم عن الثقات] (الترمذی:۲۸۵۹)
۲:        عبداللہ بن مبارک              [صدوق اللسان] (صحیح مسلم:۴۳دارالسلام)
۳:       ابوزرعہ الرازی                           [وأذا حدث عن الثقات فھو ثقۃ](الجرح و التعدیل:۲ ؍۴۳۵)
۴:       یحییٰ بن معین                            [ثقۃ]    (تاریخ عثمان الدارمی: ۱۹۰)
۵:       العجلی                                    [ثقۃ ماروی عن المعروفین] (تاریخ العجلی:۱۶۰)
۶:        مسلم                          [أخرج لہ فی صحیحہ] (صحیح مسلم:۱۰۱ ؍۱۴۲۹فواد عبدالباقی)
۷:       یعقوب بن شیبہ       [تاریخ بغداد:۷؍۱۲۶]
۸:       الخطیب البغدادی     [وکان صدوقاً](تاریخ بغداد:۷ ؍۱۲۳)
۹:        محمد بن سعد [وکان ثقۃ فی روایتۃ عن الثقات](الطبقات:۷ ؍۴۶۹)
۱۰:       الترمذی   [صحح لہ فی سننہ] (الترمذی:۱۲۳۵ ، ۱۶۶۳)
۱۱:       ابن عدی  [إذا روی عن الشامین فھو ثبت](الکامل:۲ ؍۲۷۶)
۱۲:       ابن شاہین [ذکرہ فی الثقات](الثقات:۱۳۹)
۱۳:      احمد بن حنبل         [وإذا حدث بقیۃ عن المعروفین مثل بحیربن سعد قبل](الضعفاء للعقیلی:۱ ؍۱۶۲)
۱۴:      ابن حبان  [فرأیتہ ثقۃ مأموناً ولکنہ کان مدلساً](المجروحین:۱ ؍۲۰۰)
۱۵:      ابن حجر    [صدوق کثیر التدلیس عن الضعفاء](التقریب:۷۳۴)
۱۶:       الھیثمی    [وھو ثقۃ مدلس] (مجمع الزوائد:۱ ؍۱۹۰)
۱۷:      العراقی    [قال فی حدیث و إسنادہ جید](تخریج الاحیاء : ۲؍۱۵۴، الصحیحہ : ۱۶۹۱)
۱۸:      المنذری   [وثقۃ] (الترغیب و الترھیب:۳ ؍۲۵و الصحیحہ:۳۵۳)
۱۹:       الحاکم                [مامون مقبول] (المستدرک ۱؍۲۷۳ح۱۰۰۸نیز دیکھئے ۱؍۲۸۹ح۱۰۶۴)
۲۰:      الذھبی              [وقال فی حدیثہ: علی شرط مسلم]( تلخیص المستدرک:۲ ؍۶۱۶)
۲۱:       البخاری    [استشھد بہ فی صحیحہ] (صحیح بخاری:۷۰۷)
۲۲:      ابو احمد الحاکم [ثقۃ فی حدیثہ إذا حدث عن الثقات بما یعرف] (تہذیب:۱ ؍۴۷۷مصححاً)
۲۳:      شعبہ      [روی عنہ] (شعبۃ لایروی إلا عن ثقہ عندہ: تہذیب ۱؍۴ ، ۵)
۲۴:      ابن خلفون [ذکرہ فی الثقات] (حاشیہ تہذیب الکمال:۱ ؍۳۶۹)
۲۵:      الزیلعی              [وکان صدوقاً]   (نصب الرایہ:۱ ؍۴۸)
۲۶:      الدار قطنی [ثقۃ] (کتاب الضعفاء و المتروکین: ۲۳۰)
۲۷:      الجوز جانی  [فإذا أخذت حدیثہ عن الثقات فھو ثقۃ] (احوال الرجا:۳۱۲)
۲۸:      یعقوب بن سفیان     [فھو ثقۃ إلخ](المعرفۃ و التاریخ ۲؍۴۶۴و تاریخ دمشق: ۱۰؍۲۷۰)
۔:        علی بن المدینی        [صالح فیما روی عن أھل الشام](تاریخ بغداد۷؍۱۲۵و سندہ ضعیف)
۔:        النسائی              [إذا قال حدثنا و أخبر نا فھو ثقۃ](تہذیب التہذیب: ۱؍۴۷۵ و سندہ ضعیف)
۔:        بن الترکمانی!!       [ھو صدوق و قد صرح بالتحدیث] (الجوہر النقی:۱ ؍۱۴۷)
نیز دیکھئے توضیح الکلام(۱؍۳۱۷ ۔ ۳۲۱)

اس تحقیق سے معلوم ہوا کہ جمہور محدثین کے نزدیک بقیہ بن الولید ثقہ و صدوق ہے۔ جب و ثقہ راویوں سے سماع کی تصریح کے ساتھ روایت بیان کرےت تو اس کی روایت  صحیح یا حسن ہوتی ہے۔ حاف المنذری فرماتے ہیں۔

‘‘ثقۃ عند الجمھور لکنہ مدلس’’ وہ جمہور کے نزدیک ثقہ ہے لیکن مدلس ہے۔ (الترغیب و الترھیب ج ۴ص ۵۶۸)

حافظ زہبی لکھتے ہیں کہ:
‘‘وثقہ الجمھور فیما سمعہ من الثقات’’ جمہور نے اسے ان روایات میں ثقہ قرار دیا ہے جو اس نے ثقہ راویوں سے سنی ہیں( الکاشف:۱ ؍۱۰۶ ، ۱۰۷، ت ۶۲۶)
جن علماء نے بقیہ پر جرح کی ہے وہ صرف اور صرف دوہی باتوں پر مبنی ہے

۱: تدلیس(یعنی بقیہ کی عن والی اور غیر  مصرح بالسماع روایات ضعیف ہیں)
۲: مجہولین و ضعفاء سے روایت (یعنی بقیہ کی وہ تمام روایتیں ضعیف و مردود ہیں جو اس نے مجہول اور ضعیف راویوں سے بیان کی ہیں)

میرے علم کے مطابق کسی جلیل القدر امام نے بقیہ کی مصرع بالسماع روایت پر کوئی جرح نہیں کی، بقیہ پر تمام جروح کا تعلق اس کی غیر مصرح بالسماع یا اہل حمص وغیرہ کی اوہام والی روایتوں اور ضعیف و مجہول راویوں کی روایات پر ہے۔

خلاصۃ التحقیق: بقیہ بن الولید صدوق مدلس ، صحیح الحدیث یا حسن الحدیث راوی ہے بشرطیکہ سماع کی تصریح کرے۔
تنبیہ۱:بقیہ اگر بحیر بن سعد سے روایت کرے تو یہ روایت سماع پر محمول ہوتی ہے چاہے بقیہ سماع کی تصریح کرے یا نہ کرے، دیکھئے تعلیقۃ علی العلل لا بن ابی حاتم؍تصنیف ابن عبدالھادی(ص۱۲۴ح۳۵؍۱۲۳)
تنبیہ۲: بقیہ کی محمد بن الولی) الزبیدی سے روایت صحیح مسلم میں موجود ہے۔(۱۰۱؍۱۴۲۹)
تنبیہ۳: امام ابو احمد الحاکم (صاحب الکنیٰ) بقیہ کے بارے میں فرماتے ہیں:
‘‘ثقۃ فی حدیثۃ إذا حدث عن الثقات بما یعرف لکنہ ربماروی عن أقوام مثل الأوزاعي و الزبیدي و عبید اللہ العمري أحادیث شبیھۃ بالموضوعۃ أخذھا عن محمد بن عبدالرحمن و یوسف بن السفر و غیر ھما من الضعفاء و یسقطھم من الوسط و یرویھا عن من حدثوہ بھا عنھم’’
جب وہ ثقہ  راویوں سے معروف(یعنی مصرح بالسماع) روایتیں بیان کرے تو ثقہ ہے کیونکہ بعض اوقات وہ لوگوں مثلاً اوزاعی، زبیدی اور عبید اللہ العمری سے موضوعات کے مشابہ وہ احادیث بیان کرتا ہے جو اس نے محمد بن عبدالرحمن اور یوسف بن السفر و غیر ھما ضعیف راویوں سے حاصل کی تھیں۔ وہ انہیں درمیان سے گرا کر ان سے حدیثیں بیان کرتا ہے۔ جن سے انہوں نے اسے احادیث سنائی تھیں(تہذیب التہزیب ج۱ص۴۷۷)

اس قول کا خلاصہ یہ ہے کہ بقیہ مدلس راوی ہے لہذا اگر وہ سماع کی تصریح کر کے ثقہ راویوں سے حدیث بیان کرے تو اس میں وہ ثقہ ہے اور اگر اوزاعی، زبیدی اور عبید اللہ بن عمر العمری سے بغیر تصریح سماع کے ، تدلیس کرتے ہوئے عن  والی روایات بیان کرے تو یہ روایتیں ضعیف ، مردود اور موضوع ہوتی ہیں۔ اس جرح کا تعلق صرف تدلیس سے ہے جیسا کہ سیاق کلام سے ظاہر ہے۔ بعض الناس نے پندرہویں صدی ہجری میں اس جرح کو مطلق قرار دینے کی کوشش کی ہے جس کا باطل ہونا واضح ہے۔

تنبیہ۴: بقیہ تدلیس التسویہ کے الزام سے بری ہے۔ بقیہ سے تدلیس التسویہ کرنا ثابت نہیں ہے دیکھئے الفتح المبین فی تحقیق طبقات المدلسین(۱۱۷؍۴) والضعیفۃ للشیخ الألبانی رحمہ اللہ(۱۲؍۱۰۵ ۔ ۱۱۲ح ۵۵۵۷) و عجالۃ الراغب المتمنی للشیخ سلیم الھلالی(۲؍۸۷۶ح۷۶۳)

جدید محققین مثلاً شیخ محمد ناصر الدین الالبانی رحمہ اللہ نے بقیہ کی مصرح بالسماع والی روایتوں کو حسن قرار دیا ہے۔ جناب عبدالرؤف بن عبدالمنان بن حکیم محمد اشرف سندھو صاحب ایک روایت کے بارے میں لکھتے ہیں کہ : ‘‘ اس کی سند بقیہ بن الولید کی وجہ سے حسن درجے کی ہے۔ حاکم، زہبی اور بوصیری نے مصباح الزجاجہ(۴۶۶) میں اس کو صحیح کہا ہے’’ (القول المقبول ص۶۲۰ح ۵۶۸)نیز دیکھئے القول المقبول(ص۱۹۴ح ۱۰۸)

اگر کوئی کہے کہ محدث عبدالرحمن مبارک پوری رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ :‘‘مگر یہ حدیث بھی ضعیف ہے کیونکہ اس کی سند میں بقیہ واقع ہیں اور یہ مدلس و ضعیف ہیں اور باوجود ضعیف ہونے کے اس جملہ کے ساتھ یہ متفرد ہیں ان کے سوا کوئی اور اس جملہ کو روایت نہیں کرتا ہے۔۔۔’’ (القول السدید فیما یتعلق بتکبیرات العیدص۷۱)

تو عرض ہے کہ یہ کلام تین وجہ سے مردود ہے۔

اول:یہ جمہور محدچین کی تحقیق کے خلاف ہے۔

دوم: خود محدث مبارکپوری رحمہ اللہ نے بقیہ کا ذکر کیا ہے یا سنن الترمذی میں بقیہ کا ذکر آیا ہے مگر انہوں نے بذات خود اس پر کوئی جرح نہیں کی۔ دیکھئے تخفۃ الاحوذی(ج۱ص۹۷ح۹۴، ج۳ص۵ح۱۶۳۵ ، ۳؍۱۷ح ۱۶۶۳ ، ۳؍۳۷۷، ۳۷۸ح۲۶۷۶، ۴؍۳۶ح۲۸۵۹، ۴؍۵۶ح۲۹۲۱)لہذا معلوم ہوا کہ مبارکپوری رحمہ اللہ کی جرح ان کی کتاب تحفۃ الاحوذی کی رُو سے منسوخ ہے۔

سوم: مبارکپوری رحمہ اللہ کا قول‘‘اس جملے کے ساتھ یہ متفرد ہیں’’ قطعاً غلط ہے کیونکہ ابن اخی الزھری نے بھی یہی جملہ بیان کر رکھا ہے۔

پاکستان کے مشہور محقق اور اہل حدیث کے نامور عالم  مولانا ارشاد الحق اثری حفظہ اللہ  نے بقیہ بن الولید کا زبردست دفاع کرتے ہوئے لکھا ہے کہ :‘‘یہ اس بات کا قوی چبوت ہے کہ جمہور کے نزدیک و ثقہ ہے جب سماع کی صراحت کرے تو قابل حجت ہے۔ بالخصوص جب کہ شامی شیوخ سے روایت کرے’’ (توضیح الکلام ج ۱ص۳۱۹باب: بقیہ بن الولید پر جرح کا جواب)

تنبیہ۵: اگر کوئی یہ کہے کہ امام زھری کے دوسرے شاگرد یہ حدیث ان الفاظ کے ساتھ بیان نہیں کرتے ہیں۔ تو عرض  ہے کہ الزبیدی(ثقۃ) اور ابن اخی الزھری(صدوق) کا یہ روایت بیان کرنا حجت ہونے کے لئے کافی ہے۔ اگر ایک ثقہ و صدوق راوی ایک روایت سند و متن میں زیادت کے ساتھ بیان کرے، جبکہ دوسرے بہت سے ثقہ و صدوق راوی یہ  زیادت بیان نہ کریں تو اسی زیادت کا اعتبار ہوتا ہے۔(و الزیادۃ من الثقۃ مقبولۃ)

مثال۱: کفی بالمرء کذباً أن یحدث بکل ماسمع، والی حدیث کو (صرف) علی بن حفص المدائنی نے موصولاً بیان کیا ہے(صحیح مسلم:۵ ؍۵ و ترقیم دارالسلام: ۸،سنن ابی داود:۴۹۹۲، تعلیقات الدار قطنی علی المجروحین لابن حبان ص۴۱و المعلق علیہ جاھل)
یاد رہے کہ صحیح مسلم کے ایک نسخے کی سند میں تصحیف ہو گئی ہے جس کی وجہ سے شیخ البانی رحمہ اللہ کو بڑا وہم لگا ہے، دیکھئے الصحیح(۲۰۲۵) و صحیح مسلم طبعہ ہندیہ(ج۱ص۸ ، ۹)
مثال۲: صحیح بخاری میں محمد بن عمرو بن حلحلہ عن محمد بن عمرو بن عطاء عن ابی حیمد الساعدی رضی اللہ عنہ والی روایت میں صرف ایک رفع یدین کا زکر ہے(البخاری : ۸۲۸)جبکہ سنن ابی داود(۷۳۰) وغیرہ میں عبدالحمید بن جعفر عن محمد بن عمر و بن عطاء عن ابی حمید الساعدی رضی اللہ عنہ والی روایت میں رکوع سے پہلے ، رکوع کے بعد اور دو رکعتیں پڑھ کر اُٹھتے وقت (کل چار مقامات پر رفع یدین کا ثبقت ہے۔ یہ دونوں روایتیں صحیح ہیں لہذا معلوم ہوا کہ ثقہ کی زیادت معتبر و مقبول ہے۔ بشرطیکہ ثقہ راویوں یا اوثق کے من کل الوجوہ سراسر خلاف نہ ہو۔

متن کی بحث

ابن الترکمانی و بعض الناس نے یہ اعتراض کیا ہے کہ اس روایت میں عیدین کا طریقہ مذکور نہیں ہے بلکہ عام نماز کی طرح ہے۔

 عرض ہے کہ اس روایت میں درج ذیل مقامات پر رفع یدین کی صراحت موجود ہے۔
۱: تکبیر تحریمہ
۲:رکوع سے پہلے
۳:رکوع کے بعد
۴:ہر رکعت میں
۵: رکوع سے پہلے ہر تکبیر میں(دیکھئے یہی مضمون، شروع)

حدیث صحیح الفاظ دوبارہ پیش خدمت ہیں:

‘‘ویر فعھما فی کل رکعۃ و تکبیرۃ کبّرھا قبل الرکوع حتی تنقضی صلاتہ’’
ترجمہ:اور آپ (صلی اللہ علیہ وسلم) ہر رکعت میں اور رکوع سے پہلے ہر تکبیر میں رفع یدین کرتے، یہاں تک کہ اپ صلی اللہ علیہ وسلم کی نما زپوری ہو جاتی(مسند احمد:۲ ؍۱۳۴)

اب سوال یہ ہے کہ عیدین کی تکبیرات رکوع سے پہلے ہوتی ہیں یا رکوع کے بعد ہوتی ہیں؟ اگر پہلے ہوتی ہیں تو ضرور بالضرور اس حدیث کے عموم  میں شامل ہیں۔

امام بیہقی نے بقیہ بن الولید کی حدیث کو تکبیرات عید اور ‘‘باب السنۃ  فی رفع الیدین کلما کبر للرکوع’’ دونوں جگہ زکر کیا ہے (السنن الکبری: ۳؍۲۹۲ ، ۲؍۸۳) معلوم ہوا کہ امام بیہقی کے نزدیک اس حدیث سے رفع یدین عند الرکوع اور رفع یدین فی العیدین دونوں جگہوں پر ثابت ہے۔ والحمد للہ


ایک اہم بات

ہم بحمد اللہ اہل حدیث یعنی سلفی اہل حدیث ہیں۔ قرآن و حدیث و اجماع کو حجت سمجھتے ہیں۔ قرآن و حدیث کا وہی مفہوم معتبر سمجھتے ہیں جو سلف صالحین سے ثابت ہے۔ آثار سلف صالحین سے استدلال اور اجتہاد کو جائز سمجھتے ہیں۔ حدیث مذکور سے درج ذیل سلف صالحین نے تکبیرات عیدین پر استدلال کیا ہے۔
۱:        امام بیہقی رحمہ اللہ     [السنن الکبری:۳ ؍۲۹۲ ، ۲۹۳ باب رفع الیدین فی تکبیر العید]
۲:        الامام محمد بن ابراہیم بن المنذر النیسا بوری      [التلخیص الحبیر:۲ ؍۸۶ح ۶۹۲]
سلف صالحین میں سے  کسی نے بھی اس استدلال کا رد نہیں کیا لہذا محدث مبارکپوری اور محدث البانی رحمہما اللہ کا نظریہ، سلف صالحین کے استدلال کے خلاف ہونے کی وجہ سے مردود ہے۔

مولوی محمد افضل اثری(صاحب مکتبۃ السنۃ کراچی) لکھتے ہیں کہ :‘‘جیسا کہ امام بیہقی اور امام(ابن ) منذر کا استدلال ذکر کرنے کے بعد شیخ الاسلام ابن حجر العسقلانی‘‘ تلخیص الحبیر145بحوالہ المرعاۃ341/2’’ لکھتے ہیں: و الأ ولی عندی ترک الرفع لعدم ورود نص صریح فی ذلک، ولعدم ثبوتہ صریحاً بحدیث مرفوع صحیح۔ یعنی میرے نزدیک اولی یہ ہے کہ رفع یدین درز وائد تکبیرات نہ کیا جائے کیونکہ اس سلسلہ میں صریح قسم کی نص وارد نہیں ہے اور نہ ہی صراحتاً مرفوع صحیح حدیث سے یہ ثابت ہے۔ یہی بات علامہ شمس الحق عظیم آبادی، مولانا عبدالرحمن مبارکپوری، مولانا عبید اللہ مبارکپوری رحمہم اللہ تعالیٰ، علامہ البانی حفظہ اللہ نے ذکر کی ہے کہ اس سلسلہ میں کسی قسم کی صریح حدیث ثابت ووارد نہیں ہے’’ (ضمیمۃ ھدیۃ المسلمین ص۹۷طبعہ غیر شرعیہ)

اس بیان میں محمد افضل اثری صاحب نے غلط بیانی کرتے ہوئے حافظ ابن حجر العسقلانی سے وہ قول منسوب کر دیا ہے جس سے حافظ ابن حجر بالکل بری ہیں۔ دیکھئے التلخیص الحبیر(ج۲ ص ۸۶ح۶۹۲)

اس صریح غلط بیانی کا دوسرا کذاب و افتراء ہے۔ صاحب مرعاۃ المفاتیح(الشیخ عبید اللہ مبارکپوری رحمہ اللہ) کے قول کو حافظ ابن حجر کا قول بنا دینا اگر کذب و افتراء نہیں تو پھر کیا ہے؟

یاد رہے کہ مولانا شمس الحق عظیم آبادی، مولانا عبدالرحمن مبارکپوری، مولانا عبید اللہ مبارکپوری اور شیخ البانی رحمہم اللہ کے اقوال و ‘‘تحقیقات’’ در تکبیراتِ عیدین، امام عطاء بن ابی رباح، امام اوزاعی، امام مالک، امام شافعی اور امام احمد بن حنبل رحمہم اللہ سلف صالحین کے مقابلے میں اور مخالف ہونے کی وجہ سے مردود ہیں۔


خلاصۃ التحقیق: اس تحقیق کا خلاصہ یہ ہے کہ ابن اخی الزھری اور بقیہ والی روایت صحیح ہے اور اس سے تکبیرات  عیدین میں رفع یدین پر استدلال بالکل صحیح ہے۔ والحمد للہ

سلف صالحین کے آثار

اب تکبیرات عیدین میں رفع یدین کی مشروعیت پر سلف صالحین کے آثار پیش خدمت ہیں۔

۱:امام عبدالرحمن بن عمر و الاوز اعی الشامی رحمہ اللہ =ولید بن مسلم رحمہ اللہ سے روایت ہے کہ:

‘‘قلت للأّ وزاعی : فأرفع یدي کرفعي فی تکبیرۃ الصلوۃ؟قال: نعم، ارفع یدیک مع کلھن’’ میں نے اوزاعی سے کہا: کیا میں(عید میں) رفع یدین کروں ، جیسے میں نماز میں رفع یدین کرتا ہوں؟ انہوں نے کہا: جی ہاں تمام تکبیروں کے ساتھ رفع یدین کرو۔(احکام العیدین للفریابی: ۱۳۶و إسنادہ صحیح)

۲:امام مالک بن انس المدنی رحمہ اللہ= ولید بن مسلم سے روایت ہے کہ:

‘‘سألت مالک بن أنس عن ذلک فقال: نعم، ارفع یدیک مع کل تکبیرۃ ولم أسمع فیہ شیئاً’’
میں نے مالک بن انس سے اس بارے میں پوچھا تو انہوں نے فرمایا:  جی ہاں ، ہر تکبیر کےس اتھ رفع یدین کرو، اور میں نے اس میں کچھ بھی نہیں سنا۔(احکام العیدین:۱۳۷، و إسنادہ صحیح)

تنبیہ: امام مالک کا ‘‘ ولم أسمع فیہ شیئاً’’ دو باتوں پر ہی محمول ہے۔

اول: میں نے اس عمل کے بارے میں کوئی حدیث نہیں سنی۔
دوم: میں نے اس عمل کے مخالف کوئی حدیث نہیں سنی۔
اول الذکر کے بارے میں عرض ہے کہ اگر امام مالک نے بقیہ بن الولید اور ابن اخی الزھری کی حدیث اور عطاء بن ابی رباح تابعی کا اثر نہیں سنا تو یہ بات ان دلائل کے ضعیف ہونے کی دلیل نہیں ہے۔

تنبیہ:۲: مجموع شرح المہزب للنووی(۵؍۲۶)الاوسط لابن المنذر (۴؍۲۸۲) اور غیر مستند کتاب المدونہ (۱؍۱۶۹)وغیرہ میں اس اثر کے خلاف جو کچھ مروی ہے وہ بے سند و بے اصل ہونے کی وجہ سے مردود ہے۔
۳: امام محمد بن ادریس الشافعی رحمہ اللہ =دیکھئے کتاب الام(ج۱ص۲۳۷)
۴: امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ=دیکھئے مسائل الامام احمد، روایۃ ابی داود (ص۶۰)
۵:امام یحییٰ بن معین رحمہ اللہ=دیکھئے تاریخ ابن معین(روایۃ الدوری:۲۲۸۴)
معلوم ہوا کہ مکہ، مدینہ اور شام وغیرہ میں سلف صالحین تکبیرات عیدین میں رفع یدین کے قائل و فاعل تھے۔ ان کے مقابلے میں محمد بن الحسن الشیبانی(کذاب؍کتاب الضعفاء للعقیلی:۴ ؍۵۲و سندہ صحیح، الحدیث حضرو: ۷ص۱۷) سے تکبیرات عیدین میں رفع یدین کی مخالفت مروی ہے، دیکھئے کتاب الاصل (۱؍۳۷۴ ، ۳۷۵)والا وسط لابن المنذر(۴؍۲۸۲) سفیان ثوری رحمہ اللہ سے بھی مروی ہے کہ وہ تکبیرات مذکورہ میں رع یدین کے قائل نہیں تھے (مجموع : ۵؍۲۶والا وسط: ۴؍۲۸۲)یہ قول بلاسند ہونے کی وجہ سے مردود ہے۔

بعض حنفیوں نے بغیر کسی سند متصل کے ابو یوسف قاضی سے تکبیراتِ عیدین میں رفع یدین نہ کرنا نقل کیا ہے۔ یہ نقل دو وجہ سے مردود ہے۔

۱:بے سند ہے۔
۲: قاضی ابو یوسف یعقوب بن ابراہیم کے بارے میں امام ابوحنیفہ فرماتے ہیں کہ:
‘‘ألا تعجبون من یعقوب، یقول علي مالا أقول’’ کیا تم لوگ یعقوب (ابو یوسف) پر تعجب نہیں کرتے، وہ  میرے بارے میں ایسی باتیں کہتا ہے جو میں نہیں کہتا۔(التاریخ الصغیر للبخاری ج ۲ص ۲۱۰و فیات: عشر إلی تسعین و مائتہ ؍ و إسنادہ حسن ولہ شواہد‘‘فالخبر صحیح’’ انظر تحفۃ الاقویاء فی تحقیق کتاب الضعفاء ص ۱۲۲ت ۴۲۵) معلوم ہوا کہ امام ابو حنیفہ اپنے شاگرد قاضی ابو یوسف کو کذاب سمجھتے تھے۔
تنبیہ: ایک روایت میں آیا ہے کہ عطاء بن ابی رباح المکی رحمہ اللہ زوائد تکبیراتِ عید میں رفع یدین کے قائل تھے۔ (مصنف عبدالرزاق۳؍۲۹۷ح۵۶۹۹) اس روایت کے مرکزی راوی عبدالرزاق بن ھمامدلس ہیں اور روایت معنعن ہے۔ سفیان ثوری مدلس نے عبدالرزاق کی متابعت کر رکھی ہے۔ (دیکھئے السنن الکبری للبیہقی ۳؍۲۹۳) یہ روایت ان دونوں سندوں کےساتھ ضعیف ہے۔

اختتام بحث: تکبیرات عیدین میں رفع یدین کرنا بالکل صحیح عمل ہے۔ محدث مبارکپوری ، شیخ البانی رحمہما اللہ اور بعض الناس کا اس عمل کی مخالفت کرنا غلط اور مردود ہے۔ وما علینا إلا البلاغ۔

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.