آؤ عمل کریں !

 از    March 19, 2015

   تحریر:غلام مصطفیٰ ظہیر امن پوری
            عمل نمبر ۱ :           سفر سے واپسی پر گھر جانے سے پہلے مسجد میں دو رکعتیں
            انسا ن زندگی کے اس سفر میں کئی سفر کرتا ہے ، اس حوالے سے نبی کریم ﷺ کی رہنمائی یہ ہے کہ سفر سے واپسی پر مسجد میں جا کر دو رکعتیں نماز ادا کرنے کے بعد گھر کا رخ کرے، یہ سنت مہجورہ ہے ، کتنے لوگ اس سے غافل ہیں، اس پیاری سنت کو زندہ کرنے کی اشد ضرورت ہے ، جیسا کہ :
۱:             سیدنا کعب بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے :
                                ((کان النبی صلی اللہ علیہ وسلم إذا قدم من سفر بدأ بالمسجد فصلیّٰ فیہ))
                “نبی کریم ﷺ جب سفر سے واپس تشریف لاتے ، تو ابتداء مسجد کے ساتھ کرتے، (یعنی سب سے پہلے مسجد جاتے) اس میں (دو رکعت) نماز ادا کرتے۔”          (صحیح بخاری: ۳۰۸۸، صحیح مسلم : ۷۱۶)
                ایک روایت میں ہے :
                ((ثم جلس فیہ))
                “پھر اس میں بیٹھتے”   (مسلم : ۷۱۶)
حافظ نووی (۶۳۱۔ ۶۷۶ھ) ایک حدیث کے تحت لکھتے ہیں:
                فی ھذہ الأحادیث استحباب الرّکعتین للقادم من سفر ہ فی المسجد أوّل قدومہ و ھذہ الصّلوۃ مقصودۃ للقدوم من السّفر ، تحیّۃ المسجد، والأحادیث المذکورہ صریحۃ.
                “ان احادیث میں سفر سے واپس لوٹنے والے کے لئے سب سے پہلے مسجد میں دو رکعتیں ادا کرنے کے استحباب کا ثبوت ہے ، یہ سفر سے لوٹنے والے کی نماز ہے ، نہ کہ تحیۃ المسجد ، احادیث مذکورہ اس پر صریح دلیل ہیں۔”    (شرح مسلم للنووی: ۲۴۸/۱)
                امیر المؤمنین فی الحدیث فقیہ الأمت امام بخاریؒ نے اس حدیث پرباب الصلوۃ إذا قدم من سفر قائم کیا ہے۔
۲:            سیدنا جابر بن عبداللہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کہتے ہیں:
                ((اشتریٰ منی رسول اللّٰہ صلّی اللّٰہ علیہ وسلّم بعیرا، فلماّ قدم المدینۃ أمرنی أن آتی المسجد فأصلیّ رکعتین))“رسول اللہ ﷺ نے مجھ سے اونٹ خریدا، جب آپ مدینہ تشریف لائے ، تو آپ ﷺ نے مجھے مسجد میں آنے کا حکم دیا کہ میں اس میں دو رکعتیں ادا کروں۔”                (صحیح بخاری: ۴۴۳، صحیح مسلم: ۷۱۵، واللفظ لہٗ)
۳:            سیدنا ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما بیان کرتے ہیں:
                ((ان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم حین أقبل من حجتہ، دخل المدینۃ، فأناخ علی باب مسجدہ، ثمّ دخلہ، فرکع فیہ رکعتین، ثمّ انصرف الی بیتہ))
                “رسول کریم ﷺ جب حج سے واپس ہوئے تو آپ نے مدینہ میں داخل ہو کر اپنی مسجد کے دروازے پر سواری کو بٹھا دیا، پھر مسجد میں داخل ہو کر دو رکعتیں اد ا کیں، پھر اپنے گھر کی طرف لوٹ گئے “
                ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے شاگر د “نافع” بیان کرتے ہیں کہ سیدنا ابن عمر کا بھی یہی طریقِ کار تھا۔
                                                                                (مسند الامام احمد: ۱۲۹/۲، سنن ابی داؤد” ۲۷۸۲ و سندہ صحیح)
فائدہ:
 ابو صالح کہتے ہیں:
                ((انّ عثمان کان إذا قدم من سفر، صلیّٰ رکعتین))
                “سیدنا عثمان رضی اللہ تعالیٰ عنہ جب سفر سے آتے تو دو رکعتیں ادا فرماتے”       (مصنف ابن ابی شیبہ : ۸۲/۲)
                وسندہ حسن ان صحّ سماع أبی صالح عن عثمان ، وھو نفسہ صدوق حسن الحدیث، قال الذھبی فیہ؛ ثقہ(میزان الاعتدال: ۵۳۹/۴)
 ایک دوسری روایت میں سیدنا ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے سفر سے واپسی پر مسجد میں بھی دو رکعتیں پڑھناثابت ہے ۔    (فضل الصلاۃ علی النبیّ للامام اسماعیل بن اسحاق القاضی: ۹۹، وسندہ صحیح)
٭٭٭٭٭٭
عمل نمبر ۲:         گھر سے نکلتے اور داخل ہوتے وقت کی نماز
۱:                             سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان کرتے ہیں:
                اذا دخلت منزلک فصل رکعتین تمنعانک مدخل السوء، واذا خرجت من منزلک فصل رکعتین تمنعانک مخرج السوء.
                “جب تم اپنے گھر میں داخل ہو تو دو رکعتیں ادا کرو، وہ تمہیں اندرونی برائی سے محفوظ رکھیں گی، اسی طرح جب تم گھر سے نکلو تو دو رکعتیں ادا کرو، وہ تمہیں بیرونی نقصان سے بچائیں گی۔”              (کشف الاستار: ۷۴۶، و سندہ صحیح)
                حافظ ہیثمی کہتے ہیں:     رجالہ موثقون۔         (مجمع الزوائد :۲۸۳/۲۔ ۲۸۴)
۲:            موسیٰ بن ابی موسیٰ اشعریؒ کہتے ہیں:
                                ((انّ ابن عباس قدم من سفر فصلیّٰ فی بیتہ رکعتین علی طنفسۃ))
                “سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ ایک سفر سے واپس آئے تو اپنے گھر میں چٹائی پر دو رکعتیں ادا کیں۔”
                                                                                                                (مصنف ابن أبی شیبہ : ۸۲/۲، و سندہ حسن)
عمل نمبر ۳
                شہر بن حوشب کہتے ہیں کہ میں نے ام سلمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کو بیان کرتے ہوئے سنا کہ وہ کہہ رہی تھیں کہ سیدہ فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہما نبی کریم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہٖ وسلم کے پاس آئیں، آپ سے کام کی شکایت کی، کہنے لگیں، اے اللہ کے رسول  !اللہ کی قسم ، چکی پیسنے کی وجہ سے میرے ہاتھوں پر چھالے پڑ گئے ہیں، آٹا پیستی ہوں، پھر گوندھتی ہوں، رسول اللہ ﷺ نے ان سے فرمایا ، اگر اللہ تعالیٰ نے آپ کے مقدر میں کچھ لکھا ہے ، وہ آپ کو ضرور ملے گا، میں آپ کو اس سے بہتر چیز کی راہنمائی کرتا ہوں کہ جب آپ سونے کے لئے بستر پر لیٹیں تو ۳۳ مرتبہ “سبحان اللہ” ، ۳۳ مرتبہ “اللہ اکبر” اور ۳۴بار “الحمدللہ”کہو، یہ پورا سو ہے ، جو کہ خادم سے کہیں زیادہ بہتر ہے ، نمازِ فجر اور نمازِ مغرب کے بعد دس دس مرتبہ یہ ذکر کریں :
        لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ وَحْدَہٗ لَا شَرِیْکَ لَہٗ، لَہُ الْمُلْکُ وَلَہُ الْحَمْدُ، یُحْیِیْ وَ یُمِیْتُ، بِیَدِہِ الْخَیْرُ، وَھُوَ عَلٰی کُلِّ شَیْءِ قَدِیْرٌ.
                “اللہ کے سوا کوئی معبود (برحق) نہیں ، وہ (ذات و صفات میں) اکیلا ہے ، اس کا کوئی شریک نہیں، اسی کی بادشاہت ہے ، تعریف و ثناء بھی اسی کی ہے، وہی زندہ کرتا ہے ، وہی مارتا ہے ، اسی کے ہاتھ خیر و بھلائی ہے ، وہ ہر چیز پر قادر ہے ۔”
                ہر ایک کے بدلے میں دس نیکیاں لکھ دی جائیں گی، دس گناہ مٹا دیے جائیں گے ، اسماعیل علیہ السلام کی اولاد سے ایک گردن آزاد کرنے کا اجرو ثواب ملے گا، شر ک کے علاوہ کوئی گناہ گرفت نہیں کر سکے گا ۔

                لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ وَحْدَہٗ لَا شَرِیْکَ لَہٗ. یہ آپ کے لئے صبح سے شام تک  ہر شیطان اور ہر برائی سے بچاؤ کا ہتھیار ہے ۔            (مسند الامام احمد: ۲۹۸/۶، المعجم الکبیر للطبرانی : ۳۳۹/۲۳ و سندہ حسن)

                حافظ ہیثمی فرماتے ہیں: اسنادھما حسن.                “(احمد اور طبرانی) دونوں کی سند حسن ہے ۔ ”                 (مجمع الزوائد : ۱۰۸/۱، ۱۲۲)

                اس حدیث کے راوی شہر بن حوشب کو امام احمد بن حنبل، امام یحییٰ بن معین ، امام ابوزرعہ ، امام عجلی، امام بخاری، امام ابوحاتم الرازی ، امام یعقوب بن شیبہ ، امام یعقوب بن سفیان الفسوی اور جمہور نے توثیق کی ہے ، نیز خطیب بغدادی (موضع الاوھام بین الجمع والتفریق:۳۶۰/۱) اور محدث المؤمل بن احمد (فوائد المؤمل: ۴۶) نے اس کی حدیث کی سند کی تحسین کرکے توثیق کی ہے ۔ یہ حسن الحدیث ہے ۔ حافظ ذہبی نے اس کے ترجمہ کے شروع میں (صح) لکھا ہے ، اس کا مطلب ہے کہ ذہبی کے نزدیک اس پر جرح مردو د ہے اور توثیق راجح ہے ، جیسا کہ حافظ ابن الملقن اور حافظ ابن حجر لکھتے ہیں : (صح) واصطلاحہ أن العمل علی توثیقہ.
                “(صح) ذہبی کی اصطلاح ہے کہ اس راوی کی توثیق ہی راجح ہے ۔ ”   (البدر المنیر لابن الملقن: ۶۰۸/۱، لسان المیزان لابن حجر : ۱۵۹/۲، ترجمہ حارث بن محمد بن ابی اسامہ)
                اس بارے میں حافظ ذہبی لکھتے ہیں:الرجل غیر مدفوع عن صدق و علم والاحتجاج بہ مترجح.
                “اس راوی کا صدق و علم ثابت ہے ، اس کی حدیچ سے حجت پکڑنا ہی راجح ہے ”    (سیر أعلام النبلاء: ۳۷۸/۴)
                حافظ ہیثمی اس راوی کے بارے میں کہتے ہیں:  “وحدیثہ حسن.”        “اس کی حدیث حسن ہوتی ہے” (مجمع الزوائد :۱۰۸/۱۰)
                نیز کہتے ہیں:               والصحیح أنھما ثقتان ولا یقدح الکلام فیھما.
                “صحیح بات یہ ہے کہ (عبدالحمید بن بہرام اور شہر بن حوشب) دونوں ثقہ ہیں، ان میں جرحی کلام قابلِ قدح نہیں۔”               (مجمع الزوائد : ۲۲۲/۱)
عمل نمبر ۴
                صحابی رسول مسلم بن حارث التیمی رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے اور رسول اللہ ﷺ نے ان سے سرگوشی کرتے ہوئے فرمایا کہ جب آپ نمازِ مغرب سے فارغ ہوں تو سات مرتبہ یہ دعا پڑھیں:
                                اَللّٰھُمَّ اَجِرْنِیْ مِنَ النَّارِ.
                                “اے اللہ! مجھے جہنم سے پناہ دے “
                اگر آپ نے یہ دعا پڑھ لی اور اسی رات فوت ہوگئے تو جہنم سے پناہ لکھ دی جائے گی ، جب آپ نمازِ فجر پڑھ لیں تو یہی دعا پڑھ لیں، اگر اس دن فوت ہوگئے تو جہنم سے پناہ لکھ لی جائے گی ۔ ”       (سنن ابی داؤد: ۵۰۷۹ وسندہ حسن)
                اس حدیث کو امام ابن حبان (۲۳۴۶ ۔ الموارد) نے “صحیح” کہا ہے ۔
                حافظ ابن حجر نے اس کو “حسن” کہا ہے ۔       (نتائج الافکار: ۳۲۶/۲)
                اس کے راوی حارث بن مسلم کو امام دارقطنی نے “مجہول” کہا ہے  ، جبکہ امام ابن حبان اور حافظ ہیثمی اس کو “ثقہ” کہتے ہیں۔ (مجمع الزوائد : ۹۹/۸)
                اس پر جرح مفسر نہیں ہے ، اس کے صحابی ہونے میں اختلاف ہے ، لہٰذا یہ “حسن الحدیث” ہے ، حافظ ابن حجر ایک اصول بیان کرتے ہیں:
                وأما حالھا فقد ذکرت فی الصحابۃ، وان لم یکن یثبت لھا صحبۃ، فمثلھا لا یسأل عن حالھا.
                “جہاں تک (رباح کی دادی) کی عدالت کا تعلق ہے تو اس کو صحابہ میں ذکر کیا گیا ہے ، اگرچہ اس کاصحابیہ ہونا ثابت نہ بھی ہوگا، تب بھی اس کیسی روایہ کی عدالت کے بارے میں سوال نہیں کیا جائے گا ۔ ”            (التلخیص الحبیر : ۷۴/۱)
                اس اصول کے مطابق حارث بن مسلم کی عدالت ثابت ہوتی ہے  ،لہٰذا یہ “حسن الحدیث” ہے ۔
٭٭٭٭٭

نئے مضامین بذریعہ ای میل حاصل کیجیے

تمام مضامین

About Tohed.com

Tohed.com is an Urdu Islamic Website, aiming to preach true Islamic Information based on Qur'an and Sunnah. Here you can find out hundreds of urdu articles by reputed scholars. It's a completely non-commercial project with an objective to propagate Information about Islam in native language for the sub-continent readers.