تفسیر الجلالین – ایک غیر مستند تفسیر

 از    April 29, 2015

                    تحریر: الشیخ محمد الحمود النجدی

ترجمہ : حافظ محمد اعجاز ساقیؔ

مفسرین کے نام : یہ تفسیر درج ذیل دو مفسرین کی کاوش ہے  :

۱٭         جلال الدین المحلی ، محمد بن احمد المفسر ، الاصولی ، الشافعی (۷۹۱….۸۷۴ھ)

۲٭        جلال الدین السیوطی عبدالرحمٰن بن ابی بکر (۸۴۹…..۹۱۱ھ)

تفسیر کا نام:                                الجلالین.

تفسیر ہٰذا کے عمومی اوصاف:        اس تفسیر میں دو جلال نامی علماء شریک ہوئے ہیں۔ جلال الدین المحلی نے اس تفسیر کو سورۂ کہف سے شروع کرکے سورۂ ناس تک تحریر کیا پھر جب سورہ فاتحہ سے شروع ہوئے تو فوت ہوئے ۔ اس کے بعد جلال الدین السیوطی نے اسے مکمل کیا۔ سورۂ فاتحہ سے شروع ہو کر سورہ اسراء تک انہوں نے لکھی ۔ یہ تفسیر مختصر اور جامع ہے  ۔اپنے اختصار اور آسانی کی وجہ سے یہ لوگوں میں مشہور ہے۔

عقیدہ:      دونوں مصنف اشعری مؤوّل ہیں۔س

صفاتِ باری تعالیٰ میں جلال الدین محلی کی تاویلات:

                جلال الدین محلی نے صفتِ “رحمت” کی تاویل “مستحقین رحمت کے لئے اردۂ خیر” سے کی ہے ، جیساکہ “الرحمٰن الرحیم” کی تفسیر میں موجود ہے ۔ “الودود” کی تفسیر میں لکھتے ہیں: “اپنے اولیاء کے لیے محبوب” ، صفتِ “حیا” کی تاویل “ترک” سے کی ہے اور یہ لفظ “صفت حیا” کا لازم ہے ، جیساکہ اس آیت میں واضح ہے : ﴿ وَاللّٰہُ لَا یَسْتَحْیِیْ مِنَ الْحَقِّ﴾     (الاحزاب : ۵۳)

                انہوں نے ﴿ اِنَّ اللّٰہَ یُحِبُّ الَّذِیْنَ یُقَاتِلُوْنَ فِی سَبِیْلِہٖ صَفًّا﴾                (الصّف: ۴)

میں “محبت” کی تاویل “نصرت و اکرام” سے کی ہے ۔

                صفت “قبضۃ” کی تاویل “ملک و تصرف” اور “یمین” کی تاویل “قدرۃ” سے کی ہے ، اللہ تعالیٰ کے اس فرمان میں انہوں نے یہ تاویل کی ہے :

                ﴿وَالْاَرْضُ جَمِیْعًا قَبْضَتُہٗ یَوْمَ الْقِیٰمَۃِ وَ السَّمٰوٰتُ مَطْوِیَّاتٌ بِّیَمِیْنِہٖ﴾          (الزمر : ۶۷)

﴿وَجَاءَ رَبُّکَ وَالْمَلَکُ﴾ (الفجر: ۲۲) میں صفت “مجیٔت کی تاویل ” اللہ کے حکم کے آنے” سے کی ہے، البتہ : ﴿اِلٰی رَبِّھَا نَاضِرَۃٌ﴾ (القیامۃ : ۲۳)

                سے قیامت کے دن مومنوں کے لئے ان کے رب کی “رؤیت” ثابت کی ہے ۔

                استواء والی آیات میں کہتے ہیں کہ جیسے اس کے شایانِ شان ہے ، یہ مجمل بات ہے ، پھر ﴿اِلَیْہِ یَصْعَدُ الْکَلِمُ الطَّیِّبُ﴾ (الفاطر: ۱۰) کی تفسیر میں لکھتے ہیں: “یعنی وہ اس کو جانتا ہے ۔”

جلال الدین سیوطی کی تاویلات :  صفت “حیاء” کی تاویل آیتِ مبارکہ:

﴿اِنَّ اللّٰہَ لَا یَسْتَحْیِیْ اَنْ یَّضْرِبَ مَثَلاً مَّا بَعُوْضَۃً فَمَا فَوْقَھَا﴾ (البقرۃ: ۲۶) میں “ترک” سے کی ہے۔

﴿اُولٰئِکَ یَرْجُوْنَ رَحْمَۃَ اللّٰہِ﴾ (البقرۃ : ۲۱۸) میں صفت “رحمت” کو “ثواب” سے تعبیر کیا ہے ، اور ﴿اَللّٰہُ یَسْتَھْزِیُٔ بِھِمْ﴾ میں صفت “استہزاء” کی تاویل “بدلہ استہزاء” سے کی ہے ، اسی طرح

﴿قُلْ اِنْ کُنْتُمْ تُحِبُّوْنَ اللّٰہَ فَاتَّبِعُوْنِیْ یُحبِبْکُمُ اللّٰہُ﴾            (آل عمران: ۳۱)

میں صفتِ “محبت” کی تاویل “ثواب” سے کی ہے۔

﴿ھَلْ یَنْظُرُوْنَ اِلَّا اَنْ یَّأْتِیَھُمُ اللّٰہُ فِیْ ظُلَلٍ مِّنَ الْغَمَامِ﴾ (البقرۃ : ۲۱۱)

کے بارے میں کہتے ہیں کہ “اتیان ” سے مراد “اتیان أمرہ” (اللہ تعالیٰ کے حکم کا آنا) ہے۔

﴿بَلْ یَدَاہُ مَبْسُوْطَتَانِ یُنْفِقُ کَیْفَ یَشَاءُ﴾ (المائدہ: ۶۴) میں “یدین” کی تاویل “سخاوت میں مبالغہ” اور “افادۂ کثیرہ” سے کی ہے ، کیونکہ کوئی سخی آدمی سخاوت اپنے ہاتھ سے ہی کرتا ہے ۔

احادیث و اسانید :       اس تفسیر میں احادیث، اسباب نزول اور آثارِ سلف اکثر بغیر سند و مرجع ذکر کیے گئے ہیں، بسا اوقات مراجع کا ذکر موجود بھی ہے ۔

فقہی احکام:               اختصار سے راجح فقہی اقول ذکر کیے گئے ہیں۔

لغت ، نحو اور شعر:      ترکیب کا ذکر مختصر انداز سے موجود ہے۔

قراءات:  مختصراً قراءات مشہورہ بھی بتاتے ہیں۔

اسرائیلی روایات میں آپ کا انداز:

                بعض آیات کی تفسیر میں اسرائیلی روایات  کے معانی بھی بیان ہیں اور ان پر جرح بھی نہیں ، ان میں بعض انبیاء کرام علیہم السلام کی گستاخی بھی موجود ہے ، جیساکہ (سورہ صٓ کی تفسیر میں) داؤد علیہ السلام کی آزمائش کا جھوٹا قصہ موجود ہے ۔

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.