اللہ نے سب سے پہلے قلم پیدا کیا

 از    January 27, 2015

وعنہ ، قال: سئل رسول اللہ ﷺ عن ذراري المشرکین، قال : ((اللہ أعلم بما کانوا عاملین)) متفق علیہ۔انہی (سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ) سے روایت ہےکہ رسول اللہ ﷺ سے مشرکین کے (نابالغ) بچوں کے بارے میں پوچھا گیا تو آپ (ﷺ) نے فرمایا : جو اعمال وہ کرنے والے تھے انہیں اللہ جانتا ہے ۔ متفق علیہ۔ (البخاری: ۱۳۸۴، و مسلم : ۲۶۵۹/۲۶)


فقہ الحدیث:

۱:       مشرکین کے بچے جنت میں جائیں گے یا جہنم میں؟ یہ تقدیر کا مسئلہ ہے ، اسے صرف اللہ ہی جانتا ہے کہ وہ دنیامیں کیا اعمال کرنے والے تھے۔
۲:       مشرکین کے بچوں کی نمازِ جنازہ نہیں پڑھی جائے گی۔
۳:       مشرکین کے بچوں کے بارے میں سکوت  کرنا بہتر ہے ۔
۴:       نیز دیکھئے اضواء المصابیح : ۸۴، ماہنامہ الحدیث حضرو: ۳۳ ص ۶

الفصل الثانی

وعن عبادۃ بن الصامت رضي اللہ عنہ، قال قال رسول اللہ ﷺ : ((إن أول ما خلق اللہ القلم، فقال لہ: اکتب : فقال : ما أکتب؟ قال: اکتب القدر. فکتب ما کان وما ھو کائن إلی الأبد.))رواہ الترمذی وقال : ھذا حدیث غریب إسناداً.(سیدنا) عبادہ بن الصامت رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: بے شک اللہ نے سب سے پہلے قلم پیدا کیا پھر اسے کہا : لکھ ۔ تو اس (قلم ) نے کہا : میں کیا لکھوں؟ اللہ نے فرمایا: تقدیر لکھ، پس قلم نے جو ہوا ہے اور جو آئندہ ہوگا، لکھ دیا۔ اسے ترمذی (۲۱۵۵) نے روایت  کیا اور کہا: یہ حدیث سند کے لحاظ سے (حسن) غریب ہے۔


تحقیق الحدیث :

سنن ترمذی والی یہ روایت عبدالواحد بن سُلیم المالکی البصری کی وجہ سے ضعیف ہے ۔ عبدالواحد مذکور کے بارے میں حافظ ابن حجر لکھتے ہیں: ضعیف (تقریب التہذیب: ۴۲۴۱)
          لیکن اس روایت کے متن میں عبدالواحد منفرد نہیں ہے بلکہ اس کے شواہد مسند احمد (۳۱۷/۵ح ۲۲۷۰۵) کتاب السنۃ لابن ابی عاصم (۱۰۴-۱۰۲، ۱۰۸-۱۰۶) روضۃ العقلاء لابن حبان (ص ۱۵۷) سنن ابی داود (۴۷۰۰) اور مسند ابی یعلیٰ (۲۳۲۹) وغیرہ میں موجود ہیں۔ ان شواہد میں بہترین وہ روایت ہے جسے 

ابویعلیٰ الموصلی نے سیدنا ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت کیا ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:((اِن أول شئ خلقہ اللہ القلم و أمرہ فکتب کل شئ.)) بے شک اللہ نے جو پہلی چیز پیدا کی وہ قلم ہے اور اسے حکم دیا تو اس نے ہر چیز کو لکھ  دیا۔     (مسند ابی یعلیٰ ج ۴ ص ۲۱۷ ح ۲۳۲۹ و سندہ صحیح)

ان شواہد کے ساتھ ترمذی کی مذکورہ بالا روایت بھی حسن یا صحیح ہے ۔ والحمدللہ

فقہ الحدیث:

۱:       اللہ تعالیٰ نے تمام مخلوقات میں سب سے پہلے قلم پیدا کیا۔
۲:       جولوگ کہتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے سب سے پہلے نبی کریم ﷺ کو یا آپ ﷺ کے نور کو پیدا کیا ،ان لوگوں کے پاس کوئی دلیل نہیں ہے بلکہ ان کا یہ عقیدہ اس صحیح حدیث کے خلاف ہے ۔

شیخ البانی ؒ فرماتے ہیں:          “وھو من الأدلۃ الظاھرۃ علی بطلان الحدیث المشھور ((أول ما خلق اللہ نور نبیک یا جابر!)) وقد جھدت في أن أقف علی سندہ فلم یتیسر لي ذلک۔یہ حدیث ان واضح دلیلوں میں سے ہے جس سے (جہلاء کے درمیان) مشہور حدیث :” اے جابر ! سب سے پہلے اللہ نے تیرے نبی کا نور پیدا کیا” کے باطل ہونے کا ثبوت ملتا ہے ۔ میں نے اس (باطل ) روایت کی سند تلاش کرنے کی بہت کوشش کی ہے لیکن مجھے اس کی کوئی سند نہیں ملی ۔ (التعلیق علی المشکوۃ ج ۱ ص ۳۴ تحت ح ۹۴)

اس بے اصل اور من گھڑت  روایت کا وجود شیعوں کی من گھڑت کتاب اصول کافی (ج۱ ص ۴۴۲ طبع دارالکتب الاسلامیہ تہران، ایران) میں موضوع سند کے ساتھ ملتا ہے ۔

وعن مسلم بن یسار قال: سئل عمر بن الخطاب (رضي اللہ عنہ) عن ھٰذہ الآیۃ: ﴿ وَ اِذۡ اَخَذَ رَبُّکَ مِنۡۢ بَنِیۡۤ اٰدَمَ مِنۡ ظُہُوۡرِہِمۡ ذُرِّیَّتَہُمۡ الآیۃ، قال عمر: سمعت رسول اللہ ﷺ یسأل عنھا فقال: ((إن اللہ خلق آدم ثم مسح ظھرہ بیمینہ فاستخرج منہ ذریۃ فقال: خلقت ھؤلاء للجنۃ، وبعمل أھل الجنۃ یعملون ثم مسح ظھرہ فاستخرج منہ ذریۃ فقال: خلقت ھؤلاء للنار و بعمل أھل النار یعملون.))فقال رجل: ففیم العمل ؟ یا رسول اللہ ! فقال رسول اللہ ﷺ : ((إن اللہ إذا خلق العبد للجنۃ استعملہ بعمل أھل الجنۃ حتی یموت علی عمل من أعمال أھل الجنۃ فید خلہ بہ الجنۃ و إذاخلق العبد للنار استعملہ بعمل أھل النار حتی یموت علی عمل من أعمال أھل النار فیدخلہ بہ النار.)) رواہ مالک والترمذي و أبوداود۔مسلم بن یسار سے روایت ہے کہ (سیدنا) عمر بن الخطاب (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) سے اس آیت “اور جب تیرے رب نے بنی آدم کی پُشتوں سے ان کی اولاد کو نکالا” آیت کے آخر تک (الاعراف: ۱۷۲) کے بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے فرمایا: میں نے رسول اللہ ﷺ کو اس آیت کے جواب میں فرماتے ہوئے سنا : یقیناً اللہ نے جب آدم کو پیدا کیا تو ان کی پشت پر اپنا دایاں ہاتھ پھیرا تو اس سے ان کی اولاد نکالی اور فرمایا : میں نے انہیں جنت کے لئے پیدا کیا ہےا ور یہ جنتیوں کے کام کریں گے۔ پھر ان کی پشت پر(ہاتھ) پھیرا تو اس میں سے ان کی اولاد نکالی اور فرمایا :میں نے انہیں جہنم کے لئے پیدا کیا ہے اور جہنمیوں کے کام کریں گے ۔ ایک آدمی نے پوچھا : یا رسول اللہ ! پھر اعمال کی کیا ضرورت ہے ؟ تو رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: اللہ نے جب بندے کو جنت کے لئے پیدا کیا تو اسے اس کی موت تک جنتیوں کے اعمال کی توفیق دی جو اسے جنت میں داخل کریں گے اور جب اس نے کسی بندے کو جہنم کےلئے پیدا تو اسے اس کی موت تک جہنمیوں کے اعمال پر چلایا جو اسے جہنم میں داخل کردیں گے ۔اسے مالک (الموطأ ۸۹۸/۱ ح ۱۷۲۶) ترمذی (۳۰۷۵ وقال : حسن و مسلم لم یسمع من عمر ) اور ابوداود (۴۷۰۳) نے روایت کیا ہے ۔


تحقیق الحدیث :

اس روایت کی سند منقطع ہونے کی وجہ سے ضعیف ہے کیونکہ مسلم بن یسار نے سیدنا عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے کچھ نہیں سنا ۔ اس روایت کی دوسری سند میں نعیم بن ربیعہ مجہول الحال راوی ہے جسے صرف ابن حبان نے ثقہ قرار دیا ہے ۔ دیکھئے میری کتاب انوار الصحیفۃ فی الاحادیث الضعیفۃ (د: ۴۷۰۳)

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

ٹویٹر پر فالو کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.