بسم اللہ اونچی آواز سے پڑھنا

 از    March 1, 2015

تحریر: حافظ زبیر علی زئی رحمہ اللہ

عن عبدالرحمٰن بن أبزیٰ قال:صلیت خلف عمر فجھر ببسم اللہ الرحمٰن الرحیم                عبدالرحمٰن بن ابزی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے کہا : میں نے عمرؓ کے پیچھے نماز پڑھی، آپ نے ﷽ اونچی آواز سے پڑھی۔ (مصنف ابن ابی شیبہ ۴۱۲/۱ ح ۴۷۵۷، شرح معانی الآثار للطحاوی  و اللفظ  لہ ۱۳۷/۱ ، السنن الکبریٰ للبیہقی ۴۸/۲)

اس کے تمام راوی ثقہ و صدوق ہیں اور سند متصل  ہے لہٰذا یہ سند صحیح ہے۔
فوائد:
۱:             اس حدیث پاک سے معلوم ہوا کہ جہری نمازوں میں امام کا جہراً ﷽ پڑھنا بالکل صحیح ہے۔
۲:            عبداللہ بن عباس اور عبداللہ بن زبیر رضی اللہ تعالیٰ عنھم سے بھی ﷽ بالجہر ثابت ہے ۔ (جزء الخطیب و صححہ الذہبی فی مختصر الجہر بالبسملۃ للخطیب ص ۱۸۰ ح ۴۱)
اور اسے ذہبی نے صحیح کہا ہے ۔
۳:            بسم اللہ سراً (آہستہ) پڑھنابھی جائز ہے جیسا کہ صحیح مسلم وغیرہ کی احادیث سے ثابت ہے ۔ (۱۷۲/۱ ح ۳۹۹)
۴:            عمرؓ کے اثر کے راویوں کی مختصر توثیق درج ذیل ہے :
۱:             عبدالرحمٰن بن ابزی رضی اللہ تعالیٰ عنہ، صحابی صغیر ہیں۔                (تقریب التہذیب : ۳۷۹۴)
۲:            سعید بن عبدالرحمٰنؒ ثقہ ہیں۔                                      (تقریب التہذیب: ۲۳۴۶)
۳:            ذربن عبداللہ ثقہ عابد رمی بالارجاء تھے۔                        (تقریب التہذیب :۱۸۴۰)
۴:            عمر بن ذر ثقہ رمی بالارجاء تھے۔                                    (تقریب التہذیب :۴۸۹۳)
۵:عمر بن ذر سے یہ روایت خالد بن مخلد، ابو احمد اور ابن قتیبہ نے بیان کی ہے ، ان راویوں کی توثیق کے لئے تہذیب وغیرہ کا مطالعہ کریں۔

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

ٹویٹر پر فالو کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.