بوڑھے آدمی کا روزہ

 از    June 2, 2015

             تحریر:غلام مصطفےٰ ظہیر امن پوری

اس بات پر اجماع ہے کہ بوڑھا آدمی ، جو روزہ رکھنے کی طاقت نہ رکھتا ہو، وہ روزہ نہ رکھے ، بلکہ ہر روزے کے بدلے ایک مسکین کو کھانا کھلادے۔ دیکھیں (الا جما ع لابن المنذر : ۱۲۹)

سیدنا ابن عباسؓ فرماتے ہیں : “وہ بوڑھا مرد اور بوڑھی عورت جو روزہ رکھنے کی طاقت نہ رکھتے ہوں ، وہ ہر روزے کے  بدلے میں ایک مسکین کو کھا نا کھلا دیں ۔” (صحیح  بخاری:۴۵۰۵)

نیز آپ ﷺ نے آیتِ کریمہ

(وَ عَلَی الَّذِیۡنَ یُطِیۡقُوۡنَہٗ فِدۡیَۃٌ طَعَامُ مِسۡکِیۡنٍ ؕ) 

( پڑھی اور فرمایا: “بوڑھاشخص جو روزہ رکھنے کی استطاعت وطاقت نہ رکھتا ہو، روزہ نہ رکھے، بلکہ روزانہ ایک مسکین کو آدھا صاع گندم دے دے۔” (سنن الدارقطنی: ۲۰۷/۲،ح:۲۳۶۱، وسندۂ حسن)

ایک روایت میں ہےکہ آپ ﷺ نے فرما یا : “ایک مد (تقریباََ آدھا کلو) دے گا۔”

(سنن ادارقطنی: ۲۰۴/۶، ح: ۲۳۴۹، وقال: اسناد صحیح ، وھو کما قال)

سید نا انس بن مالک ؓ کے بارے میں روایت ہے کہ جب وہ ایک سال روزہ رکھنے سے عاجز آگئے تو آپ ﷺ نے ایک ٹب میں ثرید تیار کی ، تیس مساکین کو خوب سیر کرکے کھلادی۔

(سنن ادارقطنی: ۲۰۶/۲، ح: ۲۳۶۵، وسندۂ صحیح)

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

ٹویٹر پر فالو کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.